تعلیم حکومت کی ذمہ داری یا مذہبی تنظیموں کی؟

ایران کو تنہا کیا جا رہا ہے، وزیراعظم پاکستان تماشائی بنے رہے: عمران خان

سعودی عرب امریکہ کا کھلونا ہے: پاکستانی اہلسنت برادری

آل سعود جیسی بدترین حکومت کے ساتھ ہتھیاروں کا معاہدہ 'انتہائی خوفناک' ہے: امریکی سینٹر

پی آئی اے کی لندن جانے والی پرواز سے21 کلو ہیروئن برآمد

 ایران کے خلاف الزامات کی بوچھار: امریکہ سعودی ریالوں کے سامنے بچھ گیا

عمران خان کے الزامات: کیا نواز شریف غدار ہیں؟

نواز شریف کا استقبال: سعودیہ کی نواز شریف کی عزت افزائی یا بے عزتی؟

افغان سر زمین پاکستان کے خلاف استعمال ہو رہی ہے، اہم ثبوت حاصل کر لیے گئے

سعودی ڈالر کا کمال:‌ٹرمپ کا ایران پر فرقہ وارانہ فسادات اور دہشت گردی کا الزام

سعودی عرب کو ہتھیار فروخت نہ کئے جائیں، ہیومن رائٹس واچ کا امریکہ سے مطالبہ

دہشت گردوں کے حامی ممالک کی دہشت گردوں کا فنڈ روکنے کی نام نہاد کوشش

راولپنڈی میں ایم کیوایم لندن کے خفیہ نیٹ ورک کا انکشاف

ایران کےانتخابات سے سعودی عرب کے ڈکٹیٹر بادشاہ پر خوف اور ہراس کیوں طاری؟

امریکی اسلامی کانفرنس : سعودی فرماں روا شاہ سلمان کے ایران پر بے بنیاد الزامات

چین نے امریکا کے 20 جاسوس ہلاک کیے: نیویارک ٹائمز

مقدمات سے بچانے کے لیے سعودی عرب نے انتہا پسند مذہبی اسکالر ذاکر نائیک کو شہریت دیدی

اسلامی سربراہی کانفرنس اور اسلامی نیٹو

ٹرمپ کا دورہ بحران میں اضافہ کر سکتا ہے

داعش کی اصل قوت

امریکہ مسلمانوں کا دشمن نہیں: امت مسلمہ کے نام نہاد داعی کا مسلمانوں‌کے زخموں پر نمک

سعودیہ میں‌محلاتی سازشیں: تخت و تاج کیلیے دو سعودی شہزادوں میں کھینچا تانی

آسٹریا بھی مسلم کش پالیسیز کے رستے پر: قرآن کی تقسیم اور برقعے پر پابندی

العوامیہ، سعودی عرب کا غزہ

عالمی عدالت بھی کلبھوشن کی سزا ختم نہیں کرسکتی، مشیر خارجہ

امریکہ اور سعودی عرب نے 4 کھرب اور 60 ارب ڈالر کے معاہدے پر دستخط کردیئے

کلبھوشن کو پاکستانی قانون کے مطابق انجام تک پہنچائیں گے: چوہدری نثار

ٹرمپ کی بیو ی اور بیٹی کیلئے سکارف پہننا ضروری نہیں: سعودی وزیر خارجہ

مسلم رہنماؤں کو اسلام پر لکچر دینے کے لیے ٹرمپ سعودی عرب پہنچ گئے

ایران کے صدارتی انتخاب: ڈاکٹر حسن روحانی ایک بار پھر کامیاب

لرزہ خیز انکشافات: دہشت گرد گروہوں کی پاکستانی خواتین کی ذہن سازی

 جمہوری نظام والے، کافر ہیں: وہابی مفتی کا نیا شوشہ

عالمی عدالت انصاف  کے بعد سلامتی کونسل سے رجوع:  کیا پاکستان کو کلبھوشن کو رہا کرنا پڑے گا؟

حزب اللہ رہنما پر امریکا، سعودی عرب کی مشترکہ پابندی

ٹرمپ: سعودیہ، دودھ دینے والی گائے ہے، جب اس کا دودھ ختم ہوجائے اس کا گلہ کاٹ دینگے

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی مقبولیت کم ترین سطح پر آگئی

کلبھوشن کیس پر عالمی عدالت جانے کا فیصلہ غلط ہے، یہ ہمارا داخلی معاملہ ہے: مشرف

ستم پزیری گناہ کبیرہ ہے

کلبھوشن کیس کی تیاری نامکمل تھی، وقت نہ ملا، حکومت کا اعتراف

مسٹر ٹرمپ! تاریخ لیڈروں کے عبرتناک انجام سے بھری پڑی ہے

وکی لیکس کے بانی جولین اسانج کیخلاف ریپ کی تحقیقات ختم

بحرینی علماء کا آیت اللہ شیخ عیسی قاسم کی مکمل حمایت کا اعلان

انتہا پسندی کا خاتمہ اور فوج کا کردار

اگر بھارت پاکستان کا ایجنٹ پکڑتا تو وہ عالمی عدالت کی پرواہ بھی نہیں کرتا: عمران خان

ایف آئی اے نے سوشل میڈیا پر پاک فوج پر تنقید کرنے والوں کا سراغ لگالیا

کلبھوشن اپنے انجام کو پہنچے گا، قومی سلامتی پر کوئی سمجھوتہ ممکن نہیں: خواجہ آصف

کلبھوشن کی سزا کا معاملہ: پاکستان عالمی عدالت کے فیصلے کا پابند نہیں

کلبھوشن کے معاملے پر عالمی عدالت کا فیصلہ پاکستان کیلئے بڑا دھچکا ہے: خورشید شاہ

شکیل آفریدی کی رہائی کےلیے امریکہ کا پاکستان پر بڑھتا دباؤ

سعودی کرشمہ سازی: اسلام مخالف ٹرمپ اسلام کا درس دے گا

کلبھوشن فیصلہ: عالمی عدالت انصاف اور امریکی دباؤ

نئی امریکی پابندیاں: ایران کا میزائل پروگرام جاری رکھنے کا اعلان

اسرائیل اور سعودیہ کے مشترکہ تعاون کا معاہدہ

علامہ سید مشتاق حسین ہمدانی کی ملّی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائیگا: علامہ ساجد نقوی

نیٹو داعش کے خلاف کارروائی میں شریک نہیں ہوگا: اسٹولٹنبرگ

ایران کے صدارتی انتخاب: صدر حسن روحانی بمقابلہ ابراہیم رئیسی

عالمی عدالت میں پاکستان کی ناکامی

پروفیسر کو کافر کیوں کہا جارہا ہے ؟

حتمی فیصلے تک کلبھوشن کو پھانسی نہ دی جائے: عالمی عدالت انصاف

آسٹریا میں عوامی مقامات پر نقاب لگانے پر پابندی عائد

ٹرمپ نے ایران پر پابندیاں نہ لگانے کے فیصلے کی توثیق کردی

مشعال خان کی روح بے چین رہے گی!

نوجوانوں کو داعش کے نظریات سے بچانا اولین ترجیح ہے: ترجمان پاک فوج

داعش کے راز فاش ہونے پر صہیونی حکومت کیوں چراغ پا ہورہی ہے؟

ڈان لیکس II: حکومت کی برہمی اور سی پیک پر حکومت جھوٹ کی قلعی

احسان اللہ احسان کی معافی کا معاملہ ،ریاست کہاں پر کھڑی ہے ؟

سعودی عرب فضائی حملہ، بچوں سمیت متعدد بے گناہ یمنی شہری ہلاک

اسلامی اتحادی افواج کا معاملہ نازک ہے، پاکستان کو اس اتحاد کا حصہ نہیں بننا چاہیے، پرویز مشرف

سعودی عرب کا امریکی صدر ٹرمپ کے ہاتھ اسلام کو فروخت کرنے کا بھیانک اور ناکام منصوبہ

پی پی رہنما فردوس عاشق اعوان کا تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان

کیا ٹرمپ جال میں پھنس رہے ہیں ؟

2017-03-20 06:39:37

تعلیم حکومت کی ذمہ داری یا مذہبی تنظیموں کی؟

taleem

 

 

برسوں سے ریاست کی مسلسل کئی کوتاہیوں میں سے ایک کوتاہی، جس کا براہ راست تعلق پاکستان کی موجودہ صورتحال سے بھی ہے، شعبہ تعلیم کو نظر انداز کرنا ہے۔

 

دارالحکومت اسلام آباد کی انتظامیہ کی حالیہ تحقیق، ان دیگر عناصر کو ظاہر کرتی ہے جو اس خلا کو پُر کر چکے ہیں۔ تحقیقی نتائج کے مطابق شہر میں تعلیمی اداروں کی تعداد 348 ہے— ان میں ہائر سیکنڈری اسکولوں کو شمار نہیں کیا گیا، جو کہ عام طور پر انٹر کالج تصور کیے جاتے ہیں— جبکہ اس تعداد سے زیادہ مدرسے موجود ہیں جن کی موجودہ تعداد 374 بنتی ہے۔ بات صرف یہاں پر ہی ختم نہیں ہو جاتی۔ نصف سے زائد مدرسے — 205 — رجسٹرڈ نہیں ہیں۔ یہ بات بذات خود ان اداروں کو قائم کرنے میں مذہبی تنظیموں کو حاصل غیر معمولی آزادی اور حکومت کی عدم نگرانی کی طرف اشارہ کرتی ہے۔

 

ساتھ ہی یہ معلوم بھی ہوا ہے کہ گزشتہ چار برسوں کے دوران وفاقی حکومت نے شہر میں ایک بھی اسکول قائم نہیں کیا ہے، جب کہ اس دوران مدرسوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا چلا گیا، اور آپ اس پوری تاریک تصویر یوں مختصر انداز میں دیکھ سکتے ہیں۔ شعبہ تعلیم میں فرائض میں حیران کن غفلت صرف مقامی سطح تک محدود نہیں بلکہ پورے پاکستان میں یہی صورتحال ہے۔

 

کافی عرصے سے کئی مذہبی رہنما، جن میں مولانا فضل الرحمن سب سے زیادہ پیش پیش ہیں، مدرسوں پر مذہب کی بنیاد پر شدت پسندی کا الزام لگانے کی شدید مخالفت کر رہے ہیں۔ یہ بلاشبہ ایک حقیقت ہے کہ تمام مدارس بنیادی طور پر شدت پسندی کو فروغ نہیں دیتے، یہاں پر تشدد، شدت پسندی کی بھی بات نہیں، مگر یہ بھی اتنی ہی بڑی ایک حقیقت ہے کہ مدارس اپنی مخصوص نکتہ نظر کے ساتھ ایک قدامت پسند تعلیم فراہم کرتے ہیں جو اکثر ناخوشگوار نظریاتی تقسیم کو تقویت بخشتی ہے۔

 

شعبہ تعلیم کے لیے انتہائی ناقص بجٹ کی فراہمی، آمدن میں بڑھتا ہوا عدم مساوات اور کس طرح تعلیمی اداروں تک غریب کی عدم رسائی کے اثرات، جو کہ مدرسوں کے زبردست مفاد کی صورت میں نکلتے ہیں، کو نہ سمجھنے کی یہ حکومتی بے حسی ہی ہے۔ کم آمدن والے گھرانوں کے پاس یا تو اپنے بچوں کو مفت، مگر غیر معیاری سرکاری اسکولوں میں بھیجنے کا آپشن ہوتا ہے یا پھر معیاری نجی اسکولوں بھیجنے کا آپشن — مگر ان میں سے مناسب ترین نجی اسکول بھی اس قدر زیادہ فیس لیتے ہیں جن کی ادائیگی بڑے گھرانے کی بھی استعداد سے باہر ہو جاتی ہے۔

 

جبکہ مدرسے ایک بہترین فارمولے کی پیش کش کرتے ہیں؛ جہاں مفت قیام و طعام، کے ساتھ ساتھ کم از کم اطمینان بخش معیار کی تعلیم فراہم کی جاتی ہے۔ صوبائی سطح پر ہونے والی مدرسوں کی جیو ٹیگنگ نے ایسے اداروں کی خطرناک حد تک بڑھتی تعداد کا انکشاف کیا ہے، جن میں سے زیادہ تعداد غیر رجسٹرڈ مدارس کی ہے۔

 

حکومت طویل عرصے سے آبادی کو تعلیم کی فراہمی کا اہم کام مذہبی تنظیموں پر چھوڑ چکی ہے۔ جس کا تباہ کن نتیجہ اب ہمارے سامنے بھی ہے، حکومت کو اب بنا زیادہ دیر کیے اقدامات کرنے ہوں گے۔

 

ڈان نیوز

 

 

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

یادوں کے جھروکے

- سحر ٹی وی

ٹیزر- نقطہ نگاہ

- سحر ٹی وی

عرب امریکہ اجلاس

- سحر ٹی وی

Ayena 22 May 2017

- وقت نیوز

WAQT Special 22 May 2017

- وقت نیوز

قند پارسی - 21 مئی

- سحر ٹی وی