یمن : سعودی ہیلی کاپٹر کا صومالی مہاجرین کی کشتی پہ حملہ ،40 ہلاک، متعدد زخمی ہوگئے – مستجاب حیدر

گستاخانہ مواد کیس؛ فیس بک سے 85 فیصد مواد ختم کر دیا گیا ہے، سیکرٹری داخلہ

دیواریں مسائل حل نہیں کرتیں

  سعودیہ کی دہشت گردوں کو فنڈنگ: برطانیہ کی آنکھیں کب کھلیں گی؟

امارات اور اسرائیل مشترکہ فوجی مشقیں: شرم تم کو مگر نہیں آتی

 وزیر داخلہ کی پہیلیاں : کون لوگ مذہب کے نام پر افراتفری پھیلانا چاہتے ہیں؟

 سعودی باندی: کیا عرب لیگ کا واحد مقصد ایران کی مخالفت ہے؟

جنوبی سوڈان کا مسلح سیاسی بحران، جنسی جرائم بلند ترین سطح پر

شام اور عراق میں شکست کے بعد داعش کا مستقبل کیا ہوگا؟

اسلام آباد مذہبی مدارس کا گھر: انتہا پسندی کے خلاف جنگ کیا محض لفاظی ہے ؟

کیا اسلامی ممالک سوشل میڈیا پر گستاخانہ مواد کی اشاعت کو روک سکتے ہیں؟

مردم شماری کے دوران تخریب کاری کی بڑی کوشش ناکام

  پاکستانی آئین کی دھجیاں: کیا حکومت لال مسجد سے خائف ہے؟

بلی تھیلے سے باہر: شام میں تکفیری دہشتگردوں اورصیہونی حکومت کے درمیان تعلقات کھل کر سامنے آگئے

پاکستان نے ہاں کر دی: اسلامی اتحادی افواج کی کمان راحیل شریف سنبھالیں گے

پورا سچ بتائیں یا قوم پر رحم کریں

ایران کے ایٹمی معاہدے پر دوبارہ مذاکرات ناممکن ہیں: یورپی یونین

پاک فوج کا نیا اور غیر واضح کردار

افغان طالبان کی پاکستان آمد، داعش کے خلاف حکمت عملی؟

نواز شریف کی جلاوطنی کی پس پردہ حقیقت فاش

شیعہ افراد کو غیر مسلم شمار کرنے پر افسران معطل

روس پر طالبان کو اسلحہ فراہمی کا الزام: امریکہ کی اپنی ناکامیوں کو چھپانے کی کوشش

شفقنا خصوصی: کیا پیپلز پارٹی غدار ہے؟

جماعت الدعوہ کی لاہور ریلی: دہشت گردی کے خلاف جنگ کا مذاق

ابراہیم شریف کے خلاف کاروائی بحرینی سرگرم کارکنوں کو خاموش کرانے حکومتی مہم کا حصہ ،ایمنسٹی

'حسین حقانی کو ویزا جاری کرنے کا اختیار یوسف گیلانی نے دیا'

پورا سچ بتائیں یا قوم پر رحم کریں

ایک حقیقی المیہ:  کیا پاکستان میں انتہا پسندوں کو سیاست میں حصہ لینے سے روکا جا سکتا ہے؟

شفقنا خصوصی: برطانیہ اپنے ہی پالے سانپوں شکار

سعودیہ کے 5 ٹھکانوں پر یمن کی کامیاب کارروائی؛ 40 فوجی ہلاک اور زخمی

شیعوں‌کو حقیر قرار دینے کی سازش: کے پی کے حکومت کے پس پردہ عزائم کیا ہیں؟

ایٹمی معاہدے کے باوجود بھی اسرائیل کیلئے ایران اہم ترین خطرہ ،موساد سربراہ

فسادیوں کا قصہ

۲۳ مارچ ۔۔۔ ہماری کسرِ نفسی اور ہماراپاکستان ~ نذر حافی

یوم تجدید عہد کے تقاضے

  شفقنا خصوصی: چین اقوام متحدہ کو جوتے کی نوک پر کیوں رکھتا ہے؟

 ہندو انتہا پسندی کی انتہا : بھارت پاکستان پر حملے کا آغاز کرسکتا ہے

اسرائیل روئے زمین کا خبیث ترین قابض

مقدس ہستیوں کی توہین: کیا سوشل میڈیا کو بند کردینا ہی مسئلے کا حل ہے؟

ملک بھر میں یوم پاکستان آج ملی جوش و جذبے سے منایا جائے گا

لندن میں دہشتگردی کے واقعے میں حملہ آور سمیت 4 افراد ہلاک، 20 زخمی

برطانوی پارلیمنٹ کے باہر فائرنگ سے 12 افراد زخمی

یمنی کاروائیوں کا اگلا مرحلہ جنگ کا نقشہ تبدیل کردے گا: یمنی مقبول افواج

لحاف اور مونگ پھلی سے باہر کی دنیا

اصطلاحات کا کھیل اور معذرت کی لوریاں ~ نذر حافی

بیجنگ کے جنوبی ایشیائی ممالک کے تعلقات پر بھارت مداخلت سے بازرہے: چین کی تنبیہ

لبنان کے خلاف سعودیہ کی بھیانک سازش

فوجی عدالتوں سے سیاسی قوتیں خائف کیوں؟

شفقنا خاص : اسلامی جمعیت طلبا نے پاکستان کے تعلیمی اداروں کی کیسے یرغمال بنایا ہوا ہے؟

پس پردہ کہانی: برطانیہ الطاف حسین کے خلاف ایکشن لینے سے گریزاں کیوں؟

The art of hand clapping makes comeback in Egypt

11 ستمبر کے واقعات میں ہلاک ہونےوالوں کے اہل خانہ کی سعودی عرب کے خلاف قانونی کارروائی

یمن کے مظلوم عوام کے قتل عام کےلئے فرانس کی جانب سے سعودی عرب کو ہتھیاروں کی فروخت

امریکا نے 7 اور برطانیہ نے 6 مسلم ممالک کے مسافروں پر نئی پابندی لگا دی

امریکا کے ساتھ جنگ کی صلاحیت رکھتے ہیں: جنوبی کوریا

بانی ایم ایم کیو ایم سے متعلق پاکستان کی تشویش کوسمجھ سکتے ہیں: برطانوی وزیر داخلہ

ہفنگٹن پوسٹ: سعودیہ دہشتگردی کا حامی ہے، ایران نہیں

شہنشاہانہ عیاش پرستیاں:‌سعودی فرمانروا کا پرتعیش دورہ ایشیاء

امت مسلمہ کو واضح پیغام: اقوام متحدہ اسرائیل کی کٹھ پتلی

پاکستان میں داعشی مراکزکی بھرتی:پاکستانی خواتین کی بھی داعش میں شمولیت

The Fatwa you Didn’t Hear about that Should be Going Viral

ٹی ایم او بنوں کے متنازعہ اشتہار: 6 کروڑ اہل تشیع کے جذبات مجروح کیئے، ذمہ داروں کو کڑی سزادی جائے: ناصر شیرازی

اس ریجن میں پاکستان کی مفادات کیخلاف سب سے بڑا جاسوسی کا اڈہ امریکن ایمبیسی اسلام آباد بنا ہوا ہے: علامہ راجہ ناصرعباس

نیشنل ایکشن پلان کو سیاسی پلان نہ بنایا جائے ، ثروت اعجاز

سندھ طاس معاہدہ، پاکستان کے لئے اہم کیوں؟

یمن : سعودی ہیلی کاپٹر کا صومالی مہاجرین کی کشتی پہ حملہ ،40 ہلاک، متعدد زخمی ہوگئے – مستجاب حیدر

ضرب عضب کے بعد ملک میں کسی دہشتگرد تنظیم کا ہیڈ کوارٹر نہیں: چوہدری نثار

 آل خلیفہ حکومت انسانی حقوق کی سرخ لائن بھی عبور کر گئی: بحرینی جیلوں میں قیدیوں کے لئے مذہبی عبادات کی ادائیگی بھی جرم

مودی حکومت کے کالے کرتوت: بھارت میں مسلمانوں کی جائیداد پر قبضہ کرنے کا کالا قانون منظور

تعلیم حکومت کی ذمہ داری یا مذہبی تنظیموں کی؟

 شاہ سلمان کا دورہ مالدیپ ملتوی: وجہ سوائن فلو یا عوام کا احتجاج

2017-03-20 14:11:35

یمن : سعودی ہیلی کاپٹر کا صومالی مہاجرین کی کشتی پہ حملہ ،40 ہلاک، متعدد زخمی ہوگئے – مستجاب حیدر

17362694_10212656699200764_3568400439547301864_n-768x432-1افریقی ملک صومالیہ کی حکومت نے میڈیا کو بتایا کہ سعودی قیادت میں فوجی اتحاد نے یمن کی بندرگاہ حدیدہ کے قریب صومالی مہاجرین کی ایک کشتی پہ گن شپ ہیلی کاپٹر سے فائرنگ کی اور اس کے نتیجے میں 42 صومالی مہاجرین ہلاک ہوگئے۔صومالی حکومت نے امریکہ اور اس کے اتحادیوں سے اس واقعے کی مکمل تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔

کشتی میں درجنوں صومالی پناہ گزین سوار تھے جن میں عورتیں اور بچّے بھی تھے۔مہاجرین کی کشتی حدیدہ بندرگاہ سے 30 میل دور تھی جب اس پہ سعودی اتحادی افواج کے گن شپ ہیلی کاپٹر نے حملہ کردیا۔

سعودی اتحادی فوج یمن میں حوثی قبائل کی مزاحمتی تحریک کو کچلنے کے لئے یمن پہ فضائی حملے جاری رکھے ہوئے ہے اور یمن کے ساحلوں کی ناکہ بندی کررہے تھے۔

صومالیہ کے وزیر خارجہ عبدالسلام عمر نے صومالیہ کے سرکاری ریڈیو سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وہاں جو ہوا بہت خوفناک تھا اور معصوم صومالی لوگوں پہ خوفناک مصیبت کا پہاڑ ٹوٹ پڑا ہے۔

صومالی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ یمن کی (کٹھ پتلی ) حکومت کو اس کی وضاحت دینا پڑے گی، 80 افراد زخمی ہوگئے ہیں اور جو زمہ دار ہیں ان کو انصاف کے کہٹرے تک لانا ہوگا۔

صومالیہ کے وزیراعظم حسن علی خیری نے اپنے بیان میں اس واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے انتہائی ظالمانہ اقدام قرار دیا۔

یمن میں حوثی قبائل اور ان کے اتحادی سابق صدر صالح عبداللہ نے اس واقعے کی زمہ داری سعودی اتحادی جارح افواج پہ عائد کی ہے۔

یہ افسوناک واقعہ خلیج عدن پہ موجود خطرات کی طرف توجہ دلاتا ہے جوکہ اس وقت “پناہ گزینوں ” کی آمد و رفت کا بڑا راستہ ہے اور یہ افریقہ سے گلف ریاستوں تک پھیلا ہوا ہے اور وار زون یمن سے گزرتا ہے۔

یمن میں اقوام متحدہ کے کمیشن برائے مہاجرین آفس کے سربراہ لارنٹ ڈی بیوک نے کہا کہ ان کا آفس سمجھتا ہے کہ کشتی پہ سوار سب لوگ رجسٹرڈ مہاجر تھے۔

ایک یمنی جوکہ اس حملے سے بچ نکلا کا کہنا ہے کہ پناہ گزین سوڈان پہنچنا چاہتے تھے ،لیکن صومالی وزیرخارجہ کا کہنا ہے مہاجرین کی آخری منزل بہرحال صومالیہ تھی۔
حملے میں بچ گئے الحسن غالب محمد نے کہا کہ کشتی نے راس آراء یمن کے صوبے حدیدہ کے ساحل سے کچھ دور سے روانہ ہوئی اور باب المندب خلیج کے قریب تھی جب حملہ کیا گیا۔

محمد نے بتایا کہ کشتی میں خوف پھیل گیا تھا،مہاجرین نے فلیش لائٹس لہرائیں اور یہ بتانے کی کوشش کی کہ وہ معصوم شہری ہیں۔اس وقت ہیلی کاپٹر نے گولیاں برسانا بند کیں مگر اس وقت تک 40 افراد کی جانیں چلی گئیں تھیں۔

ایک ویڈیو میں صاف دیکھا جاسکتا ہے کہ درجنوں زخمی صومالی مہاجر ایسے تھے جو اپنے اعضاء سے محروم ہوچکے تھے یا ان کے ہاتھ اور ٹانگیں ٹوٹ گئی تھیں۔

سعودی اتحادی وجہ یمن کی حدیدہ بندرگاہ کے اردگرد زبردست بمباری کررہی ہے جہاں اس کے بقول حوثی قبائل چھوٹی کشتیوں کے زریعے اپنے لئے گولہ باردو اور اسلحہ لیکر آتے ہیں۔

سعودی اتحادی فوج نے مارچ 2015ء میں حوثی قبائل اور صالح عبداللہ کی حامی افواج کے زیر کنٹرول علاقوں اور بندرگاہوں پہ حملے شروع کئے جبکہ یمنی ساحلوں کی ناکہ بندی کردی تھی۔سعودی عرب معزول صدر عبد ربہ منصور ہادی کی حکومت کو سپورٹ کررہی ہے جسے مغربی طاقتوں کی حمایت بھی حاصل ہے اور عددی اکثریت کی بنا پہ اسے اقوام متحدہ سے بھی تسلیم کرالیا گیا ہے۔حوثی قبائل اور صالح عبداللہ کی افواج کے زیر کنٹرول اب بھی شمالی یمن کا 99 فیصد حصّہ ہے اور یمن کا دارالحکومت صنعاء بھی ان کے کنٹرول میں ہے۔سعودی اتحادی افواج کے فضائی حملوں سے ابتک دس ہزار لوگ مارے گئے ہیں جن میں اکثر سویلین ہیں۔
جب سے یہ جنگ شروع ہوئی ہے اس وقت سے یمن پہ فضائی اور ساحلی پابندیاں نافذ ہیں۔اور صرف سعودی اتحادی فوج ہی فضائی و بحری حملے کررہی ہے اور انسانی حقوق کی تنظیموں نے ایسے درجنوں حملے رپورٹ کئے ہیں جن کا نشانہ واضح طور پہ شہری اور شہری املاک تھیں۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

زمرہ جات:   Horizontal 2 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

صحت بخش اسنیک

- القمر آن لائن