What should we do? – by Aamir Hussaini

اس قتل کی ایف آئی آر میں کسے نامزد کیا جائے!

شریفوں کی کرپشن پاکستان تک محدود نہیں بین البراعظمی ہے، آصف زرداری

بشار الاسد کا تختہ الٹنے کی کسی بھی اسکیم کو مسترد کرتے ہیں: روس

جمہوریت کو کوئی خطرہ نہیں، ڈی جی آئی ایس پی آر

نفاذ شریعت کی ایک نئی تحریک

شام میں ترک کارروائی ’دہشت گردی کی معاونت‘ کے مترداف ہے، شامی صدر

یمن جنگ میں شریک ممالک کے لیے جرمن اسلحے کی فراہمی معطل

کابل ہوٹل حملے میں ہلاکتیں 43 ہوگئیں، 14 غیر ملکی شامل

بالی وڈ اسٹار خانز نے صہیونی وزیر اعظم سے ملنے سے انکار کردیا

چیف جسٹس دوسروں کے بجائے اپنے ادارے کو ٹھیک کریں: خورشید شاہ

اہل سنت کے علمائے دین ہماری آنکھوں کا سہرا ہیں

سعودی عرب کی ’توہین‘: کویتی بلاگر کو پانچ سال سزائے قید

دنیا، کس قسم کے افراد کو تباہ وبرباد کردیتی ہے؟

ٹرمپ کے خلاف لاکھوں امریکی خواتین کا تاریخی احتجاج

نقیب اللہ قتل؛ راؤ انوار کو پولیس پارٹی سمیت گرفتار کرنے کا فیصلہ

فتویٰ اور پارلیمینٹ

کل بھوشن کے بعد اب محمد شبیر

سعودیہ فوج میں زبردستی بھرتی پر مجبور ہوگیا ہے؛ یمنی نیوز

پاکستان کی غیر واضح خارجہ پالیسی سے معاملات الجھے رہیں گے

پارلیمنٹ پر لعنت

نائیجیریا میں آیت اللہ زکزکی کی حمایت میں مظاہرہ

ایٹمی معاہدے میں کوئی خامی نہیں، امریکی جوہری سائنسداں کا اعتراف

سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان مکار، دھوکہ باز، حیلہ گر اور فریبکار ہیں: قطری شیخ

امریکا نے دہشت گردی کے بجائے چین اور روس کو خطرہ قرار دے دیا

سلامتی کونسل میں پاکستان اور امریکی مندوبین کے درمیان لفظی جنگ

ایک اورماورائے عدالت قتل

کالعدم سپاہ صحابہ کا سیاسی ونگ پاکستان راہ حق پارٹی بھی اھل سیاسی جماعتوں میں شامل

امریکہ اور دہشتگردی کا دوبارہ احیاء

ایرانی جوان پوری طرح اپنے سیاسی نظام کے حامی ہیں؛ ایشیا ٹائمز

دنیائے اسلام، فلسطین اور یمن کے بارے میں اپنی شجاعت کا مظاہرہ کرے

شام کے لیے نئی سازش کا منصوبہ تیار

پاک فوج کیخلاف لڑنا حرام ہے اگر فوج نہ ہوتی تو ملک تقسیم ہوچکا ہوتا: صوفی محمد

امام زمانہ عج کی حکومت میں مذہبی اقلیتوں کی صورت حال

سعودی عرب نائن الیون کے واقعے کا تاوان ادا کرے، لواحقین کا مطالبہ

امریکہ کو دوسرے ممالک کے بارے میں بات کرنے سے باز رہنا چاہیے: چین

پاکستان میں حقانی نیٹ ورک موجود نہیں

سعودی عرب نے یمن میں انسانی، اسلامی اور اخلاقی قوانین کا سر قلم کردیا

پاکستان کو ہم سے دشمن کی طرح برتاؤ نہیں کرنا چاہیے: اسرائیلی وزیراعظم

آرمی چیف نے 10 دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی

بھارت: ’حج سبسڈی کا خاتمہ، سات سو کروڑ لڑکیوں کی تعلیم کے لیے

صہیونی وزیر اعظم کے دورہ ہندوستان کی وجوہات کچھ اور

پاکستانی سرزمین پر امریکی ڈرون حملہ، عوام حکومتی ایکشن کے منتظر

روس، پاکستان کی دفاعی حمایت کے لئے تیار ہے؛ روسی وزیر خارجہ

عام انتخابات اپنے وقت پر ہونگے: وزیراعظم

ناصرشیرازی اور صاحبزادہ حامد رضا کی چوہدری پرویزالہیٰ سے ملاقات، ملکی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال

پارلیمنٹ نمائندہ ادارہ ہے اسے گالی نہیں دی جاسکتی: آصف زرداری

زائرین کے لیے خوشخبری: پاک ایران مسافر ٹرین سروس بحال کرنے کا فیصلہ

شریف خاندان نے اپنے ملازموں کے ذریعے منی لانڈرنگ کرائی، عمران خان

امریکہ کی افغانستان میں موجودگی ایران، روس اور چین کو کنٹرول کرنے کے لئے ہے

ایرانی پارلیمنٹ اسپیکر کی تہران اسلام آباد سیکورٹی تعاون بڑھانے پر تاکید

دورہ بھارت سے نیتن یاہو کے مقاصد اور ماحصل

ایوان صدر میں منعقد پیغام امن کانفرنس میں داعش سے منسلک افراد کی شرکت

امریکہ، مضبوط افغانستان نہیں چاہتا

عربوں نے اسرائیل کے خلاف جنگ میں اپنی شکست خود رقم کی

سیاسی لیڈر کا قتل

مقاصد الگ لیکن نفرت مشترکہ ہے

انتہا پسندی فتوؤں اور بیانات سے ختم نہیں ہوگی!

تہران میں او آئی سی کانفرنس، فلسطین ایجنڈہ سرفہرست

زینب کے قاتل کی گرفتاری کے حوالے سے شہباز شریف کی بے بسی

یورپ کی جانب سے جامع ایٹمی معاہدے کی حمایت کا اعادہ

بن گورین ڈاکٹرین میں ہندوستان کی اہمیت

دہشت گردی کے خلاف متفقہ فتویٰ

شام میں امریکی منصوبہ؛ کُرد، موجودہ حکومت کی جگہ لینگے

شفقنا خصوصی: کیا زینب کے قاتل کی گرفتاری کو سیاسی مقاصد کے لیے چھپایا جا رہا ہے؟

مسئلہ فلسطین، عالم اسلام کا اہم ترین مسئلہ ہے

پاپ کی طرف سے میانمار کے مسلمانوں کی عالمی سطح پر حمایت

امریکا مشترکہ مفادات کی بنیاد پر پاکستان سے نئے تعلقات بنانا چاہتا ہے، ایلیس ویلز

کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا بینظیر بھٹو کو قتل کرنے کا دعویٰ

امریکہ، بیت المقدس کے بارے میں اپنے ناپاک منصوبوں ميں کامیاب نہیں ہوگا

پاکستان کے ساتھ تعلقات مزید مستحکم کرنےکےلیے پرعزم ہیں: امریکی جنرل جوزف ڈنفورڈ

2017-03-19 00:22:59

What should we do? – by Aamir Hussaini

17265089_10212653825288918_8951025932217569580_nPresident of Ahle Sunnat Waljamat Aurangzaib farooqi was released on 15 March,2017 on order of Anti Terrorist Court Rawalpindi from Adiyala Jail. He had requested ATC Ralwapindi to accept his post arrest plea bail on June 24,2015 in a case of delivering hate speech during a Friday sermon in a Wah Cantt. This request of post bail plea was accepted according to Judge of ATC Rawalpindi due to weak evidences against accused Aurangzaib farooqi.

Aurangzaib Farooqi is head of a banned sectarian organization #ASWJ cover name of #SSP which is also banned and terrorist organization declared by Pakistani Government. His name is included in Fourth Schedule List so he can not make speech in public. According to law a person in Fourth Schedule list can not go out of his city without permission of local administration and this is unlawful for such person to make speeches and lead processions and rallies.

But in case of Aurangzaib farooqi , Muhammad Ahmad Ludhiyanvi or other leadership of banned ASWJ (mostly names of its leadership from top to bottom are in Fourth Schedule list) we see no law implementing on them.

On March 15,2017 Aurangzaib farooqi released from Adiyala Jail Rawalpindi and on 17 March,2017 he came in Central Deobandi Mosque of Havelian of Abbottabad district of KPK where he delivered Friday sermon and offered Friday prayer. During his speech he again told the people present in mosque that he would contest for National Assembly from NA 18.

Head of a banned organization, a name included in fourth schedule is visiting many cities all over the country,making speeches,running pre-election campaign but we see that neither federal government nor any provincial government is serious in implementing law and any local administration is not ready to take action against Aurangzaib farooqi on violation of law and breaking ban on his organization.

What examples are being set by our state when we see that every violent, Takfiri, extremist, sectarian, hatemonger, banned religious cleric (Majority are from Takfiri Deobandi faction of Deobandi school of thought ) is free to spread hatred messages, instigating his followers to wage violence and terror against other sect and religions. He always gets clean chit or bail from court due to insufficient evidences. In most cases he freely led a rally or public meeting under banner of banned organization, get prominent coverage in mainstream media and law never comes in action against such hatred clerics. Aurangzaib faroqi is not only one example we see Mullah Abdulaziz, Muhammad Ahmad Ludhiyanvi, Mufi Naeem, Khadim Hussain Rizvi, Irfan Mashahdi, Qari Rubnawaz Hanafi , Masroor Jhangvi ( now he is Parliamentary leader of JUI-f ), Taj Hanafi and dozens of other hatemonger Mullah roaming free and delivering hate speeches in Public.

We can find such hate speeches on social media, in adieu and video format in markets, published literature is also easily available, working offices of banned organizations all over the country, even running seminaries and schools by these banned outfits but our interior ministries including federal and provincials, local administrations and persecution departments could not find solid evidences against them so they are roaming free.

National Action Plan which was devised for Takfiris and Jihadis now is using just to suppress Sindhi,Baloch,Pashtuns, Saraikis,Urdu speaking, Gilgiti-Balti, Kashmiri political and social activists. Even There is an un-written article included in NAP which is false balancing actions. If you arrest four Takfiri Deobandis then you pick up four Shia,Sunni Barelvi also to create a balance. Aurangzaib farooqi and other many Takfiri Deobandi clerics were released by our courts in cases of violating Amplifier act but hundreds of moderate deobandis,Ahlehadith, Sunni Barelvi and Shia clerics paid heavi fines and in some cases imprisonment in same cases registered against them. You can not hold cultural events, you can not commemorate Urs,Mourning cermonies of Ahle-i-bait and Sahaba ,you can not celebrate spring arrival but Takfiri Mullahs are allowed to do what they want, this is National action plan in Pakistan.

Peaceful young men and women are asking me what should be done in such conditions because neither administrations from top to bottom are ready to stop extremism, Takfirism, Jihadism , hatemongering culture from society and nor we are seeing courts able to block such practices so we have only one way that is non-violent, peaceful but strong efforts to build a great social movement against extremism in Pakistan.

We need to start building of such networks of human rights defenders in every twin and village which reject all types of hate mongering and spreading of violence and that exert powerful mass pressure on state to take real step to curb all such menace.

 

 

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

تو بھی تو دل دار نہیں ! 

- ایکسپریس نیوز

یوں ہی منو بھائی…

- ایکسپریس نیوز

دنیا 100 سیکنڈ میں

- سحر ٹی وی

ایک فتویٰ ادھر بھی

- مجلس وحدت المسلمین