ترقی کا راز اور تقاضے

عزاداری امام حسین ہماری شہ رگ حیات ہے اس پر کوئی پابندی قبول نہیں: علامہ احمد اقبال رضوی

امریکہ سے دوستی! پاکستان کو دئے گئے 5 ہیلی کاپٹرز واپس مانگ لئے

کربلا ایک دانشگاہ؛ سانحہ نہیں

14 سو سال بعد آج پھر یزیدیت تکفیریت کی شکل میں سر اٹھا رہی ہے: علامہ راجہ ناصرعباس جعفری

برگزیٹ کے خلاف برطانوی عوام کا مظاہرہ

سانحہ ماڈل ٹاؤن کی رپورٹ عام نہ کرنے کی اپیل، عدالت نے پنجاب حکومت کی اپیل مسترد کردی

ملک دشمنوں کے عزائم کو ناکام بناتے ہوئے وحدت اور یکجہتی کا مظاہرہ کیا جائے: علامہ حسن ظفر نقوی

اقوام متحدہ کی سیکڑوں روہنگیا خواتین سے اجتماعی زیادتیوں کی تصدیق

تحریک انصاف نے ایم کیوایم سے بات کرکے تھوک کر چاٹا ہے: خورشید شاہ

تصاویر: جرمنی کے شہر ہیمبرگ میں سید الشہداء حضرت امام حسین(ع) کی عزاداری

امریکہ کی سفری پابندیوں کی نئی فہرست میں شمالی کوریا شامل سوڈان خارج

بے نظیر کا قاتل کون: پرویز مشرف یا آصف علی ذرداری؟

کردستان کا عراق سے الگ ہوجانا پورے عراق کے خاتمے کا سبب بن سکتا ہے

عوض القرنى اور سلمان العوده کے بعد محمد العریفی بھی گرفتار

حسن مثنی کون تھے؟ کیا وہ کربلا میں موجود تھے؟

سعودی عرب کو درپیش دو بڑے چیلنجز

تاریخ کوفہ: کچھ گم گشتہ پہلو — عامر حسینی کی کتاب کوفہ پہ تبصرہ: میاں ارشد فاروق

بنگلہ دیش میں روہنگیا پناہ گزینوں کی تعداد 4لاکھ 30 ہزارہوگئی

انجیلا مرکل چوتھی بار جرمنی کی چانسلر منتخب

محرم الحرام میں آگ و خون کا بڑا منصوبہ ناکام

ملیحہ لودھی کی اقوام متحدہ میں سنگین غلطی

نوازشریف کا لندن سے فوری وطن واپسی کا فیصلہ

یمنی عوام پر گزشتہ ماہ سعودی جنگی اتحاد کے حملہ میں امریکی بم استعمال ہوا، ایمنسٹی انٹرنیشنل

اگر مرجعیت کے فتوی پر عمل نہ ہوتا تو داعش کا کربلا، بصرہ، کویت اور سعودی عرب پر قبضہ ہوجاتا

اسلام آباد میں نامعلوم افراد نے کالعدم داعش کا جھنڈا لگادیا

خطے میں موجود بحرانوں میں کس نے مہاجرین کو پناہ دی؟

این اے 120میں شدت پسند عناصرکی کارکردگی

روہنگیا مسلمانوں پر ظلم و ستم ،7 ممالک نے سلامتی کونسل کا اجلاس طلب کر لیا

روہنگیا پناہ گزینوں کی تعداد سات لاکھ سے تجاوز کرگئی

لندن میں تیزاب حملے میں 6 افراد زخمی

ذہنی طور پر ان فٹ ڈونلڈ ٹرمپ خود کش مشن پر ہیں: شمالی کوریا

استغفار شیطان سے مقابلہ کا بہترین راستہ ہے

مجلس امام حسین کی خصوصیت دشمن سے مقابلہ اور شیعت کی ترویج ہے

شیعہ ہزارہ قوم کی نسل کشی کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

لندن میں آن لائن ٹیکسی سروس ’’اوبر‘‘ پر پابندی لگانے کا فیصلہ

پاکستان کے حالات عجیب رخ اختیار کر سکتے ہیں: نواز شریف

امریکا اور شمالی کوریا بچوں کی طرح لڑرہے ہیں: روس

نجران میں یمنی فوج نے سعودی فوج کا حملہ پسپا کر دیا

مشرف اتنے بہادر ہیں تو پاکستانی عدالتوں کا سامنا کریں: زرداری

پرویز مشرف کے الزامات

ترکی سفیر نے امارات میں اسرائیلی افسروں کی رہائشگاہ فاش کردی

عمر رسیدہ عرب شیوخ کی کمسن بھارتی لڑکیوں سے شادیاں

مشکل وقت سر پر ہے

کیا اردوغان، تباہی کے بالکل قریب ہیں؟

دنیا کو تڑپانے والا یہ بچہ اب کس حال میں ہے؟

پاکستان نے اقوام متحدہ میں کشمیر پر بھارتی موقف مسترد کر دیا

مشرف میں عدالتوں کا سامنا کرنے کی ہمت نہیں: فرحت اللہ بابر

ایران اور دنیا کے چالیس سے زائد ملکوں میں عالمی یوم علی اصغر

نوازشریف کے دوبارہ پارٹی صدر بننے کی راہ ہموار ہو گئی

پاکستان کی سیاست میں مثبت تبدیلی کیوں نہیں آ رہی ؟

فری بلوچستان : پاکستان کی خود مختاری پر کاری ضرب

تعلیم یافتہ دہشت گرد

الجبیر: بغداد اور کردستان ایک بڑی جنگ کی جانب بڑھ رہے ہیں

امریکا کے حمایت یافتہ جنگجوؤں نے اشتعال انگیزی کی تو نشانہ بنائیں گے: روس

پاکستان نے دہشتگردی کیخلاف دنیا کا سب سے بڑا آپریشن کیا: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی

گھر کی صفائی اور سابق وزیر داخلہ کی ناراضگی

عراقی وزیر اعظم نے الحویجہ کی آزادی کا حکم صادر کردیا

ٹرمپ کا خطاب اس کی ناکامی، شکست، غصہ اور درماندگی کا مظہر ہے

کائنات کے گوشہ و کنار میں امام مظلوم کے ماتم کا آغاز

پاکستان میں محرم الحرام کا چاند نظر آگیا

نواز شریف کی نسلوں میں سے کوئی اقتدار میں آنے والا نہیں رہے گا: طاہر القادری

اسلام آباد میں مختلف مکاتب فکر کے 14علماء اور خطبا کے داخلے پر پابندی عائد

لاہور ہائی کورٹ کا سانحہ ماڈل ٹاؤن کی رپورٹ منظر عام پر لانے کا حکم

بےنظیر اور مرتضیٰ بھٹو کو آصف زرداری نے قتل کرایا: پرویز مشرف

عسکری تنظیمیں ۔۔۔بدامنی کا محرک

سوچی کی حقائق پر پردہ پوشی: افسوسناک یا مجرمانہ فعل؟

قدس کو منظم کرنے کا بہانہ یا یہودی بنانے کا منصوبہ؟

غنڈوں کی زبان بولتا صدر

سعودی فوج مرکز پر یمنی سرکاری فوج کا میزائل حملہ، متعدد سعودی اہلکار ہلاک

امام کعبہ نے امریکی صدر ٹرمپ کو ’’امن کی فاختہ‘‘ قرار دے دیا!

2017-09-11 15:07:01

ترقی کا راز اور تقاضے

j

پاکستان کے صدر ممنون حسین نے مشورہ دیا ہے کہ مسلمانوں کو ترقی کے لئے سائنس اور ٹیکنالوجی کی طرف توجہ دینی چاہئے ، اس طرح وہ مسلمانوں کی خوشحالی اور بہتری کے لئے کام کرسکیں گے۔ پاکستانی صدر قازقستان میں تنظیم برائے اسلامی تعاون کی سربراہی کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ وہ سائنس و ٹیکنالوجی کے بارے میں او آئی سی سائنس و ٹیکنالوجی کی سٹینڈنگ کمیٹی کے چیئرمین بھی ہیں۔ تعلیم کے حوالے سے صدر پاکستان کی باتوں کو نظر انداز کرنا مشکل ہے لیکن اس حوالے سے پاکستان سمیت تمام ملکوں کی حکومتوں کو یہ یاد دلانے کی ضرورت ہے کہ انہوں نے اپنے ملکوں میں یا اجتماعی طور پر تعلیم کے فروغ اور سائنس سے نوجوانوں کا لگاؤ بڑھانے کے لئے کوئی کام نہیں کیا ہے۔ سائنسی اور منطقی رویہ کو فروغ دینے اور نوجوانوں کو سوال کرنے کا حق دینے کی بجائے، ایسے معاشرے تخلیق کئے گئے ہیں جہاں جستجو کرنے والوں کو خوفزدہ کیا جاتا ہے اور کسی بھی سوال کو دینی روایت کے خلاف قرار دے کر سیکھنے اور تلاش کرنے کے عمل کو روکا جاتا ہے۔

اس وقت مسلم ممالک میں متعدد ملکوں کے پاس کثیر وسائل ہیں لیکن ان وسائل کو علم و تحقیق کے کام پر صرف کرنے کی بجائے جنگی صلاحیتوں میں اضافہ پر صرف کرنے کا رواج عام ہے۔ یہ تصور کرلیا گیا ہے کہ عام لوگوں کو کسی بھی طریقہ سے خاموش کرکے شخصی حکومتوں اور آمرانہ نظام کا تسلسل ہی قومی اور ملکی مفاد میں ہے۔ اسی مقصد سے مذہب کو سیاسی مقاصد کے لئے استعمال کرنے کا رویہ عام ہے۔ اس لئے یہ بات عجیب نہیں ہونی چاہئے کہ مسلمان نوجوانوں میں پڑھنے لکھنے، تحقیق و جستجو کرنے اور سائنسی یا تعلیمی میدان میں کارہائے نمایاں انجام دینے کی بجائے انتہا پسندی اور اس کے نتیجہ میں پیدا ہونے والی دہشت گردی کی طرف رجوع کرنے کا خطرناک رجحان دیکھنے میں آرہا ہے۔ اس رجحان ہی کا نتیجہ ہے کہ پاکستان سمیت متعدد مسلمان ملکوں میں اب دینی درسگاہوں کے علاوہ عام یونیورسٹیوں میں بھی مذہبی انتہا پسندی فروغ پارہی ہے۔ درسی کتب اور استادوں کے رویوں میں استدلال، حقائق اور اصول علم پر اصرار کی بجائے جذباتی مذہبی نعرے جگہ پانے لگے ہیں۔

پاکستان میں مذہبی انتہا پسندی اور اس کے نتیجے میں دہشت گردی کے فروغ کے باوجود حکومت ابھی تک یہ طے کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکی ہے کہ تعلیمی ادارے کس طرح معاشروں کی تعمیر میں کردار ادا کرسکتے ہیں۔ اس کا نتیجہ ہے کہ ان میں سے بہت سے ادارے تعمیر کی بجائے تخریب کا سبب بنے ہوئے ہیں۔ بعد خرابی بسیار2014 میں پشاور کے آرمی پبلک سکول پر دہشت گردی حملہ اور حملہ آوروں کی طرف سے معصوم طالب علموں کے سفاکانہ قتل عام کے سانحہ کے بعد قومی ایکشن پلان پر اتفاق رائے پیدا ہؤا تھا۔ اس منصوبہ کا بنیادی مقصد ملک کے تعلیمی اداروں سے انتہا پسندی کے رجحانات کو ختم کرنے اور نفرت کا تدارک کرنے کے لئے مؤثر اقدامات کرنا تھا۔ لیکن تین سال گزرنے کے باوجود اس حوالے سے اقدامات دیکھنے میں نہیں آئے۔ فوج نے دہشت گردی کے خلاف متعدد کامیاب آپریشن کئے ہیں لیکن فوجی قیادت بھی مسلسل یہ واضح کررہی ہے کہ دہشت گردی اور انتہا پسندی کے مکمل خاتمہ کے لئے صرف فوجی کارروائی کافی نہیں ہے۔ بلکہ تعلیمی اداروں اور معاشرے کی اصلاح کے لئے قومی ایکشن پلان پر عمل درآمد ضروری ہے۔ بلند بانگ نعروں اور سیاسی بیانات کے باوجود ان ارادوں کو عملی جامہ پہنانے کی نوبت نہیں آئی کیوں کہ مذہب کو تعلیم اور اصلاح کی راہ میں رکاوٹ بنالیا گیا ہے۔

صدر ممنون حسین نے تعلیم کے حصول کے لئے جو باتیں کی ہیں وہ ہر مسلمان کے دل کی آواز ہیں۔ پاکستان سمیت بیشتر مسلمان ملکوں میں یہ آوازیں سامنے آتی رہتی ہیں کہ تعلیم کو فروغ دیا جائے اور نوجوانوں کو جدید معاشروں کا مقابلہ کرنے کے لئے علم و تحقیق کے مواقع فراہم کئے جائیں۔ لیکن حکومتوں کی ترجیحات وقت کے ان تقاضوں کے مطابق نہیں ہیں۔ صدر مملکت کی یہ بات بھی درست ہے کہ مسلمانوں نے صدیوں سے تعلیم و تحقیق کا راستہ ترک کردیا ہے جس کی وجہ سے وہ بھٹک رہے ہیں اور ترقی کا سفر چھوڑچکے ہیں۔ تاہم اس مقصد کے لئے اب عملی اقدامات کی ضرورت ہے۔ تنظیم برائے اسلامی تعاون کا پلیٹ فارم یہ مقصد حاصل کرنے کے لئے موزوں نہیں ہو سکتا۔ یہ تنظیم نام نہاد اسلامی اتحاد کی نمائیندہ ہے لیکن کسی مسلمان ملک یا عالمی ادارے پر اسے اثر و رسوخ حاصل نہیں ہے۔ اس کے علاوہ تعلیم کا حصول اس بنیاد پر ممکن نہیں ہو سکتا کہ مسلمانوں کو علم حاصل کرنا چاہئے تاکہ وہ ایک ملت کے طور پر دنیا سے اپنی اہمیت منوا سکیں۔ تعلیم اور سائنسی تحقیق ہر قوم اور عقیدہ کے لئے بنیادی اہمیت کی حامل ہے۔ اس کے ذریعے نہ صرف عمومی بہبود کا کام کیا جا سکتا ہے بلکہ تعلیم کا فروغ انسانوں کو ایک دوسرے کا احترام کرنے کے قابل بھی بناتا ہے۔

یہ قابل تحسین ہو گا کہ مسلمان ملکوں کے رہنما ان باتوں کو حقیقی طور پر قبول کرسکیں جو آستانہ کی کانفرنس میں علم و سائنسی ترقی کے بارے میں کہی گئی ہیں ۔ اسی طرح گم شدہ صدیوں میں اٹھائے گئے نقصان کی تلافی کے کام کا آغاز ہو سکتا ہے۔

 
 
 
زمرہ جات:   Horizontal 1 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

اسحاق ڈاراستعفیٰ دیں

- ڈیلی پاکستان

سحر نیوز رپورٹ

- سحر ٹی وی

جام جم - 25 ستمبر

- سحر ٹی وی