پاکستان اور امریکہ کی لاحاصل دوستی

دہشتگرد کالعدم جماعتوں کو الیکشن لڑنے کی اجازت دینے کی بجائے قانون کے شکنجے میں کسنے کی ضرورت ہے، علامہ راجہ ناصر عباس جعفری

انڈونیشیا کی جھیل میں کشتی الٹنے سے 200 افراد ہلاک

بلوچستان: سی ٹی ڈی آپریشن،خاتون سمیت 4 دہشت گرد ہلاک

ہائیڈرو گرافی کا عالمی دن ، پاک بحریہ کے سر براہ کا پیغام

امریکہ کے شکست قریب ہے؟

شیخ علی سلمان پر مقدمہ، غیر سرکاری تنظیموں کا احتجاج

عمران، شاہد خاقان، گلالئی،فہمیدہ مرزا، فاروق ستار، لدھیانوی، مشرف کے کاغذات مسترد

ایران نے امریکی صدر سے بات چیت کا امکان مسترد کر دیا

راہ حق پارٹی، جے یو آئی (ف) کے آشرباد سے کالعدم جماعتوں کا سیاسی پلٹ فارم

لندن کی سڑکوں پر بھاگتا پاکستانی سیاست دان

بن زاید کی اسرائیلی عہدے داروں سے ملاقات ؟

انتخابات 2018: الیکشن کمیشن نے ساڑھے تین لاکھ فوجی اہلکاروں کی خدمات مانگ لیں

علماء یمن نے بڑا کردیا

چوہدری نثار تھپڑ مار کیوں نہیں دیتے؟

ٹرمپ بھیڑیا ہے

ٹرمپ نے بوکھلاہٹ میں شمالی کورین جنرل سے مصافحہ کے بجائے سلیوٹ کر ڈالا

الیکشن کمیشن پاکستان راہ حق پارٹی کی رجسٹریشن منسوخ کرے

اسرائیلی فوج نے اپنا الحاج شیخ الاسلام متعارف کرادیا – عامر حسینی

این اے 53 سے عمران خان کے کاغذات نامزدگی مسترد

الحدیدہ۔۔۔اب میڈیا خاموش کیوں ہے!؟

کیا احد چیمہ شہباز شریف کے لیے خطرے کی گھنٹٰی ہے؟

فضل اللہ کی ہلاکت کے بعد امریکا پاکستان سے کیا مطالبہ کرے گا؟

یمن میں پاکستانی لاشیں کیا کر رہی ہیں؟

جدید تر ہوتی جوہری ہتھیار سازی: آرمجدون زیادہ دور نہیں

نواز شریف اور ان کی بیٹی کا کردار سامنے لانا چاہتا ہوں، چوہدری نثار

مسلم لیگ نواز اور نادرا چئیرمین کے مبینہ ساز باز کی کہانی

آنیوالے انتخابات میں کسی مخصوص امیدوار کی حمایت نہیں کرتے، علامہ عابد حسینی

امریکی مرضی سے ملی حکومت پر لعنت بھیجتا ہوں، سراج الحق

افتخار چوہدری عدلیہ کے نام پر دھبہ ہیں، فواد چوہدری

کاغذات نامزدگی پر اعتراضات جھوٹے، من گھڑت اور صرف الزامات ہیں، عمران خان

نادرا ووٹرز کی معلومات افشا کرنے والوں کے خلاف کارروائی کرے، الیکشن کمیشن

افغانستان میں جنگ بندی: ’ملا اشرف غنی زندہ باد‘

پشاور سے کالعدم ٹی ٹی پی کا انتہائی مطلوب کمانڈر گرفتار

جرمنی کی آسٹریا میں جاسوسی کا گھمبیر ہوتا معاملہ

کیا جرمنی نے آسٹریا میں جاسوسی کی؟

عورت چراغ خانہ ہے، شمع محفل نہیں!

کلثوم نواز کی حالت تشویشناک، نوازشریف اور مریم نواز کی وطن واپسی مؤخر

سانحہ ماڈل ٹاؤن کو چار سال گزر گئے لیکن ملزم آزاد ہیں، طاہر القادری

امریکی دباؤ کے باوجود ایران کیساتھ باہمی تعاون کو جاری رہیں گے: چین

انتخابات میں مخالفین کو عبرت ناک شکست دیں گے، آصف علی زرداری

آپ کی مدد کا شکریہ عمران خان، اب آپ جاسکتے ہیں!

کالعدم ٹی ٹی پی کا نیا امیر کون؟

امریکا کا چین کے خلاف بھی تجارتی جنگ کا اعلان

افغان صوبے ننگرہار میں خودکش دھماکا، 25 افراد ہلاک

عید الفطر 1439 ھ علامہ سید ساجد علی نقوی کا پیغام

انتخابات میں حصہ لینے کے خواہش مند 122 امیدوار دہری شہریت کے حامل نکلے

امریکا کے خلاف یورپ کا جوابی اقدام

سعودی عرب کا ذلت آمیز شکست کے بعد کھلاڑیوں کو سزا دینے کا اعلان

مُلا فضل اللہ کی ہلاکت، پاکستان اور خطے کے لیے ’اہم پيش رفت‘

’’رَبِّ النُّوْرِ الْعَظِیْم‘‘ کے بارے میں جبرئیل کی پیغمبر اکرمﷺ کو بشارت

پاکستان میں عید الفطر مذہبی جوش وجذبے کے ساتھ منائی جائے گی

یورپ میں بڑھتی مسلم نفرت اور اس کا حل

کیا مسلم لیگ ن کی پالیسی میں کوئی تبدیلی آ رہی ہے؟

عید فطر کا دن، خدا کی عبادت اور اس سے تقرب کا دن 

پھانسی دے دیں یا جیل بھیجیں

شفقنا خصوصی: بھاڑے کے ٹٹو اور پاک فوج

افغانستان میں ملا فضل اللہ کی ہلاکت کی اطلاعات

کلثوم نواز کی طبیعت بگڑ گئی، مصنوعی تنفس پر منتقل

سعودی عرب کی کھوکھلی دھمکیاں

ایم ایم اے اور اورنگزیب فاروقی کے مابین خفیہ ڈیل کیا ہے؟

ریحام خان کو عمران کے کنٹینر تک کون لایا تھا: ایک خصوصی تحریر

غدار ٹوپیاں اور جاسوس کبوتر

آج سے موبائل بیلنس پر ٹیکس ختم: 100 روپے کے کارڈ پر پورے 100 روپے کا بیلنس ملے گا

اول ماہ ثابت ہونے کا میعار کیا ہے؟

سوال: کیا مقلدین کے لیے ضروری ہے کہ عید فطر کے لیے اپنے مرجع کی طرف رجوع کریں؟

رمضان المبارک کے انتیسویں دن کی دعا

ریحام خان کی کتاب اور معاشرہ

شیخ رشید 2018 کے انتخابات میں حصہ لے سکتے ہیں: سپریم کورٹ

پاکستان میں انتخابات 2018؛ 2 ہزار368 امیدوار مختلف محکموں کے نادہندہ نکلے

حسن بن صباح کی جنت، فسانہ یا حقیقت؟

2018-03-10 07:07:27

پاکستان اور امریکہ کی لاحاصل دوستی

US pakistan ties

خواجہ محمد آصف نے ایک بیان میں امریکہ پر اپنے عدم اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اسلام آباد اب وائٹ ہاؤس کے ساتھ تعاون جیسی خطا کا مرتکب نہیں ہوگا اور پاکستانی عوام کے مفادات کو امریکی خواہشات کی بھینٹ چڑھنے نہیں دے گا۔

پاکستان کے وزیر خارجہ نے امریکہ کے ساتھ تعاون کے تعلق سے ایسے میں ندامت اور پشیمانی کا اظہار کیا ہے کہ اس سے قبل تک مختلف سیاسی اور مذہبی حلقے امریکہ کے ساتھ تعاون کے نتائج خاص طور پر افغان عوام کے قتل عام کے بارے میں خبردار کر چکے ہیں۔

اس کے ساتھ ہی خواجہ محمد آصف کے یہ اظہار خیالات چند جہات سے قابل توجہ ہیں۔ اول یہ کہ اسلام آباد کی حکومت ایسے میں امریکہ کے ساتھ تعاون کو ماضی میں بڑی غلطی قرار دے رہی ہے کہ اسلام آباد اور واشنگٹن کے تعلقات بہت زیادہ کشیدہ ہوگئے ہیں اور امریکہ بدستور پاکستان مخالف اپنے دھمکی آمیز بیانات جاری رکھے ہوئے ہے۔

اسی وجہ سے پاکستانی حکام اس طرح سے بیان دے رہے ہیں گویا انہیں واشنگٹن کے ساتھ تعاون کی ضرورت نہیں ہے۔ دوسرے یہ کہ مسلم لیگ نواز اس کوشش میں ہے کہ پاکستانی عوام کے امریکہ مخالف جذبات کی لہرمیں خود کو بھی شامل کرکے، اپوزیشن پارٹیوں کے دباؤ کے مقابلے میں اپنی پوزیشن کو ایک طرح سے مستحکم ظاہر کرے اور یہ ظاہر کرے کہ پاکستان کی حکومت نے امریکہ مخالف موقف اختیار کر رکھا ہے اور وہ پاکستانی عوام کے ساتھ ہے۔ اس کے ساتھ ہی پاکستان کی حکومت کو اپنے دیرینہ اور ایٹمی حریف ہندوستان کے ساتھ توازان برقرار کرنے کے لئے علاقائی و بین الاقوامی طاقتوں کے ساتھ تعلقات کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔

امریکہ اور پاکستان کے تعلقات میں کشیدگی کا آغاز، جارج بش کے دورہ صدارت میں 2006 سے ہوا۔ اگرچہ امریکہ نے 2001 میں افغانستان پر حملے میں پاکستان کے تعاون کی قدردانی کرتے ہوئے پاکستان کو اپنا غیرنیٹواتحادی کا درجہ دیا لیکن افغانستان میں امریکی فوجیوں کے پھنس جانے کے بعد، امریکہ کے سیاسی اور فوجی حکام نے پاکستان کی حکومت پر، افغانستان میں ٹھوس تعاون نہ کرنے کا الزام لگایا۔ پاکستان کے قبائلی علاقوں پر امریکہ کے ہوائی حملوں میں شدت آنے کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کشیدہ ہوگئے لیکن موجودہ صدر ٹرمپ کے وائٹ ہاؤس میں قدم رکھنے کے ساتھ ہی اس کے اور دیگر امریکی حکام کے پاکستان مخالف الزامات میں تیزی آگئی کہ جس سے علاقائی توازن اور ان کے درمیان باہمی تعاون بھی اثر انداز ہوا ہے۔

پاکستان میں فوجی مسائل کے ماہر محمود شاہ افسر کہتے ہیں: امریکہ افغانستان میں امن کا خواہاں نہیں ہے بلکہ وہ صرف اس کوشش میں ہے کہ امن کے عمل کو چیلنج سے دوچار کرکے اور پاکستان کے خلاف تنقیدیں کرکے بعض ملکوں کی ترقی و پیشرفت میں روڑے اٹکائے۔ اسی سبب سے واشنگٹن ہندوستان کی حمایت کر رہا ہے۔ بہر صورت پاکستانی حکام نے عملی طور پر ثابت کردیا ہے کہ وہ امریکہ اور نیٹو کے ساتھ معاملے کے لئے موقع سے فائدہ اٹھانے سے نہیں چوکتے ہیں اور چین اور روس کی سمت پاکستان کے رجحان نے بھی یہ ظاہر کردیا ہے کہ اسلام آباد کے پاس بھی مختلف آپشنز علاقائی اور بین الاقوامی تعاون کو مستحکم کرنے کے لئے پائے جاتے ہیں اور اگر امریکہ افغانستان کے تعلق سے پاکستان کے مطالبات اور اس ملک کی تبدیلیوں میں ہندوستان کا کردار کم ہونے پر توجہ نہیں دے گا تو جنگ افغانستان کی پیچیدگیوں کے سبب امریکہ کو افغانستان میں کامیابی کا کوئی موقع ہاتھ نہیں آئے گا۔

بہر صورت یہ پہلی بار نہیں ہے کہ پاکستان کی حکومت نے افغانستان پرحملے میں امریکہ کا ساتھ دینے کو غلطی بتایا ہے لیکن اس کے یہ معنی نہیں ہیں کہ اگر امریکی حکومت اسلام آباد کے مقابلے میں نرمی سے پیش آئے تو پاکستان دوبارہ واشنگٹن کے ساتھ تعاون کرنا نہیں چاہے گا۔

 

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

یادوں کے جھروکے

- سحر ٹی وی

دنیا 100 سیکنڈ میں

- سحر ٹی وی

جام جم - 20 جون

- سحر نیوز