بلوچ ناراضگی اور پاک ایران گیس پائپ لائن میں امریکی مفاد

سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان مکار، دھوکہ باز، حیلہ گر اور فریبکار ہیں: قطری شیخ

امریکا نے دہشت گردی کے بجائے چین اور روس کو خطرہ قرار دے دیا

سلامتی کونسل میں پاکستان اور امریکی مندوبین کے درمیان لفظی جنگ

ایک اورماورائے عدالت قتل

کالعدم سپاہ صحابہ کا سیاسی ونگ پاکستان راہ حق پارٹی بھی اھل سیاسی جماعتوں میں شامل

امریکہ اور دہشتگردی کا دوبارہ احیاء

ایرانی جوان پوری طرح اپنے سیاسی نظام کے حامی ہیں؛ ایشیا ٹائمز

دنیائے اسلام، فلسطین اور یمن کے بارے میں اپنی شجاعت کا مظاہرہ کرے

شام کے لیے نئی سازش کا منصوبہ تیار

پاک فوج کیخلاف لڑنا حرام ہے اگر فوج نہ ہوتی تو ملک تقسیم ہوچکا ہوتا: صوفی محمد

امام زمانہ عج کی حکومت میں مذہبی اقلیتوں کی صورت حال

سعودی عرب نائن الیون کے واقعے کا تاوان ادا کرے، لواحقین کا مطالبہ

امریکہ کو دوسرے ممالک کے بارے میں بات کرنے سے باز رہنا چاہیے: چین

پاکستان میں حقانی نیٹ ورک موجود نہیں

سعودی عرب نے یمن میں انسانی، اسلامی اور اخلاقی قوانین کا سر قلم کردیا

پاکستان کو ہم سے دشمن کی طرح برتاؤ نہیں کرنا چاہیے: اسرائیلی وزیراعظم

آرمی چیف نے 10 دہشت گردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی

بھارت: ’حج سبسڈی کا خاتمہ، سات سو کروڑ لڑکیوں کی تعلیم کے لیے

صہیونی وزیر اعظم کے دورہ ہندوستان کی وجوہات کچھ اور

پاکستانی سرزمین پر امریکی ڈرون حملہ، عوام حکومتی ایکشن کے منتظر

روس، پاکستان کی دفاعی حمایت کے لئے تیار ہے؛ روسی وزیر خارجہ

عام انتخابات اپنے وقت پر ہونگے: وزیراعظم

ناصرشیرازی اور صاحبزادہ حامد رضا کی چوہدری پرویزالہیٰ سے ملاقات، ملکی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال

پارلیمنٹ نمائندہ ادارہ ہے اسے گالی نہیں دی جاسکتی: آصف زرداری

زائرین کے لیے خوشخبری: پاک ایران مسافر ٹرین سروس بحال کرنے کا فیصلہ

شریف خاندان نے اپنے ملازموں کے ذریعے منی لانڈرنگ کرائی، عمران خان

امریکہ کی افغانستان میں موجودگی ایران، روس اور چین کو کنٹرول کرنے کے لئے ہے

ایرانی پارلیمنٹ اسپیکر کی تہران اسلام آباد سیکورٹی تعاون بڑھانے پر تاکید

دورہ بھارت سے نیتن یاہو کے مقاصد اور ماحصل

ایوان صدر میں منعقد پیغام امن کانفرنس میں داعش سے منسلک افراد کی شرکت

امریکہ، مضبوط افغانستان نہیں چاہتا

عربوں نے اسرائیل کے خلاف جنگ میں اپنی شکست خود رقم کی

سیاسی لیڈر کا قتل

مقاصد الگ لیکن نفرت مشترکہ ہے

انتہا پسندی فتوؤں اور بیانات سے ختم نہیں ہوگی!

تہران میں او آئی سی کانفرنس، فلسطین ایجنڈہ سرفہرست

زینب کے قاتل کی گرفتاری کے حوالے سے شہباز شریف کی بے بسی

یورپ کی جانب سے جامع ایٹمی معاہدے کی حمایت کا اعادہ

بن گورین ڈاکٹرین میں ہندوستان کی اہمیت

دہشت گردی کے خلاف متفقہ فتویٰ

شام میں امریکی منصوبہ؛ کُرد، موجودہ حکومت کی جگہ لینگے

شفقنا خصوصی: کیا زینب کے قاتل کی گرفتاری کو سیاسی مقاصد کے لیے چھپایا جا رہا ہے؟

مسئلہ فلسطین، عالم اسلام کا اہم ترین مسئلہ ہے

پاپ کی طرف سے میانمار کے مسلمانوں کی عالمی سطح پر حمایت

امریکا مشترکہ مفادات کی بنیاد پر پاکستان سے نئے تعلقات بنانا چاہتا ہے، ایلیس ویلز

کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا بینظیر بھٹو کو قتل کرنے کا دعویٰ

امریکہ، بیت المقدس کے بارے میں اپنے ناپاک منصوبوں ميں کامیاب نہیں ہوگا

پاکستان کے ساتھ تعلقات مزید مستحکم کرنےکےلیے پرعزم ہیں: امریکی جنرل جوزف ڈنفورڈ

اسلامی ممالک کو اختلافات دور کرنے اور باہمی اتحاد پر توجہ مبذول کرنی چاہیے

بھارت ایسے اقدامات سے باز رہے جن سے صورتحال خراب ہو، چین

عمران خان اور آصف زرداری کل ایک ہی اسٹیج سے خطاب کریں گے، طاہرالقادری

اسرائیلی وزیراعظم کا 6 روزہ دورہ بھارت؛ کیا پاکستان اور ایران کے روایتی دشمنوں کیخلاف علاقائی اتحاد ناگزیر نہیں؟

مودی، یاہو اور ٹرمپ کی مثلث

سید علی خامنہ ای، دنیا کے تمام مسلمانوں کے لیڈر ہیں؛ آذربائیجانی عوام

لسانی حمایت کافی نہیں، ایرانی معترضین تک اسلحہ پہنچایا جائے؛ صہیونی ادارہ

خود کش حملے حرام ہیں، پاکستانی علما کا فتوی

پاکستان افغان جنگ میں قربانی کا بکرا نہیں بنے گا ، وزیردفاع

امریکہ کے شمالی کوریا پر حملے کا وقت آن پہنچا ہے؛ فارن پالیسی

یمن پر مسلط کردہ قبیلۂ آل سعود کی جنگ پر ایک طائرانہ نظر

پاکستان اور امریکہ کے روابط میں اندھیر

مقبوضہ کشمیر، برہان وانی کے بعد منان وانی !!!

آج دنیا کی تمام اقوام کی تباہی و بربادی کا ذمہ دار امریکہ ہے، جنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنایا جائے،

پاک و ہند میں امن کی ضرورت ہے ، جنگ کی نہیں

اتحاد اور ایمریٹس ایئر لائن کا پی آئی اے کی خریداری میں دلچسپی کا اظہار

آصف زرداری کا طاہر القادری کی حکومت مخالف تحریک میں شمولیت کا فیصلہ

ستر سال کا بوڑھا پروفیسر قومی سلامتی کے لئے خطرہ تھا؟ عامر حسینی

فلسطینی قسام بریگیڈ کی پہلی مسلحانہ کاروائی ،صہیونی مزہبی پیشوا فائرنگ میں ہلاک

سعودی عوام مہنگائی کی وجہ سے پریشان ہیں؛ ہوفنگٹن پوسٹ

کویت نے لبنان کے شیعہ سفیر کو آخر کار قبول کرلیا

افغان حکومت اور طالبان کے درمیان ترکی میں مذاکرات

2017-04-03 15:40:07

بلوچ ناراضگی اور پاک ایران گیس پائپ لائن میں امریکی مفاد

Iran

سی پیک منصوبوں کی تکمیل کے ساتھ ہی پاکستان ایشیا کا اور گوادر پاکستان کا ٹائیگر بن جائے گا، یہ الفاظ تھے نواز شریف کے جو انہوں نے بلوچستان کے بندرگاہ شہر میں ایک عوامی جلسے سے خطاب کے دوران کہے۔ انہوں نے کہا کہ، “میں پہلا وزیر اعظم ہوں جس نے گوادر میں ایک پوری رات قیام کیا، گزشتہ لیڈران نے اس علاقے کو نظر انداز کیے رکھا تھا۔”

انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ شورش زدہ علاقے میں بھی امن ان کے ہی دور حکومت میں بحال ہوا، جس کا سہرا انہوں نے مسلح افواج، پولیس، مقامی انتظامیہ اور قوم کے سر پر سجایا۔

کاش وہ قوم کو قومی ایکشن پلان کے اس حصے پر عمل کرنے سے قبل قوم کو اعتماد میں لیتے جس کا تعلق، اپنے ہی وطن میں ’کم درجے کی شورش’ میں شامل بلوچ ذیلی قوم پرستوں کے ساتھ مفاہمت سے ہے۔

سابق وزیر اعلٰی ڈاکٹر عبدالمالک نے اس مرحلے کا آغاز کیا تھا اور یورپی محفوظ ٹھکانوں میں بیٹھے چند ریاست مخالف لیڈران سے بھی ملاقات کی تھی۔ کیا کوئٹہ اور اسلام آباد میں موجود پالیسی سازوں نے مفاہت کی راہ ہموار کرنے کے لیے اعتمادی سازی کے اقدامات کیے؟ مجھے ڈر ہے کہ سیکیورٹی اسٹیبلشمنٹ کو پختہ یقین ہے کہ کسی بھی حد کی شدت پسندی یا شورش کو صرف طاقت اور جبر سے ٹالا جا سکتا ہے۔

دوسری جانب، لندن میں مقیم، خود ساختہ جلا وطن، خان آف قلات میر سلیمان احمد زئی پاکستان اور چین کو ’لٹیرے’ قرار دے رہے ہیں اور سی پیک کی تکمیل کو روکنے کی خاطر ہندوستان سے قربت بڑھا رہے ہیں۔

حال ہی میں انہوں نے میڈیا کو بتایا کہ مودی ’بلوچستان کے دوست’ ہیں۔ اس کے بعد بلوچ لبریشن آرمی کے رہنما حیر بیار مری بھی ہیں، وہ بھی لندن میں محفوظ ٹھکانے میں مقیم ہیں اور کوئٹہ اور سبی کے نزدیک واقع بولان پاس کے علاقے میں بے چینی پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

اسی طرح، برہمداغ بگٹی جینیوا میں اپنے ٹھنڈے ٹھکانے سے سوئی اور ڈیرہ بگٹی کے علاقوں میں آگ کا کھیل کھیلنے کے لیے اپنے پیروکاروں کو اکسا رہے ہیں۔ یاد رکھیں، یہ وہ بلوچ سردار ہیں جو، یورپ میں آرامدہ زندگی بسر کرتے ہوئے، بلوچستان کے غریب اور مظلوم عوام کو اپنے فرمان پر عمل کرنے کے لیے اکسا نہیں سکتے۔

ریاستی ایجنسیوں کو اصل خطرے کا سامنا باغی بلوچ نوجوانوں اور بلوچ لبریشن فرنٹ کی قیادت سے ہے جو تربت، گوادر، پنجگور اور خاران کے پہاڑی علاقوں میں بسیرا کیے ہوئے ہیں۔

ایک ذہین، متوسط طبقے کے طالب علم ڈاکٹر اللہ نذر نے 2006 میں ریاست مخالف نوجوانوں کی سربراہی کا آغاز کیا۔ یہ نوجوان غصیلے بلوچ مرد و خواتین وہ ہیں جنہیں ہماری ریاستی سلامتی کے اسٹیک ہولڈرز کی توجہ چاہیے۔ انہیں تنہا چھوڑنے کے بجائے ان کا احترام کرنے اور ان کے اختلاف رائے کو سننے کے لیے کوششیں کی جائی چاہئیں۔ ان کے ترجمان دراصل وہ بلوچ سیاستدان ہیں جنہوں نے گولی کے بجائے ووٹ کا انتخاب کیا اور 2013 کے انتخابات میں حصہ بھی لیا۔ یہ منتخب لیڈران پاکستان کے خلاف نہیں ہیں۔

10 جنوری 2016 کو بلوچستان نیشنل پارٹی-مینگل کی جانب سے اسلام آباد میں سی پیک پر ملٹی پارٹی کانفرنس کا انعقاد کیا گیا جس میں یہ قراردادیں منظور کی گئیں: پہلی، گوادر پورٹ کے میگا منصوبے کا تمام تر اختیار آئین کے مطابق بلوچستان کے حوالے کر دیا جائے۔ بلوچستان کے وسائل کے ملکیتی حقوق اور ان سے جڑے فیصلوں کے اختیارات کو تسلیم کرنا چاہیے۔

دوسرا، 28 مئی 2015 کو وزیر اعظم کی جانب سے منعقد کثیر الجماعتی کانفرنس میں منظور ہونے والی متفقہ قرارداد پر لفظی اور عملی طور عمل درآمد ہونا چاہیے۔ سی پیک کا مغربی راستہ پہلے مکمل کرنا چاہیے اور خیبر پختونخوا، پنجاب اور بلوچستان کے پسماندہ علاقوں میں رہنے والے لوگوں کو سی پیک میں سے ہر لحاظ سے فوائد فراہم کیے جائیں۔

تین، بلوچوں کو اپنے ہی صوبے میں اقلیت بننے سے روکنے کے لیے اقدامات کیے اٹھائے جائیں۔ گوادر میں نئے بسنے والوں کو گوادر سے شناختی کارڈز، مقامی سرٹیفکیٹس اور پاسپورٹس کے اجرا پر مکمل طور پر پابندی عائد ہونی چاہیے تا کہ ان کے نام انتخابی فہرستوں میں شامل نہ ہوسکیں۔

چوتھی، پینے کے صاف پانی کی سہولیات میسر کی جائیں، ہسپتالوں، اسکولوں، ٹیکنیکل کالجوں اور بندرگاہوں کے لیے باہنر افراد کے لیے سینٹرز اور میری ٹائم یونیورسٹی قائم کی جائیں، اور ان میں گوادر کے لوگوں کو اولیت دی جائے۔

پانچ، گوادر پورٹ اور اس سے جڑے بڑے منصوبوں میں ملازمتوں میں ترجیح مقامی افراد کو دی جائے۔

چھ، مقامی مچھیروں کو معاشی محرومی سے بچانے کی خاطر آمدن کے متبادل ذرائع فراہم کیے جائیں۔ گوادر کے لوگوں پر عائد تمام پابندیاں، بشمول سیاسی سرگرمیوں پر غیر اعلانیہ پابندی، ہٹا دی جائیں اور انہیں نقل و حرکت کی آزادی حاصل ہو۔

سات، گوادر کے لوگوں کو مفت میڈیکل سہولیات، بیرون ملکوں میں ٹیکنیکل تربیت فراہم کی جائے اور دیگر صوبوں کے معیاری تعلیمی اداروں میں اسکالرشپس فراہم کی جائیں۔

آٹھ، گوادر کی پسماندگی دور کرنے کے لیے اس کے رہائشیوں کو مفت تعلیم اور صحت کی سہولیات فراہم کی جائیں۔ انہیں تین سالوں تک ٹیکس اور یوٹیلیٹی بلوں سے مستثنیٰ قرار دیا جائے۔

نو، ہزاروں کنال پر مشتمل مقامی لوگوں کی ابائی زمین کی سرکاری ضبطگی ناانصافی ہے اور ان زمینوں کو ان کے حقیقی مالکان کو لوٹا دی جائے۔

دس، گوادر میں منصوبوں میں سرمایہ کاری کے حوالے سے مقامی لوگوں کی پارٹنرشپ کو یقینی بنانے کے لیے قانون سازی کی جائے۔ اپنے حقوق اور وقار کے تحفظ کے لیے سیکیورٹی فورسز میں شامل کیا جائے۔

مرکزی دھارے کی مختلف سیاسی قوتوں کی جانب سے پیش کردہ یہ قراردادیں ایک اتفاق کو ظاہر کرتی ہیں جن پر ریاست کو توجہ دینی چاہیے تا کہ ان بگڑتے زخموں کو ٹھیک کیا جا سکے جن کی وجہ سے بلوچ دراندازی کو ہوا ملی۔

ایک اور غیر معمولی اقدام گوادر کو ایرانی پورٹ سٹی چاہ بہار سے جوڑنے کے لیے ریلوے ٹریک بچھانے کا فیصلہ تھا۔ وزیر اعلٰی ثنااللہ زہری اور ایرانی صوبے سیستان-بلوچستان کے گورنر، آقا علی اوساط ہاشمی کی سربراہی میں ایرانی وفد 11 جنوری 2016 کو اس معاہدے پر متفق ہوئے۔

دونوں جانب کے افسران نے منشیات کی اسمگلنگ، غیر قانونی بارڈر کراسنگ وغیرہ پر گفتگو کی، اور بارڈر تجارت، ایک نئی شپنگ سروس اور گوادر سے ایرانی شہروں میں پروازوں کے حوالے سے منصوبہ بندی کرنے کا فیصلہ بھی کیا۔

یہ سب مجھے ناقابل یقین سا لگتا ہے۔ مجھے امریکی سفارت کار ریان کروکر یاد آ گئے جن سے میری الوداعی ملاقات 2007 میں ہوئی تھی، تب میں آئی جی پی بلوچستان تھا۔ میں نے ملاقات کے دوران پاک ایران گیس پائپ لائن کا موضوع نکالا۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان میں امن و امان کی خراب صورتحال کی وجہ سے اس منصوبے پر عمل کرنا آسان نہیں ہوگا۔ میں نے انہیں بتایا کہ پاکستانی سیکیورٹی فورسز محفوظ انداز میں پائپ لائن کو گوادر سے کراچی کی ساحلی پٹی کے ساتھ ساتھ گزارنے کی صلاحیت رکھتی ہیں۔ تھوڑی ٹال مٹول کے بعد، انہوں نے نا چاہتے ہوئے تسلیم کر ہی لیا کہ یہ منصوبہ امریکا کے مفادات میں نہیں تھا۔

اور بات ختم۔ ہمارے خطے میں کیا ہونا ہے اس کا فیصلہ عالمی قوتوں کے قومی مفادات ہی کرتے ہیں۔ ہمیں یہ سوچنا چاہیے کہ علاقائی اعتبار سے ہمارے لیے کیا بہتر ہے۔ ایک مضبوط سی پیک تجارتی پارٹنر کے طور پر پڑوسی ملک ایران ہمارے لیے نہایت اہم ہے۔

اسٹریٹجک اعتبار سے اہم جگہ پر واقع اور وسائل سے بھرپور صوبہ بلوچستان تمام اسٹیک ہولڈرز، خاص طور پر وفاقی حکومت اور سب سے طاقتور فوجی اسٹیبلشمنٹ، سے پختہ، طویل المدتی فیصلے کرنے کا مطالبہ کر رہا ہے۔ بلوچوں کی اواز کو اب مزید نظر انداز نہیں کیا جانا چاہیے۔

طارق کھوسہ

زمرہ جات:   Horizontal 1 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

اسلام کی معرفت

- سحر ٹی وی

یادوں کے جھروکے

- سحر نیوز

جام جم - 20 جنوری

- سحر نیوز