چینی باشندوں کی مخبری کس نے کی ؟

گیس پائپ لائن پر پاکستان کے جواب کا انتظار کررہے ہیں: ایرانی وزیر تیل

نواز شریف بہت خطرناک کھیل کھیل رہے ہیں: خورشید شاہ

سعودیہ، مغربی صحافیوں کو خریدنا چاہتا ہے

حج سیکورٹی اسرائیلی کمپنی کے ہاتھ

نوازشریف آؤٹ، کلثوم نواز ان

دہشت گردی، برقع اور مسلمان

قطر کا سعودی ائیر لائنز کی حج پروازوں کو دوحہ میں اُترنے کی اجازت دینے سے انکار

سپیکر قومی اسمبلی کا جسٹس آصف سعید کیخلاف ریفرنس ایک معمہ, اصل کہانی سامنے آگئی

استعفے کی وجوہات بیان کیں تو پارٹی کو نقصان ہوگا، چوہدری نثار

 کیا بھارت محمود اچکزئی کو خرید چکا ہے؟

حیدرآباد سے ایک اور لڑکی داعش میں شامل

بحرین کے بارے میں امریکی وزیر خارجہ کی باتیں کس حد تک سنجیدہ ہیں؟

راحیل شریف پاکستان میں 3 سالہ حکومت قائم کرکے احتساب کریں گے: پاکستانی میڈیا

نواز شریف اور اہل خانہ کا نیب کے سامنے پیشی سے انکار توہین عدالت ہے: علامہ ناصر عباس جعفری

ایران اور عراق کے مشترکہ مفادات کے خلاف موقف اختیار نہیں کریں گے: مقتدی صدر

وزیرآباد میں آج ہونے والا نواز شریف کا جلسہ کیوں منسوخ کر دیا گیا؟

چودھری نثار، پرویز رشید کی لفظی جنگ نے لیگی قیادت کو پریشان کر دیا

تفتان بارڈر پر زائرین کیساتھ بدترین سلوک انسانیت کی تذلیل اور ناقابل برداشت ہے

عراقی وزیر اعظم نے تلعفر کو آزاد کرانے کا حکم صادر کردیا

امریکا میں نسل پرستی کے خلاف ہزاروں افراد کی ریلی، پولیس سے جھڑپیں

شریف خاندان آج بھی نیب میں پیش نہ ہوا

پاکستان امریکہ کا کوئی ڈومور مطالبہ قبول نہیں کرے گا

سعودی حکومت یمن جنگ میں اپنا سب کچھ داؤ پر لگانے کے باوجود شکست سے دوچار ہے

سعودی عرب نفسیاتی محاصرے سے باہر نکلنے کے لئے اب عراق کا سہارا لے رہا ہے

شریف برادران کی فطرت میں ہے کہ وہ سیدھی بات کرنے والےکو پسند نہیں کرتے

مسجد اقصیٰ آج بھی جل رہی ہے!

شام،لبنان تعلقات لازوال ہیں، شام پر صہیونی جارحیت کے امکان کو رد نہیں کیا جاسکتا: شامی سفیر

دہشتگردی کا کسی بھی نسل یا مذہب سے کوئی تعلق نہیں: ایران

امریکہ اور اس کے اتحادی ممالک نے دہشت گردوں کو کیمیائی ہتھیار فراہم کئے

نوازشریف نے آئین و قانون کے خلاف علم بغاوت بلند کردیا ہے: شیخ رشید

عمران خان کے خلاف توہین عدالت کی باضابطہ کارروائی شروع کرنے کا فیصلہ

دبئی کے حکام کی ابوظہبی سے آزادی کے لئے منصوبہ بندی شروع

سپین میں دولت اسلامیہ کی دہشت گردی

مقبوضہ کشمیر کوفلسطین بنانے کی سازش

بدلتے پاکستان کی مزاحمت

قطری حاجیوں کی سلامتی کے معاملے پر تشویش ہے: شیخ محمد بن عبدالرحمان ثانی

میڈرڈ سے مانچسٹر تا بارسلونا: دہشت گردانہ واقعات کا سلسلہ

سعودی عرب کی قطر پر مہربانی کا آغاز کیوں ہوا؟

ن لیگ کے حوالے سے مولانا فضل الرحمان کا فیصلہ

خاص خبر: ڈان لیکس پر فارغ پرویز رشید کے سنسنی خیز انکشاف

سعودی بادشاہ کے خرچ پرقطری شہریوں کے حج کی مخالفت

ہارٹ اٹیک سے 1 ماہ قبل سامنے آنے والی علامات

زائرین کی توہین ناقابل برداشت عمل ہے حکومت و ریاستی ادارے پاکستانی زائرین کے مسائل حل کریں: شیعہ علماء کونسل پاکستان

اعلیٰ عدلیہ کے فیصلے پر نواز شریف کا واویلا چور مچائے شور کے مصداق ہے: علامہ ناصرعباس جعفری

شایک اور نیو لبرل نواز شریف کا طبلچی – عامر حسینی

شکریہ پاکستانی حکمرانوں : ہر پاکستانی تقریباً 95,000 روپے کا مقروض ہے، وزارتِ خزانہ

پاکستان نے پاک ایران سرحد پر گیٹ تو تعمیرکر دیا لیکن زائرین کی مدد کے حوالے سے کچھ نہ ہو سکا

مجھے کیوں نکالا گیا؟

شفقنا خصوصی: امریکہ تحریک کشمیر کو دبانے کے لیے کس طرح بھارت کی مدد کر رہا ہے؟

یمن جنگ طویل ہونے کی اصل وجہ، منصور ہادی ہیں

میرا ساتھ دو میں انقلاب لاؤں‌گا

قطر اور سعودی عرب کے درمیان گذشتہ 6 برس سے جاری جنگ کہاں لڑی جا رہی ہے؟

زرداری نواز مڈھ بھیڑ اور بیچاری جمہوریت

بارسلونا میں دہشت گردی، داعش نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی

نوجوان داعش سے منسلک تنظیموں سے بہت زیادہ محتاط رہیں، سربراہ پاک فوج

حزب المجاہدین کو دہشت گرد تنظیم قراردینے پرپاکستان کی مایوسی

مسئلہ کشمیر اور مودی کی سیاست

چوہدری نثار کے پارٹی کے قائم مقام صدر کے انتخاب کے طریقہ کار پر شدید تحفظات

نواز شریف اور ان کے خاندان کو آئندہ سیاست میں نہیں دیکھ رہا: آصف زرداری

ترکی اور ایران کی عراقی کردستان میں ریفرنڈم کی مخالفت

آل شریف کا اقتدار اور پاکستان کی سلامتی کولاحق خطرا ت

 خفیہ ڈیل: کیا ن لیگ آصف زرداری کو صدر بنا رہی ہے؟

ظہران، سعودی عرب میں موجود مذہبی تضادات کا منہ بولتا ثبوت

جماعت الدعوہ کا سیاسی چہرہ

ٹرمپ نے امریکا میں نسل پرستی کی آگ پر تیل چھڑک دیا

چین اور بھارتی افواج میں جھڑپ، سرحد پر شدید کشیدگی

ماڈل ٹاؤن کیس میں شریف برادران کو ہر صورت پھانسی ہو گی: طاہرالقادری

کیا سعودیہ یمن جنگ سے فرار کا رستہ ڈھونڈ رہا ہے؟

نوازشریف کاسفر لاہور

پاکستان میں جاری دہشتگردی کا تعلق نظریے سے نہیں بلکہ پیسوں سے ہے۔ وزیراعلی بلوچستان

2017-06-15 07:28:35

چینی باشندوں کی مخبری کس نے کی ؟

two

 

اخبارت میں وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثار کی میڈیا بریفنگ کی یہ خبرسامنے آئی ہے جس میں بتایاگیا کہ کوئٹہ سے اغواء ہونے والے دوچینی باشندے بزنس کے بہانے پاکستان ضرورآئے مگروہ یہاں تبلیغی سرگرمیوں میں مصروف تھے۔

 

وزیرداخلہ کا کہناتھاکہ ‘ بیجنگ میں پاکستانی سفارتخانہ سے بزنس ویزا حاصل کرنے کے بعد دو مغوی چینی باشندوں سمیت چینی شہریوں کے ایک گروپ کو ویزے جاری کئے گئے تاہم کسی قسم کی بزنس سرگرمیوں میں مصروف ہونے کی بجائے یہ کوئٹہ چلے گئے اور ایک کورین شہری یوآن وون سیو سے اردو زبان سیکھنے کی آڑ میں درحقیقت تبلیغ میں مصروف ہوگئے تھے۔’

دونوں افراد، ایک چینی مرد اورایک خاتون، 24مئی کو کوئٹہ کے علاقے جناح ٹاون سے اغواء کئے گئے تھےجس کے بارے میں عام خیال یہ ہے کہ یہ مارے گئے ہیں۔ اس ماہ 5جون کودوچینی باشندوں کی بازیابی کے لئے مستونگ میں آپریشن بھی کیاگیا، جس میں کئی دہشت گردوں کومارنے کے دعوے توکئے گئے مگرچینی باشندوں کوبازیاب نہ کرایاجاسکا۔ روزنامہ آزادی کوئٹہ کے مطابق داعش نے اپنے ویب سائٹ اعماق پر دعوی کیاہے کہ دونوں چینی باشندوں کواغواء کاروں نے قتل کردیاداعش سے منسلک گروپ نے مبینہ طورپرقتل کی ذمہ داری قبول کرلی۔ داعش نے دعوی 8جون کوکیا۔ جس کے ایک دن بعد چینی امورخارجہ نے تسلیم کیاکہ اسے پاکستانی حکام سے پتہ چلاہے کہ دوچینی باشندوں کے بارے میں امکان ہے کہ وہ مارے گئے ہیں لیکن کوئی تفصیلات فراہم نہیں کیں گئیں۔ کچھ دن قبل مستونگ آپریشن میں بھی داعش ہی نشانہ پرتھی، اس آپریشن میں اس کاہیڈکواٹر، انفراسٹرکچر اورمتعدد دہشت گردمارنے کے دعوے کئے گئے۔ بظاہرحکومتی آپریشن اور داعش کی طرف سے چینی باشندوں کے مارے جانےسے پتہ چلتاہے کہ اغواء میں داعش یا اس سے منسلک گروہ کا ہاتھ نظرآتاہے۔ کوئٹہ کے اردگرد کے علاقہ میں داعش اورپاکستانی ریاستی اداروں میں جنگ حالیہ دنوں میں شدت اختیارکرگئی۔ مئی میں داعش نے سینٹ کے ڈپٹی چیرمین عبدالغفورحیدری پرخودکش حملہ کی ذمہ داری قبول کی جس میں 25افراد ہلاک ہوئے۔ حکومت کی طرف سے جوابی آپریشن میں 12 داعش دہشت گردوں کومارنےکا دعویٰ کیاگیا۔ ایسالگتاہے چینی باشندوں کی موت اس کابدلہ تھا۔

 

 

ایک اہم سوال یہ ہے کہ پاکستانی ریاست کواس کاادارک ا ب ہواہے کہ چینی باشندے بزنس کے بجائے تبلیغی سرگرمیوں میں مصروف تھے۔ ایک اہم معاملہ یہ ہے کہ کوریاسے تعلق رکھنے والا کوئٹہ میں چینی گروپ کامیزبان تھا۔ وائس آف امریکہ کے مطابق چینی باشندوں کا ایک گروپ، جس میں ہلاک کیے جانے والا چینی جوڑا بھی شامل تھا، بزنس ویزے پر پاکستان میں داخل ہوا۔ لیکن کاروباری سرگرمیوں میں حصہ لینے کی بجائے وہ کوئٹہ چلے گئے اور وہاں انہوں نے اردو زبان سیکھنے کی آڑ میں تبليغ کا کا م شروع کردیا۔ کوریا کا ایک باشندہ جو کوئٹہ میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کی ایک کمپنی چلا رہا تھا، چینی گروپ کا میزبان تھا۔ ایک اوررپورٹ کے مطابق یہ 2چینی باشندے ایک مقامی مسلمان کمیونٹی میں تبلیغ کررہے تھے۔ یہ دونوں 13رکنی عیسائی تبلغی گروپ کے ممبرتھے جس کی سربراہی ایک کوریائی باشندہ کررہاتھا۔ لیکن ان دوچینیوں کے علاوہ دیگر کی بات اس لئے قرین القیاس ہے کہ ایک چینی خاتون اغواء کاروں کے ہتھے نہیں لگی اوراس ہنگامہ میں اغواء ہونے سے رہ گئ ۔

 

 

ہندوستان ٹائمز کے مطابق چینی میڈیا قتل کاالزام کوریاکی مشنری (تبلیغی) این جی اوزپرعائد کررہی ہے۔ کوریائی باشندے کے بارے میں بھی اب تک واضح نہیں کہ اس کاتعلق شمالی یاجنوبی کوریاسے تھا۔ یہ بہت حیران کن ہے کہ کوریائی اورچینی باشندے ایک ایسے خطے میں عیسائیت کی تبلیغ کررہے ہیں جوکہ افغان طالبان کاہیڈکوارٹرسمجھاجاتاہے جوکوئٹہ شوری کے نام سے جاناجاتاہے اورقریب کچلاک ہے۔ اس کےساتھ ہی یہاں حال ہی میں داعش کے سرگرم ہونے کی اطلاعات گردش کررہی ہیں۔

 

 

کوئٹہ اورارگردکے علاقہ میں لشکرجھنگوی ایک بہت ہی خطرناک فورس سمجھی جاتی ہے۔ یہی نہیں بلکہ چینی، کوئٹہ میں بلوچ شدت پسندوں کا بھی نشانہ بن سکتے ہیں۔ ان تمام خطرات کے باوجود کوریائی اورچینی باشندوں کی طرف سے این جی اوز کے ذریعے سے عیسائیت کی تبلیغ کی جارہی تھی؟ البتہ یہ واضح نہیں کہ ان کی تبلیغی سرگرمیوں کانشانہ کون ساقومیتی یا لسانی گروہ تھا؟ کیونکہ کوئٹہ میں پشتون، بلوچ، ہزارہ اوربروہی کے علاوہ پنجابی اورصوبہ کے پی کے لوگ بھی آبادہیں۔

 

 

اگرچہ وزارت داخلہ کہتی ہے کہ یہ اب چنی باشندوں کوویزوں کی اجراء کوسخت بنارہی ہے اوراس کی کڑی نگرانی ہوگی۔ پچھلے سال 2016میں پاکستان نے کم ازکم 70ہزارچینی باشندوں کوویزے جاری کئے تھے۔ جہاں سی پیک ودیگرسرمایہ دارانہ منصوبوں کی وجہ سے چینی پاکستان میں بڑی تعدادمیں آرہے ہیں، وہاں ابھرتی ہوئی اسلامی تنظیموں اوربلوچ علیحدگی پسندوں کی کاروائیوں میں اضافہ بھی دیکھنے میں آیاہے۔ حالیہ دنوں میں اس میں ایک دم شدت پیداہوگئی جوپاکستانی ریاست کے لئےتشویش کاباعث ہے۔

 

 بلوچستان واحد خطہ ہے جہاں پاکستانی اداروں کواسلام پرستوں کے ساتھ علیحدگی پسندوں سے نمٹناہے۔ یہ اس کے آپریشن کومشکل تربنادیتاہے۔ بہت ساری سازش تھیوریوں میں سے ایک یہ ہے کہ پاکستان کی خفیہ ایجنسیاں علیحدگی پسندوں کی تحریک کوکمزورکرنے کے لئے اسلامی تحریکوں کی حوصلہ افزائی کررہی ہیں۔ جس میں زیادہ حقیقت نظرنہیں آتی۔ شدت پسند اسلامی تحریک قوم پرست تحریک کی مشکلات اوراصلاح پسند تحریک کی قیمت پرآگے بڑھ سکتی ہیں۔

 

 

اگرچہ چینی باشندوں کی موت نے چنیوں کے لئے پاکستان میں خطرات کی گھنٹی بجادی ہے۔ اوریہ علیحدگی پسندوں کے ساتھ داعش جیسی اسلام پرستوں کے نشانہ پرہوسکتے ہیں۔ البتہ داعش کے دعووں سے اس عزم کااظہارکا پتہ لگانامشکل ہےکہ یہ آئندہ بھی چینیوں کونشانہ بنائیں گے یا ان کا نشانہ یہ چینی گروہ اس لئے بناکہ یہ عیسائیت کی تبلیغ میں مصروف تھے۔ یہاں سب سے اہم سوال یہ پیدا ہوتاہے کہ کوریائی اورچینی باشندوں کے بارے میں یہ خبرکیسے لیک ہوئی کہ یہ تبلیغی سرگرمیوں میں ملوث تھے؟

 

 

 اوراس سے بھی اہم یہ کہ ریاستی اداروں سے پہلے یہ خبر داعش تک کیسے پہنچی؟ ان کے دائرہ کارمیں کون لوگ آئے تھے اوران کے ہاتھوں کسی نے عیسائیت قبول کیاتھا یانہیں؟ یہ سوالات ابھی جواب طلب ہیں۔ اورمزید تحقیات سے سامنے آںے ہیں۔

 

سرتاج خان

 

 

 

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

جذام سے بھی بدتر مرض

- اسلام ٹائمز