پارہ چنار۔۔۔ ناکامی سے کامیابی کا سفر ~ نذر حافی

سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان مکار، دھوکہ باز، حیلہ گر اور فریبکار ہیں: قطری شیخ

امریکا نے دہشت گردی کے بجائے چین اور روس کو خطرہ قرار دے دیا

سلامتی کونسل میں پاکستان اور امریکی مندوبین کے درمیان لفظی جنگ

ایک اورماورائے عدالت قتل

کالعدم سپاہ صحابہ کا سیاسی ونگ پاکستان راہ حق پارٹی بھی اھل سیاسی جماعتوں میں شامل

امریکہ اور دہشتگردی کا دوبارہ احیاء

ایرانی جوان پوری طرح اپنے سیاسی نظام کے حامی ہیں؛ ایشیا ٹائمز

دنیائے اسلام، فلسطین اور یمن کے بارے میں اپنی شجاعت کا مظاہرہ کرے

شام کے لیے نئی سازش کا منصوبہ تیار

پاک فوج کیخلاف لڑنا حرام ہے اگر فوج نہ ہوتی تو ملک تقسیم ہوچکا ہوتا: صوفی محمد

امام زمانہ عج کی حکومت میں مذہبی اقلیتوں کی صورت حال

سعودی عرب نائن الیون کے واقعے کا تاوان ادا کرے، لواحقین کا مطالبہ

امریکہ کو دوسرے ممالک کے بارے میں بات کرنے سے باز رہنا چاہیے: چین

پاکستان میں حقانی نیٹ ورک موجود نہیں

سعودی عرب نے یمن میں انسانی، اسلامی اور اخلاقی قوانین کا سر قلم کردیا

پاکستان کو ہم سے دشمن کی طرح برتاؤ نہیں کرنا چاہیے: اسرائیلی وزیراعظم

آرمی چیف نے 10 دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی

بھارت: ’حج سبسڈی کا خاتمہ، سات سو کروڑ لڑکیوں کی تعلیم کے لیے

صہیونی وزیر اعظم کے دورہ ہندوستان کی وجوہات کچھ اور

پاکستانی سرزمین پر امریکی ڈرون حملہ، عوام حکومتی ایکشن کے منتظر

روس، پاکستان کی دفاعی حمایت کے لئے تیار ہے؛ روسی وزیر خارجہ

عام انتخابات اپنے وقت پر ہونگے: وزیراعظم

ناصرشیرازی اور صاحبزادہ حامد رضا کی چوہدری پرویزالہیٰ سے ملاقات، ملکی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال

پارلیمنٹ نمائندہ ادارہ ہے اسے گالی نہیں دی جاسکتی: آصف زرداری

زائرین کے لیے خوشخبری: پاک ایران مسافر ٹرین سروس بحال کرنے کا فیصلہ

شریف خاندان نے اپنے ملازموں کے ذریعے منی لانڈرنگ کرائی، عمران خان

امریکہ کی افغانستان میں موجودگی ایران، روس اور چین کو کنٹرول کرنے کے لئے ہے

ایرانی پارلیمنٹ اسپیکر کی تہران اسلام آباد سیکورٹی تعاون بڑھانے پر تاکید

دورہ بھارت سے نیتن یاہو کے مقاصد اور ماحصل

ایوان صدر میں منعقد پیغام امن کانفرنس میں داعش سے منسلک افراد کی شرکت

امریکہ، مضبوط افغانستان نہیں چاہتا

عربوں نے اسرائیل کے خلاف جنگ میں اپنی شکست خود رقم کی

سیاسی لیڈر کا قتل

مقاصد الگ لیکن نفرت مشترکہ ہے

انتہا پسندی فتوؤں اور بیانات سے ختم نہیں ہوگی!

تہران میں او آئی سی کانفرنس، فلسطین ایجنڈہ سرفہرست

زینب کے قاتل کی گرفتاری کے حوالے سے شہباز شریف کی بے بسی

یورپ کی جانب سے جامع ایٹمی معاہدے کی حمایت کا اعادہ

بن گورین ڈاکٹرین میں ہندوستان کی اہمیت

دہشت گردی کے خلاف متفقہ فتویٰ

شام میں امریکی منصوبہ؛ کُرد، موجودہ حکومت کی جگہ لینگے

شفقنا خصوصی: کیا زینب کے قاتل کی گرفتاری کو سیاسی مقاصد کے لیے چھپایا جا رہا ہے؟

مسئلہ فلسطین، عالم اسلام کا اہم ترین مسئلہ ہے

پاپ کی طرف سے میانمار کے مسلمانوں کی عالمی سطح پر حمایت

امریکا مشترکہ مفادات کی بنیاد پر پاکستان سے نئے تعلقات بنانا چاہتا ہے، ایلیس ویلز

کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا بینظیر بھٹو کو قتل کرنے کا دعویٰ

امریکہ، بیت المقدس کے بارے میں اپنے ناپاک منصوبوں ميں کامیاب نہیں ہوگا

پاکستان کے ساتھ تعلقات مزید مستحکم کرنےکےلیے پرعزم ہیں: امریکی جنرل جوزف ڈنفورڈ

اسلامی ممالک کو اختلافات دور کرنے اور باہمی اتحاد پر توجہ مبذول کرنی چاہیے

بھارت ایسے اقدامات سے باز رہے جن سے صورتحال خراب ہو، چین

عمران خان اور آصف زرداری کل ایک ہی اسٹیج سے خطاب کریں گے، طاہرالقادری

اسرائیلی وزیراعظم کا 6 روزہ دورہ بھارت؛ کیا پاکستان اور ایران کے روایتی دشمنوں کیخلاف علاقائی اتحاد ناگزیر نہیں؟

مودی، یاہو اور ٹرمپ کی مثلث

سید علی خامنہ ای، دنیا کے تمام مسلمانوں کے لیڈر ہیں؛ آذربائیجانی عوام

لسانی حمایت کافی نہیں، ایرانی معترضین تک اسلحہ پہنچایا جائے؛ صہیونی ادارہ

خود کش حملے حرام ہیں، پاکستانی علما کا فتوی

پاکستان افغان جنگ میں قربانی کا بکرا نہیں بنے گا ، وزیردفاع

امریکہ کے شمالی کوریا پر حملے کا وقت آن پہنچا ہے؛ فارن پالیسی

یمن پر مسلط کردہ قبیلۂ آل سعود کی جنگ پر ایک طائرانہ نظر

پاکستان اور امریکہ کے روابط میں اندھیر

مقبوضہ کشمیر، برہان وانی کے بعد منان وانی !!!

آج دنیا کی تمام اقوام کی تباہی و بربادی کا ذمہ دار امریکہ ہے، جنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنایا جائے،

پاک و ہند میں امن کی ضرورت ہے ، جنگ کی نہیں

اتحاد اور ایمریٹس ایئر لائن کا پی آئی اے کی خریداری میں دلچسپی کا اظہار

آصف زرداری کا طاہر القادری کی حکومت مخالف تحریک میں شمولیت کا فیصلہ

ستر سال کا بوڑھا پروفیسر قومی سلامتی کے لئے خطرہ تھا؟ عامر حسینی

فلسطینی قسام بریگیڈ کی پہلی مسلحانہ کاروائی ،صہیونی مزہبی پیشوا فائرنگ میں ہلاک

سعودی عوام مہنگائی کی وجہ سے پریشان ہیں؛ ہوفنگٹن پوسٹ

کویت نے لبنان کے شیعہ سفیر کو آخر کار قبول کرلیا

افغان حکومت اور طالبان کے درمیان ترکی میں مذاکرات

2017-04-02 10:34:44

 پارہ چنار۔۔۔ ناکامی سے کامیابی کا سفر ~ نذر حافی

Nazar-Hafi11

ناکامی ہی کامیابی کا زینہ ہے۔ انسان ناکامیوں سے سیکھتا ہے۔ سیکھنے کے لئے ضروری ہے کہ ناکامی کے اسباب کو سمجھا جائے۔ پارہ  چنار میں حالیہ بم دھماکہ پہلا یا آخری نہیں ہے۔ تاریخی اعتبار سے یہ  پارہ چنار میں ہونے والا نواں  دھماکہ ہے اور جغرافیائی لحاظ سے  پارہ  چناراسلام آباد سے مغرب کی طرف 574 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

 اس کی ریاستی اہمیت یہ ہے کہ یہ کرم ایجنسی کا دارالحکومت ہے اور پاکستان کی تمام ایجنسیو ں میں دلکشی کے اعتبار سے منفرد اور رقبے کے لحاظ سے ایک بڑا شہر ہے۔

دفاعی طور پر  پارہ  چنار انتہائی حساس علاقہ ہے ، چونکہ اس کے  ساتھ تین طرف سے افغانستان کا بارڈر لگتا ہے جبکہ صرف ایک طرف سے یعنی فقط  مشرق  کی طرف سے یہ علاقہ پاکستان کے ساتھ ملا ہوا ہے۔

یہ اس علاقے کے لوگوں کی پاکستان سے محبت اور نظریاتی وابستگی ہی ہے جس نے اس علاقے کو پاکستان کے ساتھ ملا کر رکھا ہوا ہے۔

دشمن طاقتوں نے ہر دور میں اس علاقے کو پاکستان سے جدا کرنے کی  اپنی طرف سے بھرپور کوشش کی ہے ۔ سال ۲۰۰۵ میں باقاعدہ ایک منصوبے کے تحت اس علاقے کو  زمینی طور پر  بنگلہ دیش کی طرح پاکستان سے کاٹ کر الگ کردیاگیا۔اس دوران  یہاں کے لوگ  ایک لمبا چکر کاٹ کر افغانستان سے ہو کر  پارہ چنار پہنچتے رہے۔ بات صرف یہاں پر ختم نہیں ہوتی بلکہ  ستم بالائے ستم یہ ہے کہ ملک دشمن عناصر ، یہاں کے لوگوں کو اغوا کر کے ان کے جسموں کے ٹکڑے کرتے رہے اور انہیں لاپتہ کرتے رہے۔ چنانچہ آج بھی یہاں کے لوگوں کی ایک اچھی خاصی تعداد لاپتہ ہے۔  اس کے علاوہ  حسبِ ضرورت ، افغانستان سے اس علاقے پر میزائل بھی داغے جاتے ہیں، یہاں پر میزائل داغنے کی وجہ یہ ہے کہ یہ علاقہ ملکی دفاع کی کے لئے ایک کیمپ کی حیثیت رکھتا ہے۔

ان ساری مشکلات کے دوران یہاں کے باسیوں نے  آج تک وطن کی سلامتی پر کسی طرح کی آنچ نہیں آنے دی۔  چاہیے تو یہ تھا کہ پورا پاکستان مل کر یہاں کے عوام کی ہر ممکنہ مدد کرتا اور انہیں یہ احساس دلاتا کہ مشکل کی ہر گھڑی میں ہم آپ کے ساتھ ہیں لیکن ایسا کچھ بھی دیکھنے میں نہیں آیا۔

حق بات تو یہ ہے کہ آج تک  پارہ چنار کے لوگ ، افغانستان اور بھارت کی خفیہ ایجنسیوں کا مقابلہ تن تنہا کر رہے ہیں۔یہ ایک المیہ ہے کہ  جب یہاں کوئی  ناگوارواقعہ پیش آجاتا ہے تو پورے ملک کی سیاسی ، سماجی ،دینی اور سرکاری شخصیات چند مذمتی بیانات دینے کے بعد اپنے کاموں میں مصروف ہو جاتی ہیں اور یوں یہ علاقہ دوبارہ فراموشی کی نظر ہوجاتاہے۔

اتنے اہم علاقے میں بار بار بمب دھماکوں کا ہونا ، صرف سیکورٹی اداروں اور ملکی سلامتی کے ذمہ داروں کی  ہی ناکامی نہیں بلکہ  مجموعی اور قومی سطح پر ہم سب کی ناکامی ہے۔

ہمارا تعلق خواہ کسی اجتماعی، رفاہی، سیاسی یا مذہبی تنظیم سے ہو  یا پھر حکومتی سیٹ اپ  یا میڈیا سے ہو ، ہم سب مشترکہ طور پر   پارہ  چنار کی حفاظت میں ناکام ہوچکے ہیں۔

سیکورٹی کے حوالے سے ،  پارہ چنار کے عوام کو جو مشکلات درپیش ہیں، ان کا جاننا، اور ان کے  حل کے لئے حکومت کو تذکر دینا ، اور ان مشکلات کو حل کروانا یہ ہم سب کی قومی ذمہ داری ہے۔

ظاہر ہے جب ہم اپنی قومی ذمہ داری کو ادا نہیں کریں گے تو قومی سطح پر ناکام ہی ہوں گے۔ ایک دانشمند کے بقول کسی بھی حکومت یا تنطیم یا ادارے کی ناکامی کی چار وجوہات ہیں:۔

۱۔ تنظیمی یا سرکاری عہدوں کا بغیر اہلیت کے مل جانا۔

جب کسی ادارے میں صلاحیت اور اہلیت کے بجائے، رشوت ، دھونس ، چاپلوسی یا دوستی اور رشتے داری کی بنا پر مسئولیتیں تقسیم ہونے لگیں تو پھر مسئولین اپنی ذمہ داریوں کا احساس نہیں کرتے۔ ایسے لوگ بظاہر مسئول تو بن جاتے ہیں لیکن عملا  صلاحیت کے فقدان کے باعث وہ کسی قسم کی منصوبہ بندی نہیں کرپاتے اور اسی طرح منصوبہ بندی سے ان کی دلچسبی بھی نہیں ہوتی لہذا ایسے لوگ  فقط بیانات تک محدود رہتے ہیں۔  کوئی واقعہ پیش آجائے تو بیان دے دیتے ہیں اور اسی کو اپنی کارکردگی بناکر پیش کرتے ہیں۔جس ملک کی  کلیدی پوسٹوں پر بیٹھنے والے فقط بیانات تک محدود ہو جاتے ہیں تو پھر اس ملک کو ناکام ریاست بننا ہی پڑتا ہے۔

آپ نیشنل ایکشن پلان سے لے کر آپریشن رد الفساد کو ہی لے لیں۔ آپ دیکھیں گے کہ فقط بیانات کی حد تک تبدیلی آئی ہے۔ عملا کچھ بھی تبدیل نہیں ہوا۔

لمحہ فکریہ یہ ہے کہ اگر سرکاری سطح پر عملا کچھ بھی تبدیل نہیں ہوا تو پھر  اس صورتحال کو تبدیل کرنے کے لئے ہماری مذہبی  اور سیاسی تنظیموں نے ابھی تک کسی مشترکہ  پلاننگ کا اعلان کیوں نہیں کی!؟

یعنی ہمارے ہاں ہر طرف خواہ کوئی  سرکاری سیٹ اپ ہو یا غیر سرکاری ، یہاں ہر طرف مسئولین  موجود ہیں، لیکن اپنی مسئولیت سے عہدہ برا ہونے کا  مطلوبہ احساس  اور منصوبہ بندی نہیں ہے۔

اس بات کو ہم  پارہ  چنار کے حوالے سے بھی دیکھ سکتے ہیں کہ ہم لوگوں نے کس قدر اپنی مسئولیت کو ادا کیا ہے!؟

۲۔ ناکامی کا دوسرا سبب کاموں میں شفافیت کا نہ ہونا ہے۔

ہمارے ہاں فعالیت تو بہت انجام دی جاتی ہے لیکن کوئی یہ پوچھنے والا نہیں کہ آپ یہ جو فعالیت انجام دے رہے ہیں ، کیا اس وقت یہی فعالیت ہونی چاہیے!؟

مجازی فعالیت کر کے اصلی فعالیت پر پردہ ڈالا جاتا ہے۔  مثلا اگر کسی ادارے کی طرف سے کہیں پر   تعلیم و تربیت کا کام کرنے کا عزم کیا جائے تو  اکثر اوقات چند   افراد آپس میں  مل کر اپنے ہی عزیزوں اور رشتے داروں  اور اپنی پارٹی یا تنظیم کے حوالے سے  افراد کی تعداد کو دیکھ کر ہی کوئی تعلیمی ادارہ کھولیں گے یا پھر سکالر شپ دیں گے۔بظاہر تعلیم و تربیت کے نام پر ہی فعالیت ہورہی ہوتی ہے لیکن در حقیقت  صرف اپنوں کو نوازا جاتا ہے۔

 اسی طرح اگر کہیں پر لوگوں میں غربت و افلاس اور پسماندگی  کا مسئلہ ہو تو لوگوں کی اقتصادی و اجتماعی مشکلات کو حل کرنے ، نیز بیواوں اور یتیموں کی سرپرستی کے بجائے وہاں پر ایک مسجد یا مدرسے کی عمارت کھڑی کر دی جاتی ہے اور  تمام ممکنہ ذرائع سے روپیہ پیسہ جمع کر کے اس عمارت پر صرف کردیا جاتا ہے۔ اس کا نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ ہمارے ہاں بڑی بڑی شاندار بلڈنگیں تو بن جاتی ہیں لیکن انہیں آباد کرنے کے لئے دوردراز سے بچوں کو لاکر بھرتی کیا جاتا ہے۔ یوں مقامی لوگوں کی حالت جوں کی توں ہی رہتی ہے۔ بظاہر اس علاقے میں فعالیت تو ہو رہی ہوتی ہے لیکن مطلوبہ فعالیت پر گردو غبار ڈال دیا جاتا ہے۔

ہم لوگ اداروں کی رپورٹس دیکھ کر مطمئن ہوجاتے ہیں اور یہ نہیں سوچتے کہ  یہ فعالیت اس علاقے کی ضرورت کو کس حد تک  پورا کرتی ہے!؟

فقط فعال ہونا کافی نہیں ہے بلکہ درست سمت میں فعالیت ضروری ہے۔ ہمیں  پارہ  چنار  کے حوالے سے بھی اپنی فعالیتوں کا جائزہ لینا چاہیے کہ ہم نے وہاں پر شہدا اور لاپتہ ہونے والے افراد کے یتیموں اور بیواوں کی سرپرستی کے لئے اب تک کیا عملی کام کیا ہے!؟

۳۔ ناکامی کا تیسرا سبب ایمانداری کا فقدان ہے۔

اگر قومی و ملی اداروں میں ایمانداری کے بجائے خانہ پری سے کام لیا جائے گا تو بلاشبہ ناکامی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ہمارے ہاں جس طرح سرکاری اداروں میں رشوت اور کرپشن کا دروازہ کھلا رہتا ہے اسی طرح غیر سرکاری اداروں میں بھی امور کی نظارت اور دیکھ بھال فقط برائےنام ہوتی ہے۔

جو لوگ نظارت اور دیکھ بھال پر مامور ہوتے ہیں ، ان کا منہ مختلف طریقوں سے بند کردیا جاتا ہے اور ان کی آنکھوں پر پٹیاں باندھ دی جاتی ہیں۔

ایسے ناظر اور مامور افراد، معاملات کا ایمانداری سے نوٹس لینے کے بجائے  فقط دستخط اور امضا کرنے والی  اور بیانات داغنے والی مشینیں بن جاتے ہیں۔چنانچہ  پریس ریلیز اورلیٹر پیڈز پر فقط ان کے نام چھاپے جاتے ہیں اور خطوط پر صرف ان کی مہریں ثبت کی جاتی ہیں۔  پارہ  چنار کے حوالے سے بھی یہ دیکھنے کی ضرورت ہے کہ آیا ہم نے اس حوالے سے آج تک کسی کو  پارہ  چنار کی صورتحال پرناظر مقرر کیا تھا اور اس نے اپنی ذمہ داری کو ایمانداری سے انجام دیا ہے!؟

۴۔ناکامی کا چوتھا سبب ، احترام باہمی کا فقدان

ہمارے  اردگرد بہت سارے مخلص  اور انتھک محنت کرنے والے موجود ہوتے ہیں، لیکن ان  میں دوسروں کے  احترام  کےنام کی کوئی چیز نہیں پائی جاتی۔ وہ کام  تو بڑی محنت اور جانفشانی سے کرتے ہیں لیکن دوسروں کی بے عزتی کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے۔ ایسے لوگ نہ صرف یہ کہ خود دوسروں سے کٹ جاتے ہیں بلکہ وہ جس ادارے سے وابستہ ہوتے ہیں، اسے بھی دوسروں کی نظر میں منفور بنا دیتے ہیں۔ اس طرح کے لوگ  کسی بھی ادارے کی جتنی خدمت کرتے ہیں اس سے زیادہ اس کے بارے میں نفرت پھیلا تےہیں۔

دوسری تنظیموں اور اداروں سے ہٹ کر خود ان کا اپنے ہی ادارے کے لوگوں  اور دوستوں کے ساتھ برتاو فرعونوں کی طرح کا ہوتا ہے۔  جب تک  ہمارے اداروں سے  من مانی، فرعونیت  اور انانیت کا خاتمہ نہیں ہوتا تب تک ہم کامیاب نہیں ہوسکتے۔

 پارہ چنار میں قومی سلامتی کے حوالے سے ہماری ناکامی  کی ایک اہم وجہ  وہاں کی سرکاری انتظامیہ میں پائی جانے والی فرعونیت ہے۔  وہاں پر عوامی مطالبات کو اصلا اہمیت نہیں دی جاتی اور دھماکوں کے بعد ہونے والے مظاہروں پر بھی گولی چلا دی جاتی ہے۔

اب تک کتنے ہی لوگوں کو مظاہروں کے درمیان گولیاں مار کر شہید کیا گیا ہے لیکن اس فرعونیت کے خلاف ہماری سیاسی اور قومی تنطیمیں بالکل خاموش ہیں۔

جب تک ہم  پارہ  چنار میں فرعونیت کا راستہ نہیں روکیں گے تب تک وہاں امن و سلامتی کے حوالے سے ہم کامیاب نہیں ہو سکتے۔

اگر ہم نے ناکامی سے کامیابی کی طرف سفر کرنا ہے تو پھر پارہ چنار کے حوالے سے فقط حکومت کو مورد الزام ٹھہرانے کے بجائے ، ہمیں اپنی اجتماعی مسئولیت، شفافیت، ایمانداری اور باہمی ادب و احترام پر بھی  توجہ دینی پڑے گی۔ ہمیں اس حقیقت کو ماننا پڑے گا کہ اگر پاراچنار کی سلامتی کے حوالے سے ہماری قومی تنظیموں اور اداروں کے پاس کوئی پلاننگ اور منصوبہ بندی ہوتو اسے حکومت کے سامنے رکھا جاسکتا ہے لیکن اگر ہماری کوئی پلاننگ ہی نہ ہوتو پھر ہمیں ابھی سے یہ جان لینا چاہیے کہ فقط بیانات سے ہم صورتحال پر قابو نہیں پا سکتے۔ بیانات دینا بھی ایک فعالیت ہے لیکن  یہ پاراچنار کے حوالے سے مطلوبہ فعالیت  نہیں ہے۔

زمرہ جات:   Horizontal 1 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

اسلام کی معرفت

- سحر ٹی وی

یادوں کے جھروکے

- سحر نیوز

جام جم - 20 جنوری

- سحر نیوز