کیا سیاستدانوں کے بعد ججوں اور جرنیلوں کا احتساب بھی ممکن ہے؟

ایسا برا ملک دنیا میں نہیں، کبھی امریکا نہیں جاؤں گا: فلپائنی صدر

یورپی ممالک پر ڈیڑھ سو سے زائد خودکش حملوں کا خطرہ

شریف خاندان تاثر دے رہا ہے کہ میرا اور ان کا کیس ایک ہے: عمران خان

’’میاں صاحب جانے دو شہباز شریف کو آنے دو‘‘ کے بینرلگ

کیا چوہدری نثار ن لیگ کو چھوڑ دیں گے؟

نیتن یاہوکا بیت المقدس کو یہودی بنانے کا منصوبہ

 جو قطر کے ساتھ ہوا وہ باقی ملکوں کے ساتھ بھی ہوسکتا ہے؛ سعودی ولی عہد کی دھمکی

(ن) لیگ کی چوہدری نثار کو منانے کی کوششیں تیز

وزیراعظم کےخلاف عدالتی کارروائی سے جمہوریت کو کیا خطرہ ہے!

مشرق وسطیٰ میں مصالحت کے امکانات

شام اور حزب اللہ کی لبنانی سرحد کے قریب دہشتگرد گروہ النصرہ کے ٹھکانوں پر کارروائی

پاناما کیس کا اونٹ کس کروٹ بیٹھے گا؟

سعودی عرب ام الفساد اور دہشت گردی کی جڑ ہے

پاکستان بھر میں جاری شیعہ نسل کشی کے خلاف مظاہرے

قطر نے گھٹنے ٹیک دیے؟ سعودی عرب سے مذاکرات کا اعلان

نواز شریف رات تک مستعفی ہونے کا فیصلہ کرلیں: خورشید شاہ

نوازشریف اس بار قدم نہیں بڑھائیں گے

امریکی طوطا چشمی: کیا خارجہ پالیسی پر تجدید نظر کا وقت نہیں آ گیا؟

کیا پاکستان کے لئے ایک امام خمینی کی ضرورت ہے؟

مستعفی ہونے سے انکار: کیا وزیر اعظم کو اپنے ہی گھر پر اعتماد نہیں؟

پنجاب حکومت دہشتگردوں کیخلاف بننے والی سی ٹی ڈی کو اپنے شیطانی عزائم کیلئے استعمال کر رہی ہے: سید ناصرعباس شیرازی

علاقہ بنگش کے شیعہ علمائے کرام کیخلاف ایف آئی آرز کا اندراج قانون کیساتھ مذاق ہے: علامہ عبدالحسین

ٹرمپ سے اختلافات کے باعث وائٹ ہاؤس کے ترجمان عہدے سے مستعفی

وزیر داخلہ چوہدری نثار کے استعفیٰ دینے کی خبر بے بنیاد ہے: وزارت داخلہ

پاکستان میں اب بھی وہابی دہشت گرد فنڈز جمع کررہے ہیں

سعودی عرب میں سیاسی مخالفین کو ٹھکانے لگانے کا اعتراف

دنیا میں 94 فیصد دہشت گردانہ واقعات میں سعودی عرب ملوث

سعودی عرب کی ایرانی سفارتکاروں کے خلاف کویت کے اقدام کی حمایت

گردے کی پتھری سے بچنے کے آسان طریقے

پاناما معاملہ؛ (ن) لیگ کا سپریم کورٹ کا ہر فیصلہ تسلیم کرنے کا فیصلہ

ایران واحد وہ ملک ہے جو امریکہ کے مد مقابل ہے: جنرل اسلم بیگ

داعش میں شمولیت کا اانجام: کارکنوں کو اپنے ہی خاندانوں کو قتل کرنے کا حکم

امریکی و روسی صدور کے درمیان دو خفیہ ملاقاتیں، کب، کہاں ،کیسے اور کیوں ہوئیں؟

ایرانی سفیر ملک بدر: کیا کویت سعودی دباؤ کے سامنے جھک گیاہے؟

کیا پاکستان میں شیعہ ہزارہ کے لیے کہیں‌جائے اماں ہے؟

مسجدالاقصی پر اسرائیل کا کوئی حق نہیں، حماس

امریکہ کا پاکستان پر طالبان اور حقانی نیٹ ورک کے خلاف کارروائی نہ کرنے کا الزام

تحریک انصاف نے پی پی کی ایک اوروکٹ گرا دی

اسلامی دنیا کو اسرائیلی غاصب کے اقدامات پر ردعمل ظاہر کرنا چاہئے

عالم اسلام میں حضرت امام جعفر صادق (ع) کی شہادت کی مناسبت سے عزاداری کا سلسلہ جاری

بی جے پی رہنما رام ناتھ کووند بھارت کے نئے صدر منتخب

ہمارا احتساب نہیں استحصال ہورہا ہے میرے صبر کا امتحان نہ لیا جائے: وزیراعظم نواز شریف

بارڈر تناذع: کیا بھارت چین کے ساتھ جنگ مول لینے کی غلطی کر سکتا ہے؟

نواز شریف کے حلیف سے حریف تک:  پیپلز پارٹی نے نواز شریف کو ہری جھنڈی کیوں دکھائی؟

آپریشن خیبر فور کی مخالفت: کیا افغانستان دہشت گردوں کی حمایت کر رہا ہے؟

پاکستانی سیاست میں اخلاقیات کا ہتھیار

آیۃ اللہ سیستانی کے فتوے نے عراق کے عیسائیوں کو نجات دلائی: جورج صلیبا

داعش نے عالم اسلام کو جتنا نقصان پہنچایا ہے اسلامی تاریخ میں اس کا سراغ نہیں ملتا

مشرق وسطی میں بحران کی آگ بھڑکانے کے پیچھے سعودی عرب کا مقصد ہے کیا ؟

امام صادق علیہ السلام کی مختصر سوانح حیات

صادق آل محمد، جعفر صادق(ع) کی شب شہادت

قطری شہزادے کا ایک اور خط سامنے آگیا

لندن فلیٹوں کا مالک کون ہے؟ نئی دستاویز منظر عام پر آگئی

بحرین میں نئے فیملی قوانین فقہ جعفریہ کے تشخص اور فقہی احکامات کے منافی ہیں: علمائے کرام

یمن میں ہیضے سے مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ

امریکہ عہد شکن اور عرب ڈکٹیٹروں کا حامی ملک ہے: حسن روحانی

پاناماکیس میں دفاع کے لئے شریف فیملی نے اہم دستاویزات منگوا لیں

وکلا کا ہیر پھیر کاغذ کی کشتی کو ڈوبنے سے نہیں بچا سکتا: سراج الحق

امریکا نے ایران کی 18 شخصیات اور کمپنیوں پر نئی پابندیاں عائد کر دیں

وائٹ ہاؤس کا ٹرمپ اور پیوٹن میں خفیہ ملاقاتوں کا اعتراف

مستونگ میں دہشت گردوں کی فائرنگ سے 4 شیعہ مسلمان شہید

شریف خاندان کی منی ٹریل کا جواب آج تک نہیں آیا: سپریم کورٹ

بحرینی حکمرانوں کی اسرائیل دوستی ایک بار پھر بے نقاب

سی پیک کے خلاف عالمی سازشیں کہاں سے ہو رہی ہیں ؟

قطر کے وزیر خارجہ کا دورہ: کیا نواز شریف کو کچھ لو کچھ دو کا پیغام بہنچایا گیا ہے؟

کیا پاکستان راحیل شریف کی وطن واپسی کی راہ ہموار کر رہا ہے؟

امریکی صدر کے لئے ریڈ کارپیٹ نہیں پچھائیں گے: میئر لندن

یمن تنازع پر سعودی عرب سے براہ راست تصادم کا خطرہ نہیں، ایران

پنجاب کے وزیر محکمہ مال عطا مانیکا نے استعفیٰ کیوں دیا؟

قطر کے وزیر خارجہ کی وزیر اعظم سے ملاقات، پاکستان اور قطر کے درمیان برادرانہ تعلقات ہیں

2017-07-15 08:29:33

 کیا سیاستدانوں کے بعد ججوں اور جرنیلوں کا احتساب بھی ممکن ہے؟

SONY DSC

 

پاکستان میں سیاسی بحران سنگین ہوتا جا رہا ہے۔ وزیرِ اعظم نواز شریف نے مستعفی ہونے سے انکار کردیا ہے جب کہ حزبِ اختلاف کی جماعتیں اس بات پر بضد ہیں کہ وزیراعظم کو اب اپنا استعفیٰ پیش کر دینا چاہیے۔

 

حکومت کی اتحادی جماعتوں نے نواز شریف کو یقین دہانی کرائی کہ وہ ان کے ساتھ کھڑے رہیں گی جب کہ نواز شریف کے قریبی ساتھیوں نے بھی انہیں مشورہ دیا کہ وہ استعفیٰ نہ دیں۔ دوسری طرف پی ٹی آئی کے رہنما بابر اعوان نے نہ صرف نواز شریف بلکہ شہباز شریف اور اسحاق ڈار کے استعفوں کا بھی مطالبہ کر دیا ہے اور کہا کہ وہ نیا وزیرِ اعظم نہیں بلکہ نئے الیکشن چاہتے ہیں۔

 

حزبِ اختلاف کی جماعتوں کے علاوہ وکلاء برادری بھی اب نواز شریف کے استعفے کا مطالبہ کر رہی ہے، جس کی وجہ سے کئی تجزیہ کار یہ کہہ رہے ہیں کہ ملک سنگین سیاسی بحران کی طرف بڑھ رہا ہے اوراس کے جلدی ختم ہونے کے کوئی امکان نہیں۔

 

معروف سیاسی مبصر عائشہ صدیقہ نے اس مسئلے پر اپنی رائے دیتے ہوئے ڈوئچے ویلے کو بتایا، ’’ملک سنگین بحران سے گزر رہا ہے۔ حکومت مفلوج ہوکر رہے گئی ہے۔ نوکر شاہی نے کام بند کیا ہوا ہے۔ کوئی بڑا فیصلہ نہیں ہو پا رہا اور آنے والے دنوں میں اس بحران میں شدت آئے گی۔ مسئلہ سپریم کورٹ میں جائے گا اور ملک میں ایک بار پھر دھرنوں اور احتجاج کی سیاست شروع ہو جائے گی۔‘‘

 

انہوں نے کہا نوازر شریف کو کرپشن کی وجہ سے ہٹانے کی کوشش نہیں کی جا رہی ہے، ’’مسئلہ یہ ہے کہ نواز نے آرمی کو ناراض کیا ہے اور آرمی اس کو نکالنا چاہتی ہے۔ اگر مسئلہ صرف کرپشن کا ہی ہوتا تو آصف زرداری یا دوسرے لوگوں کو پکڑا کیوں نہیں جاتا۔ حقیقت یہ ہے کہ کرپشن آرمی کی سیاست میں مداخلت کی وجہ سے بڑھی ہے۔ اسٹیبلشمنٹ کرپٹ لوگوں کو آگے بڑھاتی ہے اور ان کو کرپشن کی وجہ سے اپنے کنڑول میں بھی رکھتی ہے تاکہ انہیں کسی وقت بھی خریدا جا سکے‘‘۔

 

ان کے خیال میں اب ن لیگ لڑے گی اور وقت کو بھی طول دے گی،’’لیکن ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ نون لیگ نے پی پی او اور سائبر کرائم جیسے قوانین بنا کر خود فوج کو مضبوط کیا ہے۔ انہیں اس وقت لڑنا چاہیے تھا جب یہ قوانین بن رہے تھے۔‘‘۔

 

ایسٹیبلشمنٹ مخالف سمجھی جانے والی جماعتیں بھی حکومت کے حق میں بولتی ہوئی نظر آتی ہیں۔ عوامی نیشنل پارٹی نے حزبِ اختلاف سے اپیل کی ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کا انتظار کیا جائے جب کہ پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے رہنما محمود خان اچکزئی نے متنبہ کیا ہے کہ جمہوریت کی بساط لپیٹنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

 

 اچکزئی کی پارٹی کے ایک مرکزی رہنما عثمان کاکڑ نے موجودہ صورتِ حال پر اپنا موقف دیتے ہوئے ڈوئچے ویلے کو بتایا، ’’کرپشن کے حوالے سے صرف سیاست دانوں کا ہی احتساب نہیں ہونا چاہیے بلکہ جو جج ، بیوروکریٹ اور جنرل کرپشن میں ملوث ہیں، ان کا بھی احتساب ہونا چاہیے۔ اگر کرپشن کی آڑ میں جمہوریت پر شبِ خون مارا گیا تو ہماری پارٹی اس کے خلاف سخت مزاحمت کرے گی‘‘۔

 

پیپلز پارٹی کے رہنما تاج حیدر نے موجودہ سیاسی بحران پر اپنی رائے دیتے ہوئے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ’’نون لیگ کے مستقبل کا انحصار اس بات پر ہے کہ نواز شریف صورتِ حا ل پر کیسے ردِ عمل ظاہر کرتے ہیں اور کیسے اس سے نمٹنے کی تدبیر کرتے ہیں۔ بلاول بھٹو تو اس حوالے سے کہہ چکے ہیں کہ نواز شریف کو خود چلے جانا چاہیے بجائے اس کے انہیں بھیجا جائے۔ میرے خیال میں میاں صاحب کو چلے جانا چاہیے اور اگر سپریم کورٹ ان کو الزامات سے بری الذمہ قرار دیتی ہے تو وہ پھر واپس آجائیں۔ ہم نے یہ مشورہ جے آئی ٹی بننے سے پہلے بھی میاں صاحب کو دیا تھا‘‘۔

 

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا، ’’پیپلز پارٹی کا خیال ہے کہ سیاست دانوں کے احتساب کا اختیار ججوں یا بیورکریٹس کو نہیں ہونا چاہیے۔ جب پانامہ سامنا آیا، تو ہم نے سیاست دانوں کے کرپشن کے حوالے سے قوانین بنانے کی کوشش کی تھی لیکن ن لیگ نے اس کو کامیاب نہیں ہونے دیا۔ ہمارے خیال میں میاں صاحب کے خلاف پارلیمانی کمیٹی کو انکوائری کرنی چاہیے تھی‘‘۔

 

ان کا کہنا تھا ملک میں شدید سیاسی بحران ہے،’’جب کبھی بھی ملک میں سیاسی عدم استحکام پیدا ہوتا ہے یا کوئی سیاسی بحران آتا ہے تو اس کا فائدہ غیر جمہوری قوتوں کو ہوتا ہے اور سیاست دانوں کا اس میں نقصان ہوتا ہے۔ موجودہ حالات میں جمہوریت کو خطرہ ہو سکتا ہے کیونکہ غیر جمہوری قوتیں ایسے ہی مواقع سے فائدہ اٹھاتی ہیں‘‘۔

 

پی ٹی آئی کے سابقہ رہنما جاوید ہاشمی کا کہنا ہے احتساب صرف سیاستدانوں کا ہوتا ہے جبکہ کہ پانامہ لسٹ میں ایک حاضر سروس جج اور جرنیلوں کے نام بھی شامل ہیں ان کا احتساب کیوں نہیں ہوتاکیا ان سے بھی کبھی باز پرس ہو گی؟ کیا سپریم جوڈیشل کونسل نے آج تک کسی جج کو کوڈ آف کنڈ کٹ کے خلاف عمل پر سزا دی ہے ؟  انہوں نے کہا کہ پاکستانی فوج کے بہت سے جرنیل (جہانگیر کرامت ، جنرل پاشا ، جنرل راحیل شریف اور جنرل جہانگیر کرامت وغیرہ ) باہر اربوں کی جائداد کے ما لک ہیں۔۔کوئی ہے جو اس پر سوال اٹھا سکے۔

 

ڈی ڈبلیو

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

جمہوریت اورحکومت

- ایکسپریس نیوز