ریڈ وارنٹ الطاف حسین کی سیاست ختم نہیں کر سکتا

استعفے کی وجوہات بیان کیں تو پارٹی کو نقصان ہوگا، چوہدری نثار

 کیا بھارت محمود اچکزئی کو خرید چکا ہے؟

حیدرآباد سے ایک اور لڑکی داعش میں شامل

بحرین کے بارے میں امریکی وزیر خارجہ کی باتیں کس حد تک سنجیدہ ہیں؟

راحیل شریف پاکستان میں 3 سالہ حکومت قائم کرکے احتساب کریں گے: پاکستانی میڈیا

نواز شریف اور اہل خانہ کا نیب کے سامنے پیشی سے انکار توہین عدالت ہے: علامہ ناصر عباس جعفری

ایران اور عراق کے مشترکہ مفادات کے خلاف موقف اختیار نہیں کریں گے: مقتدی صدر

وزیرآباد میں آج ہونے والا نواز شریف کا جلسہ کیوں منسوخ کر دیا گیا؟

چودھری نثار، پرویز رشید کی لفظی جنگ نے لیگی قیادت کو پریشان کر دیا

تفتان بارڈر پر زائرین کیساتھ بدترین سلوک انسانیت کی تذلیل اور ناقابل برداشت ہے

عراقی وزیر اعظم نے تلعفر کو آزاد کرانے کا حکم صادر کردیا

امریکا میں نسل پرستی کے خلاف ہزاروں افراد کی ریلی، پولیس سے جھڑپیں

شریف خاندان آج بھی نیب میں پیش نہ ہوا

پاکستان امریکہ کا کوئی ڈومور مطالبہ قبول نہیں کرے گا

سعودی حکومت یمن جنگ میں اپنا سب کچھ داؤ پر لگانے کے باوجود شکست سے دوچار ہے

سعودی عرب نفسیاتی محاصرے سے باہر نکلنے کے لئے اب عراق کا سہارا لے رہا ہے

شریف برادران کی فطرت میں ہے کہ وہ سیدھی بات کرنے والےکو پسند نہیں کرتے

مسجد اقصیٰ آج بھی جل رہی ہے!

شام،لبنان تعلقات لازوال ہیں، شام پر صہیونی جارحیت کے امکان کو رد نہیں کیا جاسکتا: شامی سفیر

دہشتگردی کا کسی بھی نسل یا مذہب سے کوئی تعلق نہیں: ایران

امریکہ اور اس کے اتحادی ممالک نے دہشت گردوں کو کیمیائی ہتھیار فراہم کئے

نوازشریف نے آئین و قانون کے خلاف علم بغاوت بلند کردیا ہے: شیخ رشید

عمران خان کے خلاف توہین عدالت کی باضابطہ کارروائی شروع کرنے کا فیصلہ

دبئی کے حکام کی ابوظہبی سے آزادی کے لئے منصوبہ بندی شروع

سپین میں دولت اسلامیہ کی دہشت گردی

مقبوضہ کشمیر کوفلسطین بنانے کی سازش

بدلتے پاکستان کی مزاحمت

قطری حاجیوں کی سلامتی کے معاملے پر تشویش ہے: شیخ محمد بن عبدالرحمان ثانی

میڈرڈ سے مانچسٹر تا بارسلونا: دہشت گردانہ واقعات کا سلسلہ

سعودی عرب کی قطر پر مہربانی کا آغاز کیوں ہوا؟

ن لیگ کے حوالے سے مولانا فضل الرحمان کا فیصلہ

خاص خبر: ڈان لیکس پر فارغ پرویز رشید کے سنسنی خیز انکشاف

سعودی بادشاہ کے خرچ پرقطری شہریوں کے حج کی مخالفت

ہارٹ اٹیک سے 1 ماہ قبل سامنے آنے والی علامات

زائرین کی توہین ناقابل برداشت عمل ہے حکومت و ریاستی ادارے پاکستانی زائرین کے مسائل حل کریں: شیعہ علماء کونسل پاکستان

اعلیٰ عدلیہ کے فیصلے پر نواز شریف کا واویلا چور مچائے شور کے مصداق ہے: علامہ ناصرعباس جعفری

شایک اور نیو لبرل نواز شریف کا طبلچی – عامر حسینی

شکریہ پاکستانی حکمرانوں : ہر پاکستانی تقریباً 95,000 روپے کا مقروض ہے، وزارتِ خزانہ

پاکستان نے پاک ایران سرحد پر گیٹ تو تعمیرکر دیا لیکن زائرین کی مدد کے حوالے سے کچھ نہ ہو سکا

مجھے کیوں نکالا گیا؟

شفقنا خصوصی: امریکہ تحریک کشمیر کو دبانے کے لیے کس طرح بھارت کی مدد کر رہا ہے؟

یمن جنگ طویل ہونے کی اصل وجہ، منصور ہادی ہیں

میرا ساتھ دو میں انقلاب لاؤں‌گا

قطر اور سعودی عرب کے درمیان گذشتہ 6 برس سے جاری جنگ کہاں لڑی جا رہی ہے؟

زرداری نواز مڈھ بھیڑ اور بیچاری جمہوریت

بارسلونا میں دہشت گردی، داعش نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی

نوجوان داعش سے منسلک تنظیموں سے بہت زیادہ محتاط رہیں، سربراہ پاک فوج

حزب المجاہدین کو دہشت گرد تنظیم قراردینے پرپاکستان کی مایوسی

مسئلہ کشمیر اور مودی کی سیاست

چوہدری نثار کے پارٹی کے قائم مقام صدر کے انتخاب کے طریقہ کار پر شدید تحفظات

نواز شریف اور ان کے خاندان کو آئندہ سیاست میں نہیں دیکھ رہا: آصف زرداری

ترکی اور ایران کی عراقی کردستان میں ریفرنڈم کی مخالفت

آل شریف کا اقتدار اور پاکستان کی سلامتی کولاحق خطرا ت

 خفیہ ڈیل: کیا ن لیگ آصف زرداری کو صدر بنا رہی ہے؟

ظہران، سعودی عرب میں موجود مذہبی تضادات کا منہ بولتا ثبوت

جماعت الدعوہ کا سیاسی چہرہ

ٹرمپ نے امریکا میں نسل پرستی کی آگ پر تیل چھڑک دیا

چین اور بھارتی افواج میں جھڑپ، سرحد پر شدید کشیدگی

ماڈل ٹاؤن کیس میں شریف برادران کو ہر صورت پھانسی ہو گی: طاہرالقادری

کیا سعودیہ یمن جنگ سے فرار کا رستہ ڈھونڈ رہا ہے؟

نوازشریف کاسفر لاہور

پاکستان میں جاری دہشتگردی کا تعلق نظریے سے نہیں بلکہ پیسوں سے ہے۔ وزیراعلی بلوچستان

سعودی شہزادوں کا غیاب: محمد بن سلمان کامخالفین کو پیغام

یوم آزادی پہ تاریخ کے سیاہ اوراق کیوں پلٹے جارہے ہیں ؟

سعودی عرب کا جنگ یمن میں ناکامی کا اعتراف

سعودی عرب اور عراق کا 27 سال بعد سرحد کھولنے کا فیصلہ

ایران کی ایٹمی معاہدہ ختم کرنے کی دھمکی

وہ غذائیں جن کے کھانے سے کمزور بالوں اور گنج پن سے نجات ملتی ہے

گالی سے نہ گولی سے، مسئلہ کشمیر گلے لگانے سے حل ہو گا: نریندر مودی کا اعتراف

سری لنکن کرکٹ بورڈ نے دورہ پاکستان کی منظوری دیدی

2017-02-08 18:51:46

ریڈ وارنٹ الطاف حسین کی سیاست ختم نہیں کر سکتا

sلگتا ہے موجودہ حکومت کو متحدہ قومی موومنٹ کے بانی رہنما الطاف حسین کی سیاست ہمیشہ کےلئے دفن کرنے پریقین ہے۔ اسی لئے اب وزارت داخلہ نے متحدہ کے رہنما کی گرفتاری کےلئے ریڈ وارنٹ جاری کرنے کی اجازت دی ہے۔ اس وارنٹ کے تحت انٹرپول کے ذریعے اسکاٹ لینڈ یارڈ پولیس سے الطاف حسین کو گرفتار کرکے پاکستان کے حوالے کرنے کا مطالبہ کیا جائے گا۔ 2013 میں مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے اقتدار سنبھالنے کے بعد رینجرز کے ذریعے کراچی کے حالات کو بہتر بنانے اور ایم کیو ایم کی سیاسی قوت کو تحلیل کرنے کی متعدد کوششیں کی ہیں۔ الطاف حسین اور ان کے ساتھی اگرچہ 2008 سے 2013 کے درمیان مرکز اور سندھ میں پیپلز پارٹی کے ساتھ تعاون کرتے رہے تھے اور دونوں پارٹیوں نے مل کر حکومت کی تھی۔ لیکن پیپلز پارٹی مرکز میں اقتدار سے محروم ہونے کے بعد سندھ میں بھی ایم کیو ایم کے ساتھ معاملات طے نہیں کر سکی۔ اس کی ایک وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ پیپلز پارٹی سندھ میں سیاسی طور سے مستحکم ہونا چاہتی ہے۔ ایم کیو ایم کو حکومت میں شامل کرنے سے اختیار کے علاوہ وسائل بھی تقسیم کرنا پڑتے ہیں۔ اس طرح الطاف حسین سندھ کے شہری علاقوں میں مسلسل مقبول اور مستحکم ہو رہے تھے۔ تاہم الطاف حسین اور ایم کیو ایم کے خلاف اقدامات صرف برسر اقتدار سیاسی پارٹیوں کی خواہش نہیں ہے بلکہ ملک کی اسٹیبلشمنٹ بھی الطاف حسین کی حرکتوں ، بے سروپا باتوں اور تقریروں سے عاجر آ کر ان کی سیاسی قوت کو توڑنا چاہتی تھی۔

گزشتہ اگست میں الطاف حسین نے ایک ٹیلی فونک خطاب میں پاکستان کے خلاف نعرے لگوائے اور اپنے حامیوں کو ایک میڈیا ہاؤس پر حملہ کرنے کی ترغیب دی۔ یہ دونوں واقعات کراچی میں الطاف حسین کی سیاست اور تنظیمی قوت کےلئے تابوت میں آخری کیل ثابت ہوئے۔ اگرچہ الطاف حسین نے حسب سابق معافی مانگ کر معاملہ رفع دفع کرنے کی کوشش کی تھی لیکن اس بار برسر اقتدار طبقات صلح کرنے کے موڈ میں نہیں تھے۔ اس کے نتیجے میں الطاف حسین کو پاکستان میں اپنے تنظیمی ڈھانچہ سے علیحدہ کر دیا گیا اور ڈاکٹر فاروق ستار کی سربراہی میں ایم کیو ایم پاکستان وجود میں آئی۔ اس گروپ نے الطاف حسین سے مکمل لاتعلقی کا اعلان کیا اور ان کے سیاسی نعروں کو ناقابل قبول قرار دیا تھا۔ الیکشن کمیشن میں متحدہ قومی موومنٹ چونکہ فاروق ستار کے نام سے رجسٹرڈ ہے، اس لئے قومی اور صوبائی اسمبلی کے بیشتر منتخب ارکان نے ان کا ساتھ دینے کا اعلان کیا ہے اور فاروق ستار مہاجر ووٹرکے نمائندوں کےلئے سیاسی اسپیس کا مطالبہ کرتے رہتے ہیں۔

اس دوران بغاوت پر آمادہ کئے گئے پاکستانی لیڈروں کو سبق سکھانے کےلئے ایم کیو ایم لندن کے نام سے نئی تنظیم کھڑی کرنے اور سیاسی طور سے منظم ہونے کی کوشش کی گئی۔ تاہم یہ گروہ جو لندن سے الطاف حسین کی نگرانی اور ہدایت میں پاکستان میں سیاست کرنے کی کوشش کر رہا ہے، کوئی نمایاں حیثیت حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوا۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے 2014 اور 2015 کے دوران رینجرز کو ملنے والے خصوصی اختیارات کے ذریعے کراچی میں ایم کیو ایم کے عسکری ونگ اور غنڈہ عناصر کا قلع قمع کر دیا گیا تھا۔ سیاسی کسر اگست 2016 کے بعد پوری کر دی گئی جب پارٹی کے تمام مقامی دفاتر اور ہیڈ کوارٹر نائن زیرو کو سیل کر دیا گیا۔ اور زور زبردستی الطاف حسین کی حمایت میں سڑکیں بلاک کروانے اور ایک کال پر شہر بند کروانے کی صلاحیت کو سختی سے کچل دیا گیا۔ اب حکومت الطاف حسین کے خلاف قانونی کارروائی کرکے پاکستانی سیاست کے اس اہم باب کو ختم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

وزارت داخلہ کا یہ فیصلہ قانونی اور سیاسی لحاظ سے مضحکہ خیز ہی کہا جا سکتا ہے کیونکہ اس طرح ملک میں قانون کے نفاذ کی ذمہ دار وزارت خود یہ اعتراف کر رہی ہے کہ اصل مسئلہ قانون شکنی کا نہیں ہے بلکہ سیاسی ضرورتوں کا ہے۔ وگرنہ ملک کے تھانوں میں الطاف حسین کے خلاف سنگین جرائم کے الزام میں مقدمات تو 1992 میں الطاف حسین کے ملک سے فرار ہونے سے بہت پہلے سے قائم ہیں۔ بلکہ الطاف حسین ہی کیا ملک کے ہر چھوٹے بڑے سیاسی لیڈر کے خلاف سنگین جرائم میں مقدمات درج کئے جاتے ہیں لیکن وہ اس وقت تک سیاسی طور پر متحرک اور قانونی لحاظ سے محفوظ رہتے ہیں جب تک برسر اقتدار قوتیں ان کی مقبولیت سے خائف ہوتی ہیں یا ان کی سیاسی ضرورت محسوس کرتی ہیں۔ اس کی ایک مثال پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اور پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ طاہر القادری ہیں۔ ان دونوں کے خلاف 2014 کے دھرنے کے دوران پی ٹی وی اور پارلیمنٹ پر حملہ کرنے اور پولیس افسروں کو زد و کوب کرنے کے مقدمے ملک کے انسداد دہشت گردی قوانین کے تحت درج ہیں۔ لیکن کسی عدالت کا کوئی سمن پولیس اور متعلقہ اداروں کو ان دونوں رہنماؤں کو گرفتار کرنے کا ’’اختیار‘‘ نہیں دیتا۔ قانون نافذ کرنے والے اداروں کے نمائندے مقدمہ کی پیشی پر متعلقہ جج کے سامنے بتاتے ہیں کہ ملزم دستیاب نہیں ہے۔ جج بھی اپنی بات کی لاج رکھنے کےلئے استغاثہ کے نمائندوں کو سخت سست کہہ کر نیا حکم نامہ جاری کر دیتا ہے۔ حالانکہ اسے بھی علم ہوتا ہے کہ اس حکم پر اس وقت تک عمل نہیں ہوگا جب تک سیاسی ضرورتیں تبدیل نہیں ہوں گی۔

ایسی تبدیلی رونما ہو جائے تو ذوالفقار علی بھٹو جیسے مقبول لیڈر اور وزیراعظم کے خلاف درج ایک ’’بے ضرر‘‘ ایف آئی آر بھی گلے کا پھندا بن جاتی ہے۔ اس لئے وزارت داخلہ کے الطاف حسین کے خلاف ریڈ وارنٹ کو قانونی کارروائی سے زیادہ سیاسی اقدام سمجھنے کی ضرورت ہے۔ ملک کی حکومت اور نظام جب قانون کی عملداری کو یقینی بنانے اور سب کے ساتھ مساوی سلوک کرنے کا فیصلہ کرے گا تو اس کا آغاز کرنے کے لئے سمندر پار 25 برس سے مقیم کسی لیڈر کی گرفتاری سے پہلے ان عناصر کی گرفت کرنے کی کوشش کی جائے گی جو ملک میں ہی دندناتے پھرتے ہیں۔اور اس کے قانون اور نظام کا مذاق اڑانے کا سبب بھی بنتے ہیں۔ لیکن کوئی عدالت یا قانون نافذ کرنے والا ادارہ ان کی طرف آنکھ اٹھا کر دیکھنے کا حوصلہ نہیں کرتا۔ ایسی ہی ایک مثال سابق فوجی حکمران جنرل (ر) پرویز مشرف کی بھی ہے۔ وہ شدید بیماری اور معذوری کا بہانہ کرکے بظاہر چند دنوں کےلئے ملک سے باہر گئے تھے لیکن وزیر داخلہ سمیت ملک کا ہر فرد یہ جانتا تھا کہ وہ قانون کی گرفت سے نجات حاصل کرنے کےلئے جلا وطنی کی زندگی گزارنے  روانہ ہو رہے ہیں۔ تاآنکہ ملک کے حالات از سر نو ان کے موافق نہ ہو جائیں اور وہ واپس آ کر قانون کی حکمرانی اور سرزمین سے محبت کے ترانے نہ الاپنے لگیں۔

حکومت اگر الطاف حسین کو ان کے جرائم کی سزا دلوانا چاہتی تھی تو ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس میں اس کے پاس اس بات کا سنہرا موقع تھا۔ اگر حکومت پاکستان وہ شواہد اور افراد برطانیہ کے حوالے کر دیتی جو اس قتل میں ملوث ہیں اور بنیادی کردار کی حیثیت رکھتے ہیں تو یہ ممکن تھا کہ برطانیہ میں الطاف حسین یا ان کے قریب ترین ساتھیوں کو قتل جیسے سنگین جرم میں سزا دلوائی جا سکتی۔ اس طرح ایم کیو ایم یا الطاف حسین یہ دعویٰ کرنے سے بھی قاصر رہتے کہ پاکستان کی عدالتوں نے ناموافق فیصلہ کرکے انہیں سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا ہے۔ تاہم حکومت اس مقدمہ کے اہم کرداروں کو اپنے کسی ’’سیف ہاؤس‘‘ میں محفوظ رکھنے پر بضد رہی۔ جب انہیں سامنے لانے کا فیصلہ کیا گیا تو انہیں اچانک افغانستان کے بارڈر سے گرفتار کروا کے، پاکستان میں ہی ان کے خلاف ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل کے مقدمہ کا آغاز کر دیا گیا۔ حالانکہ لندن میں ہونے والے جرم پر جب برطانوی پولیس مقدمہ قائم کرنے کےلئے بے چین تھی اور اسے بعض اہم گواہوں کی ضرورت تھی تو انہیں برطانوی پولیس کے حوالے کرنے سے گریز کا مقصد الطاف حسین کو کسی ناخوشگوار صورتحال سے محفوظ رکھنے کے سوا کیا ہو سکتا ہے۔

ایم کیو ایم کو گروہوں میں بانٹنے اور پاک سرزمین پارٹی کھڑی کرنے کے باوجود ملک کے حکمران یہ محسوس کر رہے ہیں کہ الطاف حسین کو سیاسی طور پر تنہا کئے بغیر اور انہیں کسی نہ کسی الزام میں پاکستانی جیل میں بند کئے بغیر شاید کراچی کی ’’حکمرانی‘‘ واپس لینا دشوار ہو۔ الطاف حسین کی گرفتاری کےلئے موجودہ ریڈ وارنٹ کو اسی خواہش اور کوشش کے طور پر دیکھا جائے گا لیکن کوئی بھی سیاسی لیڈر جو عوام میں بدستور مقبول ہو اور لوگ اس کی بات پر اعتبار کرنے پر تیار ہوں، اس وقت تک بے توقیر نہیں ہو سکتا جب تک انتخابات میں عوام ووٹ کی طاقت سے اسے مسترد نہ کر دیں۔ پاکستان کی حکومت کو اگر یقین ہے کہ کراچی کے عوام کے سامنے الطاف حسین کا اصل چہرہ بے نقاب ہو چکا ہے۔ شہر میں امن بحال کرکے اور ایم کیو ایم کے زہریلے دانت نکال کر شہریوں کو محفوظ کر دیا گیا ہے۔ یعنی قتل و غارتگری کا سلسلہ بند ہو چکا ہے اور ایک پارٹی سے تعلق رکھنے والے لوگ بھتہ خوری کے ذریعے کراچی کے باشندوں کا جینا حرام کرنے کے قابل نہیں ہیں تو انہیں اس بات کا بھی یقین ہونا چاہئے کہ 2018 کے انتخابات میں کراچی اور حیدر آباد کے شہری یا مہاجر ووٹر الطاف حسین کے مقرر کردہ نمائندوں کو ووٹ دینے کی بجائے ان لوگوں کو ووٹ دیں گے جو الطاف حسین کو مسترد کرتے ہیں اور قتل سے لے کر ہر جرم کا ذمہ دار اس ایک شخص کو قرار دیتے ہیں۔

اگر حکومت اور اس کے اشارے پر نمودار ہونے والے ایم کیو ایم کی مختلف صورتوں کو یہ یقین نہیں ہے کہ وہ کسی بھی انتخاب میں الطاف حسین کو شکست دینے کے قابل  ہیں تو الطاف حسین کو کٹہرے میں کھڑا کرکے یا جیل کی کوٹھری میں ڈال کر بھی یہ کامیابی حاصل کرنا ممکن نہیں ہے۔ سیاست میں جب ایک مقبول لیڈر کے سحر کو توڑنے کےلئے سرکاری قوت و اختیار استعمال کیا جاتا ہے تو اس کی قوت میں اضافہ ہوتا ہے۔ عوام اس لیڈر کے خلاف عائد کئے گئے الزامات پر یقین نہیں کرتے۔ اس طرح ایسے لیڈروں کے خلاف اختیار کئے گئے ہتھکنڈے ناکام ہو جاتے ہیں۔ الطاف حسین کے خلاف ریڈ وارنٹ جاری کرنے کا اثر بھی اس سے مختلف ہو گا جو نتیجہ حاصل کرنے کےلئے یہ اقدام کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

الطاف حسین کی سیاسی قوت ختم کرنے کےلئے ملک کے مہاجر ووٹر کو یقین دلانا ہوگا کہ کوئی دوسرا لیڈر بھی ان کے مفادات کا تحفظ کر سکتا ہے۔ جب تک کوئی سیاسی پارٹی یا لیڈر یہ اعتماد حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوگا، الطاف حسین بہرصورت زندہ رہے گا۔ بھلے اس کی کتنی ہی کردار کشی کرنے کی کوشش کی جائے۔

 
تحریر: سید مجاہد علی
 
زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)