اسرائیل سے مقابلہ عرب حکومتوں کی ترجیحات میں کیوں نہیں ہے؟

تصاویر + ویڈیو: مانچسٹر دھماکے کے خلاف شیعہ کمیونٹی کا احتجاج

سعودی عرب اور قطر میں لفظی جنگ میں شدت، قطر پر اخوان المسلمین کی حمایت کا الزام

رمضان المبارک کے روزوں کو عمداً ترک کرنے کی سزا کیا ہے؟

سعودی عرب، امریکا کیلئے دودھ دینے والی گائے ہے جسے بعد میں ذبح کردیا جائے گا: آیت اللہ خامنہ ای

فلپائن: پرتشدد واقعات میں 100 افراد ہلاک

پاناما لیکس: حسین نواز جے آئی ٹی کے سامنے پیش ، بیان ریکارڈ کرا دیا

داعش کو بچانے کیلیے امریکی فوج کا طالبان پر حملہ

یہ ہے بجٹ ، عام آدمی کے لئے سبز باغ ،سرمایہ دار باغ و بہار

کھجور کھانے کے 7 طبی فوائد

تکفیریوں کے خلاف اہم فتوی: ریاست کےخلاف مسلح جدو جہد، خودکش حملے حرام قرار

مقبوضہ کشمیر میں حزب المجاہدین کا اہم کمانڈر شہید: بھارت کا جشن

روزے کی نیت اور مبطلات روزہ کے احکام

روزے کے حوالے سے آیت اللہ صافی گلپائگانی سے پوچھے گئے چند سوالات

روزہ کی اہمیت اور فضیلت کے بارے میں چند احادیث

روزہ اور تربیت انسانی میں اس کا کردار

عذر گناہ بد تر از گناہ

ماہ رمضان کا بہترن عمل !

ایران کے خلاف ٹرمپ کا دعویٰ بے بنیاد اور مضحکہ خیز ہے

برطانیہ کی گلیوں میں اس وقت 3 ہزار کے قریب خطرناک انتہا پسند موجود ہیں

صدر ممنون حسین کی تنخواہ 10 لاکھ روپے سے بڑھا کر 6 لاکھ روپے کر دی گئی

بجٹ 2017: صحت حکومت کی ترجیح کیوں نہیں

بھارت کی پاکستان  پر حملہ کرنے کی تیاریاں: وجہ دہشت گردی یا سی پیک؟

یمن پر کیمیکل حملہ کرنے کی امریکی عربی سازش بے نقاب

قطر کا شہزادہ: دنیا میں ایران کا کردار قابل انکار نہیں

بجٹ میں عوام پر پھر مہنگائی کا بم گرا دیا گیا: پاکستانی شہریوں کی رائے

استقبال ماہ رمضان کی دعا

دعائے رویت ہلال

وفاقی بجٹ مالی سال 18-2017 : تنخواہوں ،پنشن میں اضافہ ؟تفصیل جانئے

امریکی اور سعودی فوجی اتحاد ایک مخصوص فرقہ کے خلاف ہے: علامہ عبدالحسین

بجٹ 2017 اہم جھلکیاں: شفقنا خصوصی

مصر میں عیسائیوں کی بس پر فائرنگ سے 35 افراد ہلاک

چین نے سی پیک پر اقوام متحدہ کی رپورٹ مسترد کر دی

‘‘مہاجر‘‘سیاست ایک نئے موڑ پر

حکومت کے اوچھے ہتھکنڈے: کیا جے آئی ٹی نے نواز شریف کے خلاف ناقابل تردید ثبوت حاصل کر لیے ہیں؟

اس سال کا سب سے لمبا روزہ کہاں ہوگا؟

شامی فورسز نے اٹھائیس شہروں اور دیہاتوں کو دہشتگردوں سے آزاد کرا لیا

سی پیک کی سیکیورٹی کے لیے چین کا طالبان سے رابطہ

مانچسٹر بمبار سلمان عبیدی نے کس کا بدلہ لینے کے لیے خود کش حملہ کیا؟

شاہ سلمان نے ٹرمپ کی تعریف کرکے حرمین الشریفین ،عالم اسلام اور امت مسلمہ کی توہین کا ارتکاب کیا

بحرین میں آل خلیفہ کے جاری ظالمانہ اقدامات

ایران کی حمایت پر سعودی عرب اور امارات نے قطر کی ویب سائٹس اور ٹی وی چینل پر پابندی عائد کردی

ایران سے امریکی و سعودی مخاصمت کسی اصولی موقف کی بنیاد پر نہیں بلکہ ایران کے خالص اسلامی نظریات کے باعث ہے: علامہ احمد اقبال رضوی

وزیر داخلہ آزادی رائے کےخلاف مہم جوئی سے باز رہیں

کلبھوشن پھانسی: بھارت پاکستان پر حملہ کرنے کے لیے مکمل تیار

شفقنا خصوصی: سعودیہ ایران مخاصمت اور پاکستان کا کمزور کردار

سعودیہ، یمن میں اتحادی حکومت تشکیل دینا چاہتا ہے

بھارت اسرائیل سے اسلحہ خریدنے والا بڑا مشتری، 60 کروڑ 30 لاکھ ڈالر کی خریداری

ایران نے میزائل تجربات روکنے کا امریکی مطالبہ مسترد کردیا

جے آئی ٹی کو جس طرح کام کرنا چاہئے ویسے نہیں کر رہی: ترجمان وزیر اعظم

برطانیہ میں دہشت گردی کے خلاف ’آپریشن ٹیمپرر‘ کا آغاز، اہم مقامات پر فوج تعینات

شریف برادران بظاہر بھولے لگتے ہیں لیکن وہ فاشسٹ ہیں: عمران خان

سعودی عرب میں امریکی صدر کا استقبال مسلمانوں کی تاریخ کا ایک سیاہ باب ہے،علاؤالدین بروجردی

سعودیہ کا اصل چہرہ:اسلامی کانفرنس میں فلسطین' کشمیر، شام اور یمن کے مظالم کا تذکرہ کیوں نہیں؟

کیا نواز حکومت فوج کو خوش کرنے کی کوشش کررہی ہے؟

قرضاوی: سعودیہ کے اجلاسوں میں اسلامی ممالک کی شرکت، اسلامی اقدار کی توہین ہے

نواز شریف کو سعودی عرب میں مکمل طور پر نظرانداز کیا گیا

بحرین کے بزرگ عالم دین آیت اللہ شیخ عیسی قاسم کے گھر پرسیکورٹی فورس کا حملہ، متعدد بحرینی شہید اور زخمی

داعش نے برطانوی شہر مانچسٹر میں خودکش حملے کی ذمہ داری قبول کرنی

آزادی رائے کے خلاف حکومتی مہم

مسلمانوں لیڈروں کا امریکی تال پر رقص

امریکہ سعودیہ کے ذریعے مسلمانوں میں انتشار پھیلارہا ہے؛ سنی اتحاد کونسل

مانچسٹر بم دھماکے میں ہلاکتوں کی تعداد 22 ہوگئی ، 60 زخمی

پاکستان کی مانچسٹر دھماکے کی شدید مذمت

دیوانے کا خواب: کیا ٹرمپ ایران کوتنہا کر سکتا ہے؟

 سعودی اسلامک کانفرنس:  کیا پاکستان اس تذلیل سے سبق سیکھے گا؟

کشمیری کو جیپ سے باندھنے والے بھارتی فوجی کیلئے ایوارڈ

اسامہ سی آئی اے کا فعال ایجنٹ اور ابھی تک زندہ ہے؛ امریکی خفیہ ایجنسی کے اہلکار کا انکشاف

مانچسٹر میں دھماکہ: 19 افراد ہلاک 50 زخمی

سعودی عرب کے وائسرائے نواز شریف نے پاکستان کو مڈل ایسٹ کی دلدل میں پھنسا ہی دیا

سعودی عرب افغانستان میں داعش کو مالی امداد فراہم کررہا ہے

2017-02-13 23:33:46

اسرائیل سے مقابلہ عرب حکومتوں کی ترجیحات میں کیوں نہیں ہے؟

52345690100098490332no1948 میں یعنی جب سے اسرائیل نے فلسطین کی سر زمین پر اپنے وجود کا اعلان کیا اور اقوام متحدہ کا ایک رکن بن گیا تب سے عرب ممالک نے پوری ہماہنگی کے ساتھ صیہونی حکومت کے خلاف جنگ کا اعلان کر دیا ہے۔ 1948، 1956 اور 1973 کی جنگوں میں مصر، شام، عراق، اردن، لبنان، سعودی عرب، لیبیا، کویت، سوڈان، ٹیونس، مراکش اور الجزائر نے ایک ساتھ ملک کر صیہونی حکومت کے خلاف جنگ کی۔ اس سے دوسرے عرب ممالک اور قوموں میں رونما ہونے والی تبدیلیوں سے عرب رہنما کتنے حساس تھے لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ہی شام کے علاوہ یہ تمام ممالک بسویں صدی کے آخر تک اسرائیل مخالف ملکوں کی فہرست سے نکل گئے۔ اس کا ایک سبب اسرائیل کے ہاتھوں عربوں کی شکست اور اسرائیل کی سرحدی سرزمینوں کا ان کے ہاتھ سے نکل جانا ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ پشت پردہ جاری سیاسی تبدیلوں کی وجہ سے یہ عرب ممالک مزاحمت کے محاذ سے نکل گئے ہیں۔  

نئی نئی تشکیل پانے والی صیہونی حکومت کے اصل اتحادی کے طور پر مغرب نے جب یہ دیکھا عرب اتحاد اور اس کی جانب سے تل ابیب سے مقابلے کے لئے پیٹرول اور فوجی وسائل کا استعمال کیا گیا تو اس نے عرب رہنماؤں کو لالچ دے کر اس دشمنی کو ختم کرانے کا فیصلہ کیا۔ اسرائیل اور عربوں کی آخری جنگ کے پانچ سال بعد مغرب کی پہلی کوشش کا نتیجہ برآمد ہوا اور مصر کے موجودہ صدر انور سادات اور اسرائیل کے اس وقت کے وزیر اعظم مناخیم بگین کے درمیان 1987 میں کیمپ ڈیوڈ معاہدے پر دستخط ہوئے۔   

عالم اسلام میں مصر کے اہم مقام و منزلت کی وجہ سے مشرق وسطی کی تبدیلیوں میں اس معاہدے کی بہت اہمیت تھی۔ جمال عبد الناصر کے زمانے میں عربوں اور اسرائیل کے درمیان ہونے والی جنگ اور عرب قومیت پر مبنی ان کے متعدد نعروں کی وجہ سے مصر دنیائے عرب میں بہت زیادہ محبوب ہو گیا تھا اور اس کی جانب سے صیہونی حکومت کی جانب دوستی کا ہاتھ بڑھائے جانے کا مطلب یہ تھا کہ مصر، اسرائیل سے اپنی دشمنی کے خاتمے کا اعلان کر رہا ہے۔

اس واقعے کے بعد اسرائیل مخالف دنیائے عرب کا محاذ درہم برہم ہو گیا اور مصر کی پالیسیوں کے حامیوں اور مخالفین کے درمیان شدید شگاف پیدا ہوگئے تھے۔ در ایں اثنا کیمپ ڈیوڈ معاہدے نے ایک ایسے دور کا آغاز کیا جس کی بنیاد پر صیہونی حکومت پورے اطمئنان سے اپنی تسلط پسندانہ پالیسی کو جاری رکھنے میں کامیاب رہی۔

اسرائیل کو باضابطہ قبول کرنے کی جزاء مصر کو امریکا کی جانب سے سالانہ دو ارب ڈالر کی فوجی امداد دی جانے لگی۔ اس جزاء کی وجہ سے بعض عرب ممالک بھی امریکی ڈالر کے حصول کے لئے صیہونی حکومت کے ساتھ اپنے تعلقات پر نظر ثانی کرنے لگے۔

در ایں اثنا مشرق وسطی میں اپنے اثر و رسوخ میں اضافے اورامریکی حمایت حاصل کرنے کے لئے عرب ممالک میں رقابت شروع  ہوگئی اور اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ عرب ممالک کے امریکا کے نزدیکی تعلقات قائم ہوگئے اور اسرائیل مخالف پالیسی کا رنگ پھیکا پڑتا گیا۔ حالات یہاں تک پہنچ گئے کہ آج نہ صرف یہ کہ صیہونی کالونیوں کی  توسیع کی کسی کو فکر ہے بلکہ خلیج فارس کے عرب ممالک میں صیہونی حکومت کے سفارتخانے کے کھلنے کی سگبگاہٹ سنائی دے رہی ہے۔  

اسی تناظر میں ایران کے ساتھ کی مقابلے بازی نے ریاض کو تل ابیب سے قریب کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔ سعودی عرب نے عراق میں شیعوں کے بر سر اقتدار آنے کو علاقے میں ایران کے اثر و رسوخ میں اضافے کے طور پر دیکھا۔ اس علاوہ 2010 سے عالم اسلام خاص طور پر علاقے کو بحرانی صورتحال کا سامنا ہے۔ علاقے میں ایسے حالات پیدا ہوگئے کہ ایران مشرق وسطی کےاہم بحران یعنی شام کے بحران میں اہم کردار ادا کرنے والا ملک بن گیا۔ یہی حال یمن میں ہوا، یمن پر سعودی عرب کے مسلسل حملوں کے باوجود یہ ملک ابھی تک یمن میں اپنا ایک بھی ہدف حاصل کرنے میں ناکام رہا۔

 

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

خارجہ پالیسی کا مسئلہ

- ایکسپریس نیوز

عوام کی عدالت

- ایکسپریس نیوز

بات بگڑتی جارہی ہے

- ایکسپریس نیوز

طاقتور کی دنیا

- ایکسپریس نیوز

پانامہ کیس، سچ کی تلاش

- ایکسپریس نیوز

رمضان المبارک کا تقدس

- ایکسپریس نیوز

سحر بھی لیکن قریب تر ہے

- ایکسپریس نیوز

سماج کا ارتقا

- ایکسپریس نیوز

عنوان کے بغیر

- اسلام ٹائمز