جی ٹی روڈ کی سیاست: نواز شریف کے لیے بقا کی جنگ – محمد عامر حسینی

قطر اور سعودی عرب کے درمیان گذشتہ 6 برس سے جاری جنگ کہاں لڑی جا رہی ہے؟

زرداری نواز مڈھ بھیڑ اور بیچاری جمہوریت

بارسلونا میں دہشت گردی، داعش نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی

نوجوان داعش سے منسلک تنظیموں سے بہت زیادہ محتاط رہیں، سربراہ پاک فوج

حزب المجاہدین کو دہشت گرد تنظیم قراردینے پرپاکستان کی مایوسی

مسئلہ کشمیر اور مودی کی سیاست

چوہدری نثار کے پارٹی کے قائم مقام صدر کے انتخاب کے طریقہ کار پر شدید تحفظات

نواز شریف اور ان کے خاندان کو آئندہ سیاست میں نہیں دیکھ رہا: آصف زرداری

ترکی اور ایران کی عراقی کردستان میں ریفرنڈم کی مخالفت

آل شریف کا اقتدار اور پاکستان کی سلامتی کولاحق خطرا ت

 خفیہ ڈیل: کیا ن لیگ آصف زرداری کو صدر بنا رہی ہے؟

ظہران، سعودی عرب میں موجود مذہبی تضادات کا منہ بولتا ثبوت

جماعت الدعوہ کا سیاسی چہرہ

ٹرمپ نے امریکا میں نسل پرستی کی آگ پر تیل چھڑک دیا

چین اور بھارتی افواج میں جھڑپ، سرحد پر شدید کشیدگی

ماڈل ٹاؤن کیس میں شریف برادران کو ہر صورت پھانسی ہو گی: طاہرالقادری

کیا سعودیہ یمن جنگ سے فرار کا رستہ ڈھونڈ رہا ہے؟

نوازشریف کاسفر لاہور

پاکستان میں جاری دہشتگردی کا تعلق نظریے سے نہیں بلکہ پیسوں سے ہے۔ وزیراعلی بلوچستان

سعودی شہزادوں کا غیاب: محمد بن سلمان کامخالفین کو پیغام

یوم آزادی پہ تاریخ کے سیاہ اوراق کیوں پلٹے جارہے ہیں ؟

سعودی عرب کا جنگ یمن میں ناکامی کا اعتراف

سعودی عرب اور عراق کا 27 سال بعد سرحد کھولنے کا فیصلہ

ایران کی ایٹمی معاہدہ ختم کرنے کی دھمکی

وہ غذائیں جن کے کھانے سے کمزور بالوں اور گنج پن سے نجات ملتی ہے

گالی سے نہ گولی سے، مسئلہ کشمیر گلے لگانے سے حل ہو گا: نریندر مودی کا اعتراف

سری لنکن کرکٹ بورڈ نے دورہ پاکستان کی منظوری دیدی

امریکہ میں بحران

70 برس کا پاکستان: قومی شناخت کے بحران سے نکلا جائے

چین اور بھارت: روایتی جنگ سے تجارتی جنگ تک

 منفی سیاسی ہتھکنڈے:  کیا نواز شریف سزا سے بچنے کے لیے  اداروں‌کو دھمکانے کی کوشش کر رہے ہیں؟

بھارت اور پاکستان، جنگ کا میدان نصابی کتب

سعودیہ کے بحیرہ احمر پراجیکٹ میں اسرائیلی کمپنی کی مشارکت

برطانیہ میں پیٹرول، ڈیزل گاڑیوں پر 2040 تک پابندی

این اے 120: چہرہ جو بھی ہو جیت نون لیگ کی ہو گی، ضروری نہیں شریف ہو‘

عراق، سعودی عرب اور ایران کے درمیان کشیدگی ختم کرنے میں کردار ادا کرے: سعودی ولی عہد محمد بن سلمان

بے کس پاکستانی زائرین کی چونکا دینے والی تصاویر بے حس پاکستانی حکومت کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت

نااہلی کا متفقہ فیصلہ یوم آزادی پر ٹھنڈی ہوا کا جھونکا ہے: طاہرالقادری

پاکستان میں یوم آزادی روایتی جوش و جذبے سے منایا گیا

امریکہ کی شمالی کوریا کے بعد وینیزویلا کو بھی دھمکی

آئین میں ترمیم کیلیے مسلم لیگ ن کا ساتھ نہیں دے سکتے: بلاول بھٹو زرداری

حیدر العبادی نے بحرینی وزير خارجہ کی درخواست کی رد کر دی

یمنی بحران کا بحرین میں دوبارہ دہرائے جانے کا انتباہ

خیبرپختونخوا حکومت کے خلاف تحریک عدم اتحاد : پاکستان میں انتقامی سیاست کی واپسی

جی ٹی روڈ ریلی: کیا نواز شریف عالمی طاقتوں کو مداخلت کی دعوت دے رہے ہیں؟

پاکستان کا یومِ آزادی 14 یا15 اگست

اب کوئی این آر او (NRO) نہیں بنے گا: شیخ رشید

ایک اور اقامہ سامنے آگیا

جی ٹی روڈ ڈرامہ سپریم کورٹ اور نیب پر دباؤ ڈالنے کیلئے رچایا گیا: عمران خان

آزادی کے 70 سال، قوم خوشی سے سرشار، ہر طرف قومی پرچموں کی بہار

راولپنڈی: شیخ رشید اور پی ٹی آئی کا جلسہ، بارش کارکنوں کا جوش کم نہ کر سکی

عراق اور شام میں امریکہ دہشت گردوں کا اصلی حامی، صہیونیوں کو پہلے سے سخت شکست ہوگی

شمالی کوریا کی دھمکی کی زد میں امریکی جزیرہ گوام ؟

نوازشریف کواب پارلیمنٹ یاد آرہی ہے، حکومت تھی تواسمبلی نہیں آتے تھے: بلاول بھٹو

تصاویر: شہاب کی بارش

میاں صاحب آپ کو اس لیے نکالا گیا کہ۔۔۔۔

ہر فاطمہ کا کیا یہی نصیب ہوتا ہے ؟ – عامر حسینی

بھارتی سرکاری ہسپتال میں آکسیجن منقطع ،60بچے ہلاک

عراق میں نئی خانہ جنگی کیلئےایک اورہولناک منحوس منصوبہ

اسرائیلی ہسپتالوں میں سعودیوں کا علاج

بے بسوں کے درد کو سمجھنے والی ’مدر ٹریسا‘

جی ٹی روڈ کی سیاست: نواز شریف کے لیے بقا کی جنگ – محمد عامر حسینی

سعودی عرب العوامیہ میں حقوق بشر کی رعایت کرے

میں نے اور پورے پاکستان نے نااہلی کا فیصلہ قبول نہیں کیا: سابق نااہل وزیراعظم

ضیا کو پتہ ہوتا کہ انکا روحانی بیٹا 62 اور63 میں پھنسے گا تو وہ اسے ختم کردیتا: خورشید شاہ

عمران خان کے پی کے میں شیعہ ٹارگٹ کلنک کے اتنے ہی جوابدہ ہیں جتنےدیگر صوبوں میں مسلم لیگ ن کے حکمران: ناصر شیرازی

نواز شریف اداروں کےدرمیان تصادم کی سازش سے باز آجائیں: علامہ ناصر عباس جعفری

کوئٹہ میں پشین اسٹاپ کے قریب دھماکا، 17 افراد شہید

قافلہ برائے تحفظ ناموس نواز شریف

ریلی کا پہلا شہید : شرمناک سوچ

2017-08-12 21:09:58

جی ٹی روڈ کی سیاست: نواز شریف کے لیے بقا کی جنگ – محمد عامر حسینی

nawaz_sharif_20130527-640x328-9rN33O

سابق وزیراعظم نواز شریف پانچ رکنی سپریم کورٹ کے جج صاحبان کے متفقہ فیصلے کے نتیجے میں نا اہلی کے بعد پہلی مرتبہ اسلام آباد سے لاہور کی جانب عازم سفر ہیں۔

ان کے اس سفر کو ان کے حامی اور مخالفین دونوں اپنی اپنی نظر سے دیکھ رہے ہیں۔ اس میں شک نہیں کہ نواز شریف کا سفرِ لاہور ایک سوچا سمجھا اور منظم منصوبہ اور بھرپور سیاسی مظاہرہ ہے۔

کہا جاتا ہے کہ نواز شریف کی نااہلی کے بعد مسلم لیگ نواز کی سنٹرل ورکنگ کمیٹی کے ارکان سمیت اہم  پارٹی عہدے داروں سے  مشاورت کا عمل شروع کیا گیا تو لائحہ عمل  کے معاملے پر بڑی تقسیم دیکھنے کو ملی۔

چیف منسٹر پنجاب شہباز شریف، رانا ثنااللہ، چودھری نثار علی خاں اور ان کے قریب سمجھے جانے والے وزرا و لیگی رہنماؤں کا خیال تھا کہ سافٹ رویہ اپنایا جائے، ریویو پٹیشن میں جایا جائے اور حکومت مدت پوری کرے اور ترقیاتی پروجیکٹس مکمل کیے جائیں۔

اس کے برعکس خواجہ آصف، خواجہ سعد رفیق، پرویز رشید، طارق فاطمی، مشاہد اللہ خان، عابد شیر علی، تہمینہ دولتانہ، مریم نواز و دیگر کی رائے میں نواز شریف کو بھرپورعوامی، میڈیائی اور سٹریٹ پالیٹکس کرنی چاہیے اور اسٹیبلشمنٹ کو دباؤ میں لانے کے لیے انٹرنیشنل سطح پر جمہوری طاقتوں کو باور کرایا جائے کہ پاکستان میں سویلین بالادستی اور جمہوریت کو سنگین خطرات لاحق ہیں۔

میاں محمد نواز شریف نے اپنا وزن ’مزاحمتی‘ کیمپ میں ڈال دیا۔

پاناما کیس کے فیصلے کے بعد نواز شریف نے مری میں قیام کے دوران نئے وزیراعظم اور کابینہ کی تقرری جیسے فیصلے کیے اور مزید مشاورت بھی جاری رکھی گئی۔

ان کی اسلام آباد واپسی کے بعد کچھ ایسے واقعات سامنے آئے جس سے اندازہ ہوتا ہے کہ نواز شریف نے نااہلی کے بعد اپنے آئندہ کی سیاست کا رخ متعین کرلیا ہے۔

جب سابق وزیراعظم نواز شریف پنجاب ہاؤس مقیم تھے تو اسی دوران سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کی سابق صدر و سابق چئیرپرسن انسانی حقوق کمیشن عاصمہ جہانگیر کو نیشنل پریس کلب  اسلام آباد کی منتخب باڈی نے میٹ دی پریس پروگرام میں دعوت دی تو عاصمہ جہانگیر نے اس موقعے کو اچھی طرح سے استعمال کیا۔

عاصمہ جہانگیر نے اس پریس کانفرنس میں عدلیہ میں بیٹھے ججز کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ عدالتی ایکٹوازم اور عدالتی احتساب

Across the board

(بلا امتیاز) نہیں ہے۔

انھوں نے ایک بار پھر کہا کہ کہ سیاسی گاڈ فادرز کو تو کان سے پکڑ کر باہر نکالا جاتا ہے لیکن جو دوسرے ’گاڈ فادرز‘ ہیں ان کا احتساب آج تک عدلیہ نہیں کرسکی۔ انھوں نے لینڈ مافیا اور جرنیلوں کے احتساب نہ ہونے کا سوال اٹھایا۔ لیکن اس موقعے پہ انھوں نے نواز شریف کو ایسا مشورہ دیا جو لگتا ہے کہ نواز شریف مان چکے ہیں۔

عاصمہ جہانگیر کا کہنا تھا کہ نواز شریف اسٹیبلشمنٹ سے جیتنا چاہتے ہیں تو انہیں یہ جنگ ’عوامی طاقت‘ کی مدد سے لڑنا ہوگی۔

نواز شریف نے پنجاب ہاؤس میں سول سوسائٹی کے کئی نامور سرگرم رضاکاروں، ملکی سیاست کے بڑے تجزیہ کاروں اور دانشوروں کو خصوصی دعوت دی جس ميں جہاں سیفما کے امتیاز عالم سمیت  کئی ایک نامور لبرل صحافی، دانشور اور سول سوسائٹی کے اہم نام  شریک ہوئے وہیں دائیں بازو کے اور نواز شریف کے قریب سمجھے جانے والے صحافی اور کالم نگار جیسے مجیب الرحمان شامی، عطا الحق قاسمی  وغیرہ بھی شامل تھے۔

اس اجلاس میں میاں محمد نواز شریف کو جن لوگوں نے ڈٹ جانے اور مقابلہ کرنے کا مشورہ دیا، ان میں سب سے نمایاں امتیاز عالم اور مجیب الرحمان شامی تھے۔

سیفما کے سربراہ امتیاز عالم اور روزنامہ پاکستان کے ایڈیٹر مجیب الرحمان شامی نے انتہائی جذباتی اظہار خیال فرمایا اور میاں نواز شریف کو کہا کہ ڈٹ جائیں اور ’لڑائی‘ کو بین الاقوامی حلقوں تک پہنچائیں۔

ادھر ایک نجی ٹی وی چینل پہ معروف صحافی نذیر لغاری کو انٹرویو دیتے ہوئے پاکستان پیپلزپارٹی کے شریک چئرپرسن آصف علی زرداری نے انکشاف کیا ہے کہ ان کو عاصمہ جہانگیر کا ٹیکسٹ میسج ملا ہے کہ وہ ان سے بات کرنا چاہتی ہیں۔

آصف زرداری کا یہ انکشاف ظاہر کرتا ہے کہ نواز شریف نے ان  سے بیک ڈور چینل بات چیت کا راستہ کھولنے کی کوشش شروع کردی ہے۔عاصمہ جہانگیر کا ٹیکسٹ میسج اور فون پہ بات چیت اسی سلسلے کی کڑی تھی۔

نذیر لغاری نے آصف علی زرداری سے عاصمہ جہانگیر کا نام لیے بغیر سوال کیا :

’خاتون وکیل کا کہنا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ ہر 10 سال بعد ایک نیا چہرہ متعارف کراتی ہے؟‘

 آصف علی زرداری کا جواب تھا ’ان خاتون سے یہ پوچھیں کہ جب وہ چہرے متعارف کرائے جاتے ہیں تو کیا وہ اس وقت مخالفت کرتی ہیں؟ کیا نواز شریف کو لائے جانے کے وقت وہ بولی تھیں؟ ہمارے لیے کیس لڑے ہوں تو میں مانوں‘۔

آصف زرداری کی گفتگو سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ وہ عاصمہ جہانگیر کی جانب سے نواز شریف کی موجودہ محاذ آرائی کی سیاست کو ’سویلین بالادستی‘ کی سیاست سمجھنے اور اس سیاست میں ان کے شریک کار بننے کو ٹھیک خیال نہیں کرتے اور نہ ہی وہ عاصمہ جہانگیر کے حالیہ جوش جذبے کو ان کی ماضی کی روش سے ہم آہنگ خیال کرتے ہیں۔

بلکہ انھوں نے بالواسطہ عاصمہ جہانگیر کو یہ جتلایا ہے کہ سویلین بالادستی کے ایشو پہ ان (عاصمہ جہانگیر) کی ترجیحات اور ایکٹوازم سلیکٹو رہا ہے اور ان کا جوش و خروش پاکستان پیپلزپارٹی کے معاملے میں ایسا نظر نہیں آیا جتنا نواز شریف کے معاملے میں نظر آرہا ہے۔

آثار بتاتے ہیں کہ نواز شریف اسٹیبلشمنٹ اور عدلیہ پہ دباؤ ڈالنے کے لیے سول سوسائٹی، وکلا برادری کے لبرل سیکشن اور پیپلزپارٹی جیسی بڑی جماعت سے جس پیمانے پہ تعاون کے خواہاں ہیں اس تعاون کے حصول میں ان کو بڑی مشکلات کا سامنا ہے۔

پاکستان بار کونسل تقسیم ہے اور سپریم کورٹ بار ایسویسی ایشن کے عہدے دار بھی متحد نہیں۔ لاہور ہائی کورٹ بار اور پنجاب بار کونسل میں حالات کافی خراب نظرآتے ہیں۔

پاکستان پیپلزپارٹی کی پالیسی ’تماشا‘ دیکھنے تک محدود ہے جبکہ وہ پاکستان تحریک انصاف سے بھی زرا فاصلہ رکھنا چاہتی ہے۔

نواز شریف ایک ٹی وی چینل سے وابستہ نامور صحافیوں اور سول سوسائٹی کے چند اہم ناموں کے ساتھ مل کر چاہتے ہیں کہ ملک کے اندر اور باہر ان کو ایک بڑے جمہوریت پسند سیاست دان کے طور پہ پروجیکٹ کیا جائے اور عدلیہ پہ بھی زبردست دباؤ پڑے۔

وہ ہاتھ پیر کٹواکے نیب کے ریفرنسز کا سامنا کرنا نہیں چاہتے۔ نیب کے راستے جیل جانے کی بجائے براہ راست لڑکر بطور سیاسی قیدی جیل جانے کے خواہش مند ہیں یا دباؤ ڈال کر آخری انجام سے بچنا چاہتے ہیں۔

پاکستان تحریک انصاف، مسلم لیگ ق، پاکستان عوامی تحریک، جماعت اسلامی، مجلس وحدت المسلمین جیسی جماعتیں نواز شریف کی نااہلی کے بعد ان کی سرگرم سیاست کی فلم کو ڈبے میں بند کرنے کا زور لگارہی ہیں۔

وہ چاہتی ہیں کہ نواز شریف پنجاب کارڈ، اینٹی اسٹیبلشمنٹ محاز آرائی کی سٹریٹ پالیٹکس کا کارڈ استعمال نہ کرسکیں۔ وہ نواز شریف کو سرے سے غیرفعال کرنے کے خواہش مند ہیں تاکہ آنے والے انتخابات میں پنجاب کے اندر مسلم لیگ نواز کا راستا روکا جاسکے۔ نواز شریف کا ایسا کوئی ارادہ نظر نہیں آتا۔

این اے 120 سے نواز شریف پہ دباؤ بڑھ رہا ہے کہ وہ کلثوم نواز کو امیدوار بنائیں۔ نواز شریف کو محاز آرائی کا مشورہ دینے والا کیمپ بھی کلثوم نواز کارڈ کھیلنے کے حق میں ہیں۔

عام انتخابات میں نو ماہ باقی ہیں۔ نواز شریف اس دوران پنجاب کے اندر زبردست عوامی رابطہ مہم چلانے کا عزم کیے ہوئے ہیں۔

ان کو اس سے روکنے کے لئے پاکستان عوامی تحریک کے ڈاکٹر طاہر القادری نے ’تحریک قصاص‘ کا دوسرا راؤنڈ شروع کردیا ہے۔ مال روڈ پہ ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ اگر جسٹس باقر نجفی رپورٹ پبلک نہیں کی جاتی اور ماڈل ٹاؤن سانحہ میں شہباز شریف کو شامل تفتیش نہیں کیا جاتا تو لاہور میں ایک بڑے دھرنے کا وہ اعلان کریں گے۔

ایسا نظر آتا ہے کہ پی ٹی آئی بھی پنجاب میں بڑے جلسے کرے گی۔پاکستان پیپلزپارٹی کے چئرمین بلاول بھٹو زرداری نے بھی پنجاب میں جلسے کرنے کا اعلان کیا ہے۔ان کا پہلا جلسہ چینوٹ میں ہوگا۔

عدالتی اور میڈیا جنگ کے ساتھ سب جماعتیں پنجاب کو سیاسی جلسے جلوسوں کا مرکز بنانے جارہی ہیں۔

نواز شریف کو پنجاب میں اپنے سیاسی حریفوں پہ یہ برتری حاصل ہے کہ پنجاب اور وفاق کی حکومتی مشینری کا ان کو مکمل سہارا ہے اور اس لیے ان کو کہیں کوئی بڑی مشکل پیش نہیں آئے گی۔

لیکن کیا سیاسی سطح پہ نواز شریف۔ فضل الرحمان، محمد احمد لدھیانوی، محمود اچکزئی، حاصل بزنجو کی حمایت اور سول سوسائٹی میں عاصمہ جہانگیر، نجم سیٹھی و امتیاز عالم جیسے حامیوں کی مدد سے اپنے خاندان پر پڑنے والے عدالتی دباؤ سے نکل پائیں گے؟

یہ ایک ایسا سوال ہے جس کا جواب آنے والا وقت بتائے گا۔

Source:

http://nuktanazar.sujag.org/nawaz-sharif-gt-raod

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

زمرہ جات:   Horizontal 3 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

دنیا 100 سیکنڈ میں

- سحر ٹی وی