روہنگیا کی حالت زار اور مسلمانوں کی بے حسی

عسکری تنظیمیں ۔۔۔بدامنی کا محرک

سوچی کی حقائق پر پردہ پوشی: افسوسناک یا مجرمانہ فعل؟

قدس کو منظم کرنے کا بہانہ یا یہودی بنانے کا منصوبہ؟

غنڈوں کی زبان بولتا صدر

سعودی فوج مرکز پر یمنی سرکاری فوج کا میزائل حملہ، متعدد سعودی اہلکار ہلاک

امام کعبہ نے امریکی صدر ٹرمپ کو ’’امن کی فاختہ‘‘ قرار دے دیا!

افضل احسن رندھاوا اور غیر پنجابیوں کا آشوب – محمد عامر حسینی

کیا بلوچستان میں شورش دم توڑ رہی ہے؟

دھمکیاں جوہری معاہدے سے پیچھے نہیں ہٹا سکتیں: حسن روحانی

عالمی میڈیا پاکستان کی درست صورتحال نہیں دکھا رہا: وزیراعظم

میکسکو سٹی میں ہولناک زلزلہ؛ 226 افراد ہلاک + تصاویر

اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کے وارنٹ گرفتاری معطل کردیے

تاریخی ماتمی جلوسوں پر پابندی ہماری مذہبی آزادی کا گلا گھونٹنے کے مترادف ہے: مولانا محمد عباس انصاری

ٹرمپ کے بیانات شرمناک اور جاہلانہ ہیں: محمد جواد ظریف

حسن روحانی اور شاہد خاقان عباسی کی ملاقات: ایران اور پاکستان کی تعلقات کے فروغ پر تاکید

امریکی بموں کی ماں کے مقابلے میں ایرانیوں نے بموں کا باپ تیار کرلیا

قطر کے سفیر: سعودیہ مشرق وسطیٰ میں دہشتگردی کا اصلی حامی ہے

برماکے مسلمان اور مسلم ریاستوں کی خاموشی……..اصل وجہ کیا ہے؟

امارات اور سعودیہ کے اسرائیل سے تعلقات اب ہونگے سرِعام

قطر کے سفیر: سعودیہ مشرق وسطیٰ میں دہشتگردی کا اصلی حامی ہے

ایران اور دنیا کے 41 ملکوں میں عالمی یوم علی اصغر (ع) منایاجائےگا

پاکستان روہنگیا مسلمانوں کی امداد کی ہرکوشش کی حمایت کرے گا: وزیراعظم

امام جعفر صادق (ع) کے کلام میں سُستی کاہلی، اور بے حوصلہ ہونے سے پرہیز کی تلقین

سعودی عرب اسرائیل سے قربت اوراسلامی ممالک سے دوری کی پالیسی پر گامزن

ہیومن رائٹس واچ کا میانمار پر اقتصادی پابندیاں عائد کرنے کا مطالبہ

قطر پہنچنے والے پاکستانیوں کو 30 دن کا مفت ویزہ دیا جائے گا: قطرسفارتخانے کا اعلامیہ

ماہ محرم کے لیے سیکیورٹی انتظامات کو حتمی شکل دے دی گئی ہے: احسن اقبال

وزیراعظم اپنے گھر کی صفائی ضرور کریں مگر پاکستان کا تماشا نہ بنائیں: چوہدری نثار

عزاداری کو محدود کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی

ایرانی قوم دھمکیوں سے ڈرنے والی نہیں

داعش کی دلہن کو سزائے موت کا سامنا

گیپکو اسکینڈل: سابق وزیراعظم راجہ پرویز اشرف پر فرد جرم عائد

نیب ریفرنسز؛ شریف خاندان کی عدم پیشی پر دوبارہ نوٹس جاری

نوری المالکی: عراق کے شمال میں 'دوسرا اسرائیل' بننے نہیں دینگے

امارات کی جانب سے ترکی میں سفارت خانہ بند کرنے کی دھمکی

ٹرمپ نے جوہری معاہدہ ختم کیا تو امریکا کو بھاری قیمت چکانی پڑے گی، ایرانی صدر

کلثوم نواز کی جیت: کیا عوام نے نواز شریف کے حق میں فیصلہ دیا ہے؟

عراق کی نئی تقسیم اور مشرق وسطی پر اس کے اثرات

بھارت نے روہنگیا پناہ گزینوں کو پاکستانی ایجنسی اور داعش کا ایجنٹ قرار دے دیا

پیپلزپارٹی کی پرویز مشرف کو سزائے موت دینے کی استدعا

تصاویر: لندن میں اسلامی مراکز کے علماء کا اجتماع

سوئٹزرلینڈ اپنی سرزمین پر پاکستان مخالف سرگرمیاں روکے: پاکستان

پشاور، فلور ملز میں داعش کا ہیڈکوارٹر، خطرناک انکشاف

اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر نے سعودیہ کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا

انتہا پسند سیاسی دھارے میں: پاکستان کی نئی پالیسی کس حد تک کامیاب رہے گی؟

یمن میں فضائی حملے میں خواتین و بچوں سمیت 12 افراد شہید

این اے 120 کا انتخابی دنگل مسلم لیگ (ن) نے جیت لیا

لوگوں میں سب سے زیادہ خوشبخت شخص کون ہے؟

جوہری معاہدے پر کسی غلط اقدام پر ایران کا دوٹوک جواب ہوگا: سپریم لیڈر

میاں صاحب کو نہ پہلے اور نہ اب حکومت کرنی آئی: آصف زرداری

این اے 120 میں پولنگ کا وقت ختم، ووٹوں کی گنتی شروع

فلسطینی اسکولوں میں اسرائیلی نصاب پڑھانا حرام ہے

امت مسلمہ پیغمبر اکرم (ص) کے اقتدا کےذریعے بہترین امت بن سکتی ہے

عوامی رضا کار فورسز نہ ہوتی تو آج عراقی کردستان پر تکفیریوں کا قبضہ ہوتا

امریکی رہنماؤٕں کو سعودی عرب ملنے سے والےانتہائی مہنگے تحائف

اسرائیل میں جاری اقتدار کی جنگ

نائجیریا کا مبلغ اسلام بابا مسابا

گرفتاریوں کی تازہ لہر: کیا سعودی عرب بادشاہت خطرے میں‌ہے؟

سعودی جارحیت کے نتیجہ میں13ہزار یمنی شہری جاں بحق اور21ہزار زخمی ہو چکے

ایران، عراق میں علیحدگی کے کسی بھی اقدام کا مخالف ہے: ولایتی

محرم الحرام کے دوران ماتمی جلوسوں کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کی جائے: سی ٹی او راولپنڈی

ابو ظہبی اور ریاض یمنی میزائلوں کے نشانے پر ہیں: الحوثی

نوازشریف خود نااہل ہو گئے مگر پیچھے نااہلوں کی فوج چھوڑ گئے، بلاول بھٹو زرداری

دنیا کی کوئی طاقت پاک ترکی تعلقات میں رخنہ نہیں ڈال سکتی، ترک وزیراعظم

یورپی یونین امریکا کو ٹھوس اور واضح پیغام دے: صدر حسن روحانی

امریکا کا پاکستان پر سخت پابندیاں عائد کرنے پر غور: برطانوی اخبار

ترکی، روس اور ایران کا شام میں ’’سیف زون‘‘ پر اتفاق

وزراء کا کام بیان دینا نہیں، بیماری کا علاج کرنا ہے: چودھری نثار

شریف خاندان کو جیلوں میں ڈال کرآئی ایم ایف کا قرضہ چکایا جائے: شیخ رشید

قرآنی آیت (لِيُظْهِرَهُ عَلَى الدِّينِ كُلِّهِ) سے کیا مراد ہے؟

2017-03-11 14:05:24

روہنگیا کی حالت زار اور مسلمانوں کی بے حسی

jاقوام متحدہ کی طرف سے میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی اور ان پر انسانیت سوز مظالم کے بارے میں ایک بار پھر تفصیلات سامنے آئی ہیں۔ یہ معلومات اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی ایک اعلیٰ عہدیدار ینگ ہی لی نے نشریاتی ادارے بی بی سی کے ساتھ ایک انٹرویو میں فراہم کی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ میانمار کی سول حکومت نے انہیں راکھین صوبے میں جانے اور روہنگیا باشندوں سے ملنے کی اجازت نہیں دی۔ تاہم انہوں نے فوج کے مظالم سے بھاگ کر بنگلہ دیش پہنچنے والے روہنگیا خاندانوں سے ملاقاتوں میں جو کہانیاں سنی ہیں اور انہوں نے جو واقعات بیان کئے ہیں، وہ انسانیت سوز ہیں اور انسانیت کے خلاف جرائم کی نوعیت رکھتے ہیں۔ اب ینگ ہی لی اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن سے اس معاملہ کی تحقیقات کرانے کےلئے درخواست کرنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔ انہوں نے بتایا ہے کہ روہنگیا کی فراہم کردہ معلومات کو جھوٹ کہہ کر مسترد کرنا ممکن نہیں ہے کیونکہ ان واقعات و حقائق کی تصدیق سیٹلائٹ کے ذریعے راکھین کے تباہ شدہ دیہات کی تصویریں سے بھی ہوتی ہے۔ 2015 میں برسر اقتدار آنے والی نوبل امن انعام یافتہ انسانی حقوق کی علمبردار آنگ سوچی نے اس بارے میں سوالوں کے جواب دینے کےلئے بی بی سی کے نمائندے سے ملنے سے انکار کر دیا۔

روہنگیا مسلمانوں کی ابتر اور غیر انسانی صورتحال کے بارے میں عرصہ دراز سے تکلیف دہ معلومات فراہم ہو رہی ہیں۔ اقوام متحدہ کے علاوہ انسانی حقوق کےلئے کام کرنے والے کئی اداروں اور تنظیموں نے اس بارے میں عالمی رائے عامہ ہموار کرنے کی کوشش کی ہے لیکن ابھی تک یہ کاوشیں بار آور ثابت نہیں ہوئیں۔ اس حوالے سے دنیا کے اہم دارالحکومتوں میں سیمینار منعقد ہوتے ہیں، سیاسی لیڈروں سے ملاقاتیں کی جاتی ہیں، وعدے کئے جاتے ہیں لیکن ان تمام سرگرمیوں کا کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوتا۔ میانمار چھوٹا اور بے وسیلہ ملک ہونے کے باوجود اپنے ہی ملک کے ایک چھوٹے سے اقلیتی گروہ کو نیست و نابود کرنے اور ان سے مکمل طور سے گلو خلاصی کےلئے حکمت عملی پر عمل کر رہا ہے اور دنیا کا کوئی قانون یا روایت یا انسانی حقوق کے علمبردار ممالک اس پالیسی کو رکوانے میں کامیاب نہیں ہو سکے۔ میانمار کی پالیسی نسل پرستانہ اور مسلمہ عالمی اصولوں سے متصادم ہے۔ اس کے باوجود اس ملک کی حکومت اس کا دفاع کرنے اور روہنگیا مسلمانوں کا مسئلہ خوش اسلوبی سے حل کرنے کےلئے کوئی لچک دکھانے پر آمادہ نہیں ہوتی۔

میانمار یا برما کی سابقہ فوجی حکومتوں نے روہنگیا کو اپنے ملک کا شہری تسلیم کرنے سے انکار کرتے ہوئے یہ واضح کر دیا تھا کہ انہیں برما میں رہنے کا حق حاصل نہیں ہے۔ اس اعلان کے بعد روہنگیا کو پاسپورٹ دینے یا سفری سہولتیں فراہم کرنے سے بھی انکار کیا جاتا ہے اور انہیں مخصوص علاقوں یا کیمپوں میں رہنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔ ملک بھر میں ایک چھوٹے اقلیتی گروپ کے خلاف نفرت اور عناد پیدا کر دیا گیا ہے۔ اس کے نتیجہ میں اکثریتی عقیدہ کے حامل بدھ باشندوں نے روہنگیا مسلمانوں پر حملے کرنے اور ان کے گھر گرانے اور کاروبار تباہ کرنے کا سلسلہ شروع کیا تھا۔ ان کھلم کھلا انسانی حملوں کے خلاف احتجاج کے باوجود ملک کے عوام کے جمہوری حق کےلئے پندرہ برس تک نظر بندی کی صعوبت برداشت کرنے والی آنگ سوچی نے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف دیگر شہریوں کے تعصبات اور مظالم کو مستر کرنے کا حوصلہ نہیں کیا۔ انہیں اندیشہ رہا ہے کہ ملک کی اکثریتی آبادی کے دل میں اس چھوٹے سے گروہ کے خلاف اس قدر نفرت بھر دی گئی ہے کہ ان کی حمایت میں بولنے کی صورت میں وہ اپنی سیاسی حمایت سے محروم ہو سکتی ہیں۔ اس طرز عمل سے یہ اندازہ کرنا مشکل نہیں ہے کہ انسانیت اور جمہوریت کےلئے بلند بانگ دعوے کرنے والے رہنما بھی دراصل سیاسی مقبولیت کو ہی منزل مقصود سمجھتے ہیں۔ حتیٰ کہ سوچی کو 2015 میں اقتدار حاصل ہو گیا لیکن وہ برسر اقتدار آنے کے باوجود نہ صرف یہ کہ اس انسانی مسئلہ کو حل کرنے کےلئے کوئی اقدام کرنے کا حوصلہ نہیں کر سکیں بلکہ روہنگیا کے خلاف فوج کے مظالم کو یک طرفہ پروپیگنڈا قرار دے کر مسترد کرتی رہی ہیں۔ وہ روہنگیا کے خلاف نفرت کو نسلی تعصب کی بجائے ثقافتی تصادم کا نام دیتی ہیں اور فوج کی اس پالیسی پر عمل پیرا ہیں کہ روہنگیا کو برما یا میانمار میں رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔

روہنگیا مسلمان ڈیڑھ دو سو سال پہلے مزدوری کے لئے بنگلہ دیش سے برما آئے تھے۔ وہ راکھین صوبے میں ساحلی علاقوں میں آباد ہیں اور محنت مزدوری یا کاشتکاری و ماہی گیری کے ذریعے اپنا پیٹ پالتے ہیں۔ لیکن سرکاری اور عوامی جبر کی وجہ سے انہیں مسلسل اپنے گھروں اور رہائشی علاقوں سے محروم ہونا پڑتا ہے۔ اس کے علاوہ سرکاری اداروں کے دباؤ کی وجہ سے انہیں ناقص کشتیوں میں ملک سے ہجرت کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔ لیکن روہنگیا کی بدنصیبی یہ ہے کہ بنگلہ دیش کے علاوہ اس ریجن کے دیگر ممالک تھائی لینڈ ، انڈونیشیا یا ملائشیا بھی انہیں قبول کرنے کےلئے تیار نہیں۔ سمندری راستوں سے ہجرت کے دوران سینکڑوں روہنگیا ہلاک ہو چکے ہیں۔ جو کسمپرسی کے عالم میں کسی ساحل پر پہنچنے میں کامیاب ہوتے ہیں تو انہیں سرحدی محافظ وہاں سے بھگا دینے میں دیر نہیں لگاتے۔ اس حالت میں بنگلہ دیش اور تھائی لینڈ کے ساحلوں پر انسانوں کی اسمگلنگ کرنے والے منظم جرائم پیشہ گروہ کثیر معاوضہ لے کر ان مہاجرین کو ملک کے پناہ گزین کیمپوں تک پہنچاتے ہیں۔

گزشتہ ایک برس سے برما کی فوج نے روہنگیا علاقوں میں دہشت گردوں کا صفایا کرنے کے نام پر کارروائی کی ہے۔ اس دوران روہنگیا باشندوں کو بے دریغ قتل کیا گیا، ان کے دیہات جلا دیئے گئے، فصلوں اور کاروبار کو تاراج کر دیا گیا اور عورتوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔ ان مظالم کے باوجود عالمی اداروں کے دباؤ پر میانمار حکومت نے گزشتہ برس ایک نام نہاد تحقیقاتی کمیشن قائم کیا تھا۔ اس کمیشن نے اپنی رپورٹ میں میانمار کی فوج کو بری الذمہ قرار دیا تھا اور روہنگیا کے خلاف مظالم کو فرضی داستانیں بتایا تھا۔ ان دعوؤں کے باوجود میانمار کے حکام غیر ملکی میڈیا، امدادی کارکنوں یا اقوام متحدہ کے نمائندوں کو راکھین جانے اور حالات کا خود مشاہدہ کرنے کی اجازت نہیں دیتے۔ روہنگیا کےلئے آنے والی امداد کو بھی سرکاری ذرائع سے تقسیم کرنے کا وعدہ کیا جاتا ہے۔ اس طرح ان وسائل کو بھی خورد برد کر لیا جاتا ہے۔

میانمار حکومت اور فوج کے جھوٹے دعوؤں کی قلعی اس جبر سے بھاگ کر بنگلہ دیش پہنچنے والی پناہ گزین کھولتے ہیں۔ وہاں پر قائم روہنگیا کے کیمپوں میں مقیم ہر شخص کے پاس ایک درد ناک کہانی ہے۔ ان مظالم کی تصدیق ان سیٹلائٹ تصاویر سے ہوتی ہے جن میں روہنگیا کے علاقوں میں وسیع و عریض تباہ کاری دیکھی جا سکتی ہے۔ میانمار کی سول حکومت جو طویل جدوجہد کے بعد اقتدار میں آئی ہے، اس صورتحال کو قابل غور نہیں سمجھتی۔ آنگ سوچی تو اس معاملہ پر بات کرنے سے ہی گریز کرتی ہیں۔ البتہ ان کی جماعت کے ایک ترجمان نے اقوام متحدہ کی طرف سے روہنگیا کے خلاف مظالم کی اطلاعات کو پروپیگنڈا قرار دیتے ہوئے مسترد کیا۔ تاہم صحافی کے سوالوں کے جواب میں انہیں اعتراف کرنا پڑا ہے کہ سول حکومت ملک کی فوج کے خلاف کوئی بات کرنے کی طاقت نہیں رکھتی۔ ایسے میں یہ سوال تو ضرور پیدا ہوتا ہے کہ پھر ایسی حکومت جمہوریت پسند اور عوام کی نمائندہ ہونے کا دعویٰ کیسے کر سکتی ہے۔ اگر کوئی جمہوری حکومت ملک کے گروہوں کے درمیان امتیاز اور تعصب کو فروغ دیتی ہے تو وہ جمہوریت کی روح کے متصادم طرز عمل اختیار کرتی ہے۔ آنگ سوچی نے میانمار کےلئے طویل جدوجہد کی ہے۔ اسی لئے انہیں نوبل امن انعام دیا گیا تھا۔ لیکن روہنگیا کے خلاف جنگ کی موجودہ صورتحال میں وہ کسی صورت اس اعزاز کی مستحق نہیں رہیں۔

روہنگیا مسلمانوں کی کل تعداد 10 سے 15 لاکھ کے درمیان ہے۔ حیرت ہے کہ دنیا کے 50 سے زائد مسلمانوں ملک نہ تو ان مظلوم باشندوں کے خلاف تشدد اور مظالم بند کروانے کےلئے ینگون حکومت پر دباؤ ڈالتے ہیں اور نہ ہی انہوں نے مل کر کوئی ایسا فنڈ قائم کیا ہے جو ان دربدر مسلمانوں کی مدد اور آباد کاری کے کام آ سکے۔ اس وقت سعودی عرب کے شاہ سلمان بن عبدالعزیز ایشیائی ملکوں کے ایک ماہ کے دورہ پر ہیں۔ خبروں کے مطابق وہ 600 سے زائد افراد کے بھاری بھر کم وفد کے ساتھ سفر کر رہے ہیں اور ان کی آسائش کےلئے پونے پانچ سو ٹن ساز و سامان ایک ملک سے دوسرے ملک منتقل کیا جاتا ہے۔ ایک طرف مسلمان حکمران اتنی عیاشی کا سامان فراہم کر سکتے ہیں تو دوسری طرف وہ مل کر بھی روہنگیا مسلمانوں کےلئے کوئی قابل عمل منصوبہ بنانے میں ناکام ہیں۔ اقوام متحدہ گزشتہ برس بھی میانمار حکومت پر روہنگیا کے خلاف مظالم کے سوال پر سخت تنقید کر چکی ہے۔ تاہم اب اس تنقید کو عملی اقدامات کی شکل اختیار کرنی چاہئے۔ اس حوالے سے مسلمان ملکوں کو کردار ادا کرنے اور میانمار پر دباؤ ڈالنے کےلئے کوششیں کرنا ہوں گی۔

 

 

زمرہ جات:   Horizontal 3 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)