نورین کی بازیابی اور پاکستان میں‌داعش

 نواز جندل خفیہ ملاقات: کیا نواز شریف کلبھوشن کو معافی دے دیں گے؟

مگرمچھ کے آنسو: ایوانکا ٹرمپ کی شامی پناہ گزینوں سے ہمدردی

شفقنا خصوصی: بدعنوان وزیر خزانہ کا راحیل شریف پر فخر

شام کے خلاف حالیہ امریکی حملوں کا کوئی اخلاقی جواز نہیں: جرمی کوربن

سعودی معاشرہ عورتوں کے لئے بدترین قید خانہ بن چکا ہے – مستجاب حیدر

یہ کیسا دھندا ہے؟ – طاہر یاسین طاہر

'شام میں 45 مرتبہ مبینہ کیمیائی ہتھیار استعمال ہوئے'

سعودیہ، امریکا سے اچھا برتاؤ نہیں کر رہا، ڈونلڈ ٹرمپ

پاکستان شام میں روس کے اقدامات کی حمایت کریگا، خواجہ آصف

علمائے کرام تکفیری فتوؤں کا منہ توڑ جواب دیں

عراق میں داعش کی آمدنی کا اہم ذریعہ ...

’شمالی کوریا سے بڑی جنگ کا امکان‘

امام زمانہ(عج) کے ظہور کے وقت انسانی معاشرہ کیسا ہو گا؟

ایرانی انٹیلی جنس کا 120 اسرائیلی اداروں پر سائبر حملہ

کلبھوشن اور عزیر بلوچ کے بعد احسان اللہ احسان

منی لانڈرنگ کیس؛ نواز شریف، شہبازشریف اور اسحاق ڈار کو نوٹس جاری

کرم ایجنسی میں شیعہ کمیونٹی کا قتل عام کب تک؟

شمالی وزیرستان میں مبینہ امریکی ڈرون حملہ، متعدد ’جنگجو' ہلاک

بھارتی وفد کا دورہ: مفاہمت کا پیغام یا عیارانہ چال

یمنی انقلابی فوج کی جوابی کاروئیاں، آل سعود کے فوجی ہتھیاروں کے ڈپو کو آگ لگ گئی

دہشتگردی کیخلاف جنگ میں گھرا پاکستان یمن جنگ کا حصہ بن گیا

کیا بھارت بھی داعش کا سرپرست ہے؟

نواز شریف کے لئے ایک کے بعد دوسرا بحران

تکفیری داعش اور اسرائیلی گٹھ جوڑ: داعش نے  اسرائیل سے معافی کیوں مانگی؟

شفقنا خصوصی: تحریک طالبان کا اسرائیل سے خفیہ تعلق

ترکی میں گرفتاریاں، انسانی حقوق پر حملہ

10 ارب روپے کی پیشکش کرنے والا شہباز شریف کا قریبی تھا، عمران خان

نواز شریف کے لئے ایک کے بعد دوسرا بحران

طالبان کے ’’را‘‘ اور افغان خفیہ ایجنسی سے رابطے ہیں، احسان اللہ احسان کا اعترافی بیان

وہابی مفتی: عید معراج کا جشن منانا حرام ہے!

سعودی شاہی خاندان میں پھوٹ: کیا شاہ سلمان اپنے تخت کو بچا پائیں گے؟

یوم بعثت و نبوت: زیارت حضرت رسول اکرم صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم

امریکی عدالت نے ٹرمپ کا ایک اور حکم نامہ معطل کردیا

ای او بی آئی میں اربوں روپے کی چوری کی ذمہ دار حکومت ہے: سپریم کورٹ

دہشت گردوں کا سوفٹ امیج اور کرپٹ سیاست دان

بھارت دفاع پر خرچ کرنے والا دنیا کا پانچواں ملک بن گیا، رپورٹ

عمران خان کا دعویٰ سیاسی ماحول خراب کرے گا

نواز شریف کب استعفیٰ دیں گے

وزیراعظم عہدے سے استعفیٰ دیں: افتخار چوہدری

راحیل شریف

پانامہ کے نمائشی کیس کے پس پردہ جنرل راحیل کی سعودیہ روانگی / کیا پاکستان، یمن جنگ کا حصہ بن رہا ہے؟

طارق فاطمی نے مستعفی ہونے سے انکار کر دیا، ذرائع

سعودی عرب پاکستان میں فرقہ وارانہ فساد کیلئے فنڈنگ کرتا ہے، عاصمہ شیرازی

 شاہ سے زیادہ شاہ کے وفادار: برطانیہ کا ٹرمپ کو خوش کرنے کے لیے ایرانی شہریوں پر پابندیاں

کرم ایجنسی میں بارودی سرنگ کا دھماکا مردم شماری ٹیم کے 2 ورکروں سمیت 10 فراد جاں بحق

امریکی پیٹ میں پھر مروڑ: روس طالبان کو ہتھیار فراہم کر رہا ہے،امریکی جنرل

فوج کی دیانت اور سپریم کورٹ کی شہرت کا سوال

شمالی کوریا کی امریکی بحری بیڑے کو تباہ کرنے کی دھمکی: سپر پاور کیسے بھیگی بلی بن گیا؟

فرانس کا صدارتی انتخاب

ایران کے لیے پاکستان کی سیکیورٹی انتہائی اہم ہے، جواد ظریف

پاناما لیکس جے آئی ٹی: 'فوج شفاف، قانونی کردار ادا کرے گی'

ایران کے خلاف عرب یہودی اتحاد:  مسلم دنیا کے حکمرانوں کے اصل چہرے عیاں

پانامہ لیکس جے آئی ٹی: کیا عدلیہ نے نواز شریف کو بچاؤ کا راستہ دیا ہے؟

مخصوص ممالک کا فوجی اتحاد عالم اسلام کی وحدت کیخلاف امریکی سازش ہے، پاکستان کو کسی بھی سازش کا حصہ نہیں بننا چاہیئے، علامہ مختار امامی

اپنوں کو نوازنے کا سلسلہ جاری:‌شاہ سلمان نے اپنے بیٹے کو امریکا میں سفیر مقرر کر دیا

تہذیب نام تھا جس کا....... از نذر حافی

نواز شریف کب استعفیٰ دیں گے

قم میں حقیقی اسلام کا درس دیا جاتا ہے نہ کہ داعشی یا طالبانی اسلام کا۔ پاکستانی اسپیکر

ایاز صادق کی ایران کو سی پیک میں شمولیت کی دعوت

وزیر اعظم پر تنقید ہو سکتی ہے تو کوئی بھی مقدس گائے نہیں ، مریم نواز اور ڈی جی آئی ایس آئی کی انتہائی قریبی رشتہ داری ایک حقیقت ہے: اعتزاز احسن

راحیل شریف سعودیہ سدھار گئے

اضافی دستوں کی تعیناتی: کیا سعودیہ پاکستان سے درخواست کرتا ہے؟

سعودیہ بغاوت کے دہانے پر

پاناما فیصلہ، فلم ابھی باقی ہے!

امریکہ سعودیہ گٹھ جوڑ: امت مسلمہ کے داعی کا اصل چہرہ کیا ہے؟

شفقنا خصوصی:پاکستان، سعودی اتحاد اور یمن کے معصوم بچوں کا خون

سعودیہ اگلے مہینے سے اسرائیل کو پیٹرول برآمد کریگا

مودی دنیا کا دوسرا ہٹلر ہے، اسے سبق سکھانے کےلیے کلبھوشن کو پھانسی دی جائے، منموہن سنگھ

اولاند: ٹرمپ، داعش کو منہ بولا بیٹا ماننے کو تیار ہیں

سعودی اتحاد کے منفی عزائم:  کیا پاکستان کو دھوکے میں رکھا گیا ہے؟

2017-04-18 01:38:25

نورین کی بازیابی اور پاکستان میں‌داعش

L

حکومت پاکستان میں داعش کی موجودگی سے انکار کرتی ہے لیکن فروری میں حیدر آباد سے غائب ہونے والی لڑکی نورین جبار لغاری لاہور میں دہشت گردوں کے گروپ کے خلاف کارروائی کے دوران گرفتار ہوئی ہے۔

 

خیال ہے کہ نورین داعش کے پروپیگنڈا سے متاثر ہوکر شام چلی گئی تھی جہاں سے تربیت کے بعد وہ چند روز قبل ہی وہ لاہور واپس آئی تھی۔ اب وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر ایسٹر کے موقع پر عیسائیوں کے خلاف دہشت گردی کرنا چاہتی تھی۔ فوجی ذرائع نے بتایا ہے کہ اس کارروائی میں ایک شخص ہلاک ہؤا ہے جبکہ چار افراد گرفتار ہوئے ہیں۔ فوج نے اس مکان سے بھاری مقدار میں دھماکہ خیز مواد اور خود کش جیکٹس بھی برآمد کی ہیں۔ ایک پڑھے لکھے خاندان کی تعلیم یافتہ نوجوان لڑکی کا یوں داعش سے متاثر ہو کر اس گروہ میں شامل ہونا اور اس کے بعد دہشت گردی پر آمادہ ہو جانا، ملک کے ارباب بست کشاد کے لئے شدید تشویش کا سبب ہونا چاہئے۔

نورین لغاری سندھ یونیورسٹی کے پروفیسر کی بیٹی ہے۔ وہ 10 فروری کو اچانک غائب ہو گئی تھی ۔ وہ گھر سے لیاقت یونیورسٹی آف میڈیکل سائنسز پڑھنے کے لئے گئی تھی۔ اطلاعات کے مطابق اس نے اس روز کی کلاسز میں شرکت کی لیکن اس کے بعد وہ پر اسرار طریقے سے غائب ہوگئی۔ پولیس کا خیال تھا کہ وہ انٹرنیٹ پر رابطوں کے ذریعے انتہا پسندی کی طرف مائل ہوئی تھی اور داعش میں شامل ہونے کے لئے گھر سے چلی گئی ہے۔ تاہم اس کے اہل خاندان کے لئے اس بات کو تسلیم کرنا آسان نہیں تھا۔ لیکن چند روز بعد ہی سوشل میڈیا کے ذریعے نورین نے اپنے خاندان کو پیغام بھیجا کہ ’وہ خیریت سے ہے اور خلافت کی مملکت میں پہنچ گئی ہے۔ اس لئے اس کے بارے میں پریشان نہ ہوں‘۔ اس پیغام کے بعد بھی یہ بے یقینی موجود تھی کہ شاید نورین کسی سانحہ کا شکار ہو گئی ہو اور یہ پیغام درست نہ ہو۔ تاہم آج لاہور میں دہشت گردوں کے ساتھ اس کی گرفتاری نے سارا معاملہ صاف کردیا ہے۔

لاہور میں کی جانے والی فوجی کارروائی میں مارا جانے والے شخص کا نام طارق علی بتایا گیا ہے اور خیال ہے کہ نورین سوشل میڈیا پر اسی کے ذریعے داعش سے متاثر ہوئی۔ یہ بھی کہا جارہا ہے کہ نورین نے اس شخص سے شادی کرلی تھی اور وہ دونوں مل کر اب پاکستان میں دہشت گردی منظم کرنے کی کوشش کررہے تھے۔ اس واقعہ سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ نہ صرف داعش پاکستان میں متحرک ہے اور اپنے ایجنٹوں کے ذریعے یہاں تخریب کاری منظم کرنے کی کوششیں کررہی ہے بلکہ اس کا سوشل میڈیا کا پروپگنڈا نیٹ ورک بھی مستحکم ہے جو نوجوانوں کو اپنے جال میں پھنسانے کے لئے مؤثر طریقے سے کام کررہا ہے۔ یہ صورت حال صرف داعش کی کامیابی کا پیغام نہیں دیتی بلکہ اس سے ملک کے تعلیمی نظام اور گھرں کے ماحول کی ناکامی کا پتہ بھی چلتا ہے۔

تین روز قبل مردان کی عبدالولی خان یونیورسٹی میں نوجوان طالب علم مشعل خان کا بے رحمی سے قتل بھی اس بات کی خبر دیتا ہے کہ ملک کے تعلیمی ادارے طالب علموں کو مہذب اور قانون کا رکھوالا بنانے میں ناکام ہو رہے ہیں۔ یہ دونوں واقعات ملک کے حکمرانوں کے لئے ایک سنگین وارننگ کی حیثیت رکھتے ہیں ۔ پاکستان میں دہشت گردی کے خلاف جو جنگ لڑی جا رہی ہے ، اسے صرف لوگوں کو مار کر یا جیلوں میں ڈال کر نہیں جیتا جا سکتا۔ اس کے لئے تعلیمی نظام میں دوررس اصلاحات کی ضرورت ہے تاکہ نوجوانوں کو ایک مہذب معاشرے کی تعمیر میں کردار ادا کرنے کے قابل بنایا جا سکے۔ حکومت اگر موجودہ نظام میں موجود اس کمزوری کو سمجھنے میں ناکام رہتی ہے اور اصلاح احوال کے لئے فوری مؤثر اقدامات نہیں کئے جاتے تو ایک کے بعد دوسرا فوجی آپریشن شروع کرنے سے نتائیج حاصل نہیں کئے جا سکتے۔

عبدالولی خان یونیورسٹی میں جن نوجوانوں نے مشعل خان کو توہین مذہب کے شبہ میں بے دردی سے ہلاک کیا، وہ اسے بہت بڑی نیکی کا کام سمجھ رہے تھے۔ اسی مزاج کے نوجوان کل کو اس ملک میں ذمہ دار عہدوں پر فائز ہوں گے۔ اسی طرح نورین ایک اعلیٰ تعلیم یافتہ خاندان سے تعلق رکھنے اور خود اعلیٰ تعلیم حاصل کرتے ہوئے ، پروپیگنڈا سے گمراہ ہو کر یہ سمجھتے ہوئے داعش میں شامل ہوئی اور دہشت گردی پر تیار ہوگئی کہ یہ راستہ ہی دراصل دین کا راستہ ہے۔ اس صورت میں حکومت اور ملک کے دینی رہنما خواہ کہتے رہیں کہ یہ گمراہی کا راستہ ہے ، جب تک اس صورت حال کو تبدیل کرنے کے لئے عملی اقدامات نہیں کئے جاتے، اور جب تک دین کے نام پر قتل و غارتگری کو جائز قرار دینے کے پیغام کے بارے میں قومی مزاج تبدیل نہیں ہو گا، ملک کو دہشت گردی اور مذہبی انتہا پسندی سے محفوظ کرنا ممکن نہیں ہوگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

زمرہ جات:  
ٹیگز:   تخت لاہور ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)