طالبان کی قید سے رہائی: شہباز تاثیر کی دل دہلا دینے والی داستان

شدت پسندوں کو انسان بنانیکی ناکام کوششیں

دہشتگردی کے سائے اور اہل پاکستان

کراچی عسکری پارک میں جھولا گر گیا بچی جاں بحق 9 افراد زخمی

عالمی کپ کی اختتامی تقریب، مشعل قطر کے سپرد

حضرت فاطمہ معصومہ سلام اللہ علیھا کی ولادت باسعادت مبارک ہو

فرانس فٹبال کا نیا عالمی چیمپئن، کروشیا کو شکست

اسرائیل کا 2014 کے بعد غزہ پر سب سے بڑے حملے کا دعویٰ

یمن میں سامراج کی مخالفت کا قومی دن

اسکاٹ لینڈ: امریکی صدرکے خلاف مختلف اندازمیں احتجاج

کس قانون کے تحت کالعدم جماعتوں کو کلین چٹ دی ہے، علامہ راجہ ناصر عباس جعفری

’اعتزاز احسن کی آنکھ میں ککرے پڑگئے ہیں‘

صحت بخش اور توانائی سے بھرپور. . . سلاد

آمدنی اور اخراجات میں بہت فرق ہے، شمشاد اختر

سراج رئیسانی کا جنازہ ، آرمی چیف کوئٹہ پہنچ گئے

کریمینل ایڈمنسٹریشن آف جسٹس میں محکمہ پولیس کا کلیدی کردار ہے، قاضی خالد علی

ٹرمپ دورہ برطانیہ میں اپنے الفاظ سے پھر گئے

بھارتی فوج کا کنٹونمنٹ علاقے ختم کرنے پر غور

بلوچستان کے مختلف شہروں میں سیکیورٹی ہائی الرٹ

’لیگی قیادت نے نواز اور مریم کو دھوکا دیا‘

داعش نےسعودی چیک پوسٹ پر حملے کی ذمہ داری قبول کرلی

سابق وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کیخلاف مقدمہ درج

آئرش پارلیمنٹ میں اسرائیلی اشیاء کی در آمدات پر پابندی کا بل منظور

’’حکومت بنا کر سب کو ایک پیج پر لاؤں گا ‘‘

ٹرمپ کے دورۂ برطانیہ پر احتجاج کا سلسلہ جاری

نواز،مریم اور صفدر کے پاس صرف ایک دن کی مہلت

یمن میں متحدہ عرب امارات کے اقدامات جنگی جرائم ہیں، ایمنسٹی انٹرنیشنل

سندھ میں رینجرز کےخصوصی اختیارات میں 90روز کی توسیع

آپ یہ پلے باندھ لیں

تحریک انصاف نے کوئٹہ جلسہ ملتوی کردیا

ترکی کا کمرشل اتاشی اسرائیل میں ترک سفار خانے میں واپس

فلسطینیوں کی حمایت میں واشنگٹن میں مظاہرہ

ایران ایک مضبوط ابھرتی ہوئی طاقت کا نام ہے،خطیب جمعہ تہران

چوہدری نثار نے اپنے دکھ کی وجہ بیان کر دی

اسامہ بن لادن کا سابق ذاتی محافظ جرمنی سے بے دخل

سعودی عرب خطے میں امریکہ اور اسرائیل کا سب سے بڑا اتحادی ملک ہے:سربراہ انصار اللہ

’’مجرم اعظم آگئے، 300ارب واپس کریں‘‘

امریکا کے گیس اسٹیشن پر لاکھوں پتنگوں نے ڈیرا ڈال لیا

اسحاق ڈار کےریڈ وارنٹ جاری

محمد وسیم کی ورلڈ فلائی ویٹ ٹائٹل فائٹ کل ہوگی

ٹوئٹر پرمشہور شخصیات کے فالوورز کم ہو گئے

دبئی:ریسٹورنٹ میں کھانا سرو کرتا روبوٹ

نواز شریف نے اڈیالہ جیل میں پہلے دن ناشتے میں کیا کھایا؟

گزین مری 23 سال بعد آبائی علاقے پہنچ گئے

قیدیوں نے اپنے حق کے لیے درخواست جمع کروادی

ہم نے قانونی جنگ لڑ کر جیتی ہے، شاہ محمود قریشی

ن لیگیوں کیلئے اطمینان بخش خبر

مستونگ انتخابی جلسہ دھماکا، یورپی یونین، سعودی عرب کی مذمت

نواز شریف اور مریم نواز اڈیالہ جیل منتقل

امریکا تجارتی میدان کا غنڈہ اور بلیک میلر ہے، چین

ہم عراق میں نیٹو افواج کی موجودگی کے خلاف ہیں: عصائب اہل الحق

اربیل شہر میں نیا امریکی قونصل خانہ پورے علاقے کیلئے خطرہ ہے: عراقی سیاستدان

داعش سے نمٹنے کے لیے چین، پاکستان، روس، ایران کا مشترکہ اجلاس

یمنی فورسز نے سعودی عرب کے 34 فوجیوں کو ہلاک کر دیا

نواز شریف کا پوتا اور نواسہ رہا

’’انتخابات میں فتح کا مکمل یقین ہے‘‘

ٹرمپ نے نیٹو سے نکلنے کی دھمکی دے دی

آئرلینڈ کے ایوان بالا نے اسرائیلی منصوعات کی درآمدات پر پابندی عائد کرنے کی تجویز کی حمایت کا اعلان کردیا

منی لانڈرنگ کی رقم کا بڑا حصہ اویس مظفر ٹپی کے اکائونٹ میں چلا گیا

مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کی نظربندی کے احکامات جاری

مصرکےقاہرہ ایئرپورٹ کے قریب دھماکا، پروازیں معطل

یوم شہداء پر مقبوضہ کشمیر میں آج مکمل ہڑتال

سپریم کورٹ نے شاہد خاقان کو الیکشن لڑنے کی اجازت دے دی

چین کے کیمیکل پلانٹ میں دھماکا، 19 افراد ہلاک

نواز، مریم واپسی، لاہور میں میٹرو بس سروس معطل

آرمی چیف نے 12دہشتگردوں کی سزائے موت کی توثیق کردی

’’دھماکے میں محفوظ رہا، گاڑی تباہ ہوگئی‘‘

عمران کا سیاسی کارکنوں کو گدھا کہنا قابل مذمت ہے، مریم اورنگزیب

کوئٹہ:ایم ڈبلیو ایم کیجانب سے علمدارروڈ جلسہ عام کا انعقاد

زمبابوے کا ٹاس جیت کر پاکستان کو بیٹنگ کی دعوت

بنوں، جے یو آئی ف کے قافلے پر بم حملہ،4 افراد شہید

2016-05-16 23:36:10

طالبان کی قید سے رہائی: شہباز تاثیر کی دل دہلا دینے والی داستان

Cil44icUUAAD76Zسابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کا کہنا ہے کہ ان کی رہائی بغیر کسی تاوان کی ادائیگی کے بغیر ہوئی، دہشت مجھے کوڑے مارتے، میرا گوشت کاٹتے اور بھوکا رکھتے، دو بار ڈرون حملوں میں مرنے سے بچا،طالبان کے چنگل سے رہائی کسی معجزے سے کم نہیں۔

رہائی کے بعد برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کو اپنے پہلے اںٹرویو میں پنجاب کے مقتول گورنر سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کا کہنا تھا کہ اغواء کاروں نے ان پر بہیمانہ ظلم کیے اور اذیتیں پہنچائیں لیکن اس کے باوجود خدا کو میری زندگی منظور تھی اور اللہ تعالیٰ مجھے بچاتا رہا، شہباز تاثیر کا یہ بھی کہنا تھا کہ ان کی رہائی بغیر تاوان ادا کیے ہوئی۔

160516072437_shahbaz_taseer_640x360_bbc_nocredit

اغوا کاروں کی قید میں گزرے ایام کا ذکر کرتے ہوئے شہباز تاثیر کا کہنا تھا کہ مجھے شروع میں کوڑے مارنے شروع کیے، تین چار دنوں میں انہوں نے مجھے پانچ سو سے زیادہ کوڑے مارے، اس کے بعد میری کمر بلیڈوں سے کاٹی، پلاس (زمبور) سے میری کمر سے گوشت نکالا، پھر میرے ہاتھوں اور پیروں کے ناخن نکالے، مجھے زمین میں دبا دیا، ایک دفعہ سات دن کے لیےاور ایک دفعہ تین دن کے لیے، پھر مزید تین دن کے لیے مجھے زندہ زمین میں دفن کیا گیا، کہ صرف منہ تھوڑا سے مٹی سے باہر ہوتا تھا۔

ان برے دنوں کا ذکر کرتے ہوئے شہباز تاثیر نے مزید بتایا کہ اغوا کار مجھے بھوکا رکھتے تھے، میرے پہرے داروں کا رویہ بھی میرے  ساتھ بہت برا تھا، میرا منہ سوئی دھاگے سے سی دیا گیا، انھوں نے مجھے سات دن یا شاید دس دن کھانا نہیں دیا، مجھے صحیح طرح یاد نہیں کتنے دن، مجھے ٹانگ پر گولی ماری گئی، میں بہت خوش قسمت ہوں کہ وہ میری ہڈی کو نہیں لگی اور نکل گئی، انہوں نے میرے منہ پر شہد کی مکھیاں بٹھائیں تاکہ میرے خاندان والوں کو دکھا سکیں کہ میری شکل بگڑ گئی ہے، مجھے ملیریا ہو گیا لیکن مجھے دوائی نہیں دی گئی، مجھے کہتے تھے کہ ہمیں بینک اکاؤنٹ دو، وہ مجھے فلم بنانے کے لیے اذیت دیتے تھے، مجھے ایک دن پہلے ہی کہتے تھے کہ تیاری کرو کل یہ ہوگا، میں ان سے کہتا کہ کون سی تیاری کروں، کیسے تیاری کرتے ہیں۔ مجھے کہتے کہ کل تمہارے ناخن نکالیں گے، میں پوری رات نماز پڑھتا، نماز کے بعد نفل اور نفل کے بعد فجر تک دعا کرتا رہتا تھا، مجھے لگتا تھا کہ وہ مجھے جتنا بھی ماریں اللہ نے مجھے اپنی حفاظت میں رکھا ہوا ہے،اللہ تعالی کی طرف سےمیں ایک شیل میں تھا اور وہ اس شیل میں داخل نہیں ہو سکتے ہیں۔

160308151144_salman_taseer_shehbaz_taseer_twitter__maheen_taseer_512x288_twitter_nocredit

تاوان سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں شہباز کا کہنا تھا کہ میری رہائی کسی تاوان کی ادائیگی کے بعد عمل میں نہیں آئی، میں وہاں سے بھاگ گیا تھا، وہاں قید کے دوران جیل میں مجھے ایک آدمی ملا، اس نے میری مدد کی، مجھے کچلاک پہنچانے تک اور کچلاک سے میں نے اپنے خاندان سے رابطہ کیا، اور بعد ازاں اس کے بعد مجھے پاکستان آرمی نے اپنی حفاظت میں لے لیا اور لاہور پہنچایا، میں  نے اپنی رہائی کیلئے کوئی پیسے نہیں دیئے، لیکن جاتے ہوئے میں نے ان کے دس ہزار روپے ضرور لیے تھے۔

اپنے اغوا کی روداد سناتے ہوئے شہباز تاثیر ایک لمحے کیلئے خاموش ہوئے اور انہیں دنوں کو یاد کرکے کانپتے ہوئے بولے کہ مجھے لاہور سے اغوا کرکے میر علی لے جایا گیا، جو وزیرستان کا علاقہ ہے،پھر وہاں سے میرعلی۔ مجھے ہر مہینے ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کیا جاتا، میں میر علی میں 2014 کی جون تک رہا، جب انہی ہی دہشت گرد ازبکیوں کے ساتھیوں نے کراچی ایئرپورٹ پر حملہ کیا، انھیں پہلے سے پتا تھا کہ حکومت اور فوج کی طرف سے کیا ردِ عمل آئے گا، اس لیے انہوں نے مجھے شوال منتقل کردیا، جس کا راستہ شاید دتہ خیل سے جاتا ہے،ادھر میں فروری 2015 تک تھا، اس کے بعد مجھے گومل کے راستے افغانستان کے علاقے زابل لے جایا گیا، وہ جگہیں بدلتے رہتے تھے، کہیں ایک مہینہ کہیں دو مہینے، ایک مرتبہ ڈرون حملوں کی وجہ سے میں ڈیڑھ سال تک ایک خاندان کے ساتھ رہا، کسی کو پتا نہیں تھا کہ میں کون ہوں اور شاید افواہ بھی اڑی تھی کہ شہباز تاثیر ڈرون حملے میں مر چکا ہے، مگر اللہ کے فضل سے میں بچ گیا۔

160420072205_shahbaz_taseer_640x360_taseers_nocredit

اغوا میں ملوث گروہ کا ذکر کرتے ہوئے شہباز تاثیر کا کہنا تھا کہ میں صرف ایک گروپ کے ساتھ تھا اور وہ اسلامک موومنٹ آف ازبکستان تھا اور میں ان ہی کے پاس رہا، ان کے پاس اس وقت تک رہا جب تک افغانی طالبان اور ازبک گروپ کی بیعت کے اوپر لڑائی نہ ہوئی تھی، یہ اس لیے ہوا کہ ازبکوں نے فیصلہ کیا کہ وہ داعش کے ساتھ جائیں گے کیونکہ ان کی نظر میں وہ صحیح خلافت تھی اور افغان طالبان کی صحیح نہیں تھی، تب میں افغان طالبان کے ہاتھوں میں آ گیا، مگر وہ خود بھی نہیں جانتے تھے کہ میں کون ہوں، میں نے انھیں کتنی بار کہا کہ میں ازبکی نہیں ہوں، وہ کہتے کہ میں ازبکی ہوں اور میں نے ان کے ساتھ جنگ کی تھی اور اس لیے پکڑا گیا تھا، اس لیے مجھے جیل میں پھینک دیا گیا۔

رہائی کی تفصیلات بتاتے ہوئے شہباز تاثیر کا کہنا تھا کہ رہا ہونے کے بعد سب سے پہلے جو کھانا کھایا وہ نہاری تھی، کچلاک ریسٹورنٹ میں کچھ نہیں کھایا، آرمی کمپاؤنڈ میں آیا تو انہوں نے کہا کچھ چائے، کافی پانی تو میں نے کہا صرف نہاری، اگر ممکن ہو تو لاہور سے منگوا دیں نہیں تو میں آپ کی بلوچی نہاری بھی کھانے کو تیار ہوں۔

واضح رہے کہ سابق مقتول گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کو ماہ رمضان کے دوران 26 اگست 2011 کو لاہور سے اغوا کیا گیا تھا اور تقریباً ساڑھے چار سال بعد آٹھ مارچ 2016 کو ان کی رہائی بلوچستان کے علاقے میں عمل میں آئی، جہاں اغوا کار انہیں چھوڑ کر فرار ہوگئے۔ سماء

 

 

زمرہ جات:   Horizontal 4 ،
ٹیگز:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)