مدیحہ گوہر کے گزر جانے پہ جی بہت اداس ہے – ریاض ملک

نوازشریف کا مقصد صرف اپنی جائیداد بچانا ہے: فواد چوہدری

ایران ایٹمی معاہدے سے پہلے والی صورت حال پر واپسی کے لیے تیار

محمد بن سلمان کو آل سعود خاندان میں نفرت اور دشمنی کا سامنا

اسرائیل کو صفحہ ہستی سے مٹانے کے لیے پاکستان کو صرف12 منٹ درکار ہیں: جنرل زبیر حیات

روزہ رکھنے والے مسلمان معاشرے کیلیے سیکیورٹی رسک ہیں، ڈنمارک کی وزیر کی ہرزہ سرائی

سعودی حکومت کے خلاف بغاوت کی اپیل: کیا آل سعود کی بادشاہت کے خاتمے کا وقت آن پہنچا؟

انٹیلی جینس بیورو (آئی بی) کے خفیہ راز

’سعودی عرب عراق کو میدان جنگ بنانے سے احتراز کرے‘

رمضان المبارک کے ساتویں دن کی دعا

نگراں وزیراعظم کیلیے وزیراعظم اور قائد حزب اختلاف میں ڈیڈلاک برقرار

کیا نواز شریف کی جارحیت تبدیلی لا سکتی ہے؟

کیا لشکر جھنگوی تحریک طالبان کی جگہ سنبھال چکی ہے؟

جوہری ہتھیاروں سے لیس ممالک دنیا کو دھمکا رہے ہیں

مجھے کیوں نکالا: نواز شریف کے احتساب عدالت میں اہم ترین انکشافات

بغداد میں العامری کی مقتدی الصدر سے ملاقات، حکومت کی تشکیل پر تبادلہ خیال

دہشت گردوں کے مکمل خاتمے تک شام میں ہی رہیں گے، ایران

رمضان المبارک کے چھٹے دن کی دعا

ایران نے رویہ تبدیل نہ کیا تو اسے کچل دیا جائے گا، امریکی وزیرخارجہ کی دھمکی

کیا بغدادی انتقام کی کوئی نئی اسکیم تیار کر رہا ہے؟

بحرین میں خاندانی آمریت کے خلاف مظاہرے

ماہ رمضان میں امام زمانہ(ع) کی رضایت جلب کرنےکا راستہ

ایم آئی، آئی ایس آئی کا جے آئی ٹی کا حصہ بننا نامناسب تھا، نوازشریف

فضل الرحمان کی فصلی سیاست: فاٹا انضمام کا بہانا اور حکومت سے علیحدگی

مذہبی جذباتیت کا عنصر اور انتخابات

مادے کا ہم زاد اینٹی میٹر کیا ہوا؟

ایرانی جوہری ڈیل سے امریکی علیحدگی، افغان معیشت متاثر ہو گی

امریکہ ایرانی قوم کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور نہیں کرسکتا

رمضان المبارک کے پانچویں دن کی دعا

ماہ مقدس رمضان میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ اور ناجائز منافع خوری نے عوام کو عذاب میں مبتلا کررکھا ہے: علامہ مختار امامی

کیا سویلین-ملٹری تعلقات میں عدم توازن دکھانے سے جمہوری نظام خطرے میں پڑگیا؟ – عامر حسینی

روزے کا ایک اہم ترین فائدہ حکمت ہے

نگراں وزیراعظم پر حکومت اور اپوزیشن میں اتفاق ہوگیا، ذرائع

موٹروے نہیں قوم بنانا اصل کامیابی ہے: عمران خان

ایک چشم کشا تحریر: عورتوں کو جہاد کے ليے کيسے تيار کيا جاتا ہے؟

روزہ خوروں کی نشانیاں: طنزو مزاح

ترک صدر ایردوآن اور سود، ٹِک ٹِک کرتا ٹائم بم

آل سعود کی انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں: غیر ملکی طاقتوں کے ساتھ روابط کے الزام میں سات خواتین کارکن گرفتار

فلسطینیوں کی لاشوں پر امریکی سفارتخانہ قائم

افسوس امت مسلمہ کی ناگفتہ بہ حالت پر 57 اسلامی ممالک خاموش ہیں، علامہ ریاض نجفی

رمضان المبارک کے چوتھے دن کی دعا

خاص الخاص روزے کا ذائقہ چکھنےکا راستہ

امریکی اسکول فائرنگ میں جاں بحق پاکستانی سبیکا شیخ کے خواب پورے نہ ہوسکے

اگر ہم بیت المقدس کا دفاع نہ کرسکے تو مکہ کا دفاع نہیں کرپائیں گے: صدر اردوغان

یورپ نے امریکی پابندیاں غیر موثر بنانے کے لئے قانون سازی شروع کر دی

سول ملٹری تعلقات: پاکستانی سیاست کا ساختیاتی مسئلہ

پاکستان کا اگلا نگران وزیر اعظم کون ہو گا؟

کیا سعودی ولی عہد محمد بن سلمان بغاوت میں ہلاک ہو گئے ہیں؟

تحریک انصاف نے حکومت کے پہلے 100 دن کا پلان تیار کرلیا

کیوبا میں مسافر طیارہ گر کرتباہ، 110 افراد ہلاک

غزہ میں اسرائیلی مظالم کی آزادانہ اورشفاف تحقیقات کرائی جائے، پاکستان

رمضان المبارک کے تیسرے دن کی دعا

رمضان الہی ضیافت کا مہینہ

امریکی سفارتخانہ کی بیت المقدس منتقلی مسترد کرتے ہیں، علامہ ساجد نقوی

بشارالاسد کی روسی صدر ولادیمیر پیوتن سے ملاقات

مریخ پر بھیجے گئے سب سے چھوٹے سیٹلائٹ سے زمین کی پہلی تصویر موصول

ایران نے مقبوضہ فلسطین میں صہیونی مظالم کی عالمی تحقیقات کا مطالبہ کردیا

62 شہید اور 2770 زخمی اور دنیا خاموش تماشائی

فلسطینی مظاہرین کو دہشت گرد کہنا ’توہین آمیز‘ ہے، روسی وزیر خارجہ

بھولے بادشاہ کا غصہ اور نفرت

نواز شریف کی سیاسی خود کشی: کیا یہ ایک سوچی سمجھی سکیم ہے؟

ایٹمی معاہدے کی حفاطت کی جائے گی، تین بڑے یورپی ملکوں کا اعلان

رمضان المبارک کے دوسرے دن کی دعا

رمضان المبارک کے پہلے دن کی دعا

ٹرمپ جیسے دوست کے ہوتے ہوئے دشمن کی ضرورت نہیں: صدر یورپی یونین

قرآن مجید میں امام زمانہ(عج) کےاصحاب کی خصوصیات

کیا یہ ہے سب سے بہترین اینڈرائیڈ فلیگ شپ فون؟

سلمان بادینی کی ہلاکت: کیا داعش اور لشکر جھنگوی کی بلوچستان میں کمر ٹوٹ گئی ہے؟

جنرل شاہد عزیز داڑھی اگا کر شام گیا اور شائد وہاں مر چکا ہے، پرویز مشرف

بلوچستان: پاک فوج کی کاروائی ہزارہ شیعوں کا قاتل لشکر جھنگوی کا سلمان بدینی واصل جہنم

بیت المقدس کو مسلمانوں سے جدا نہیں کیا جاسکتا: صدر روحانی

2018-04-26 14:28:45

مدیحہ گوہر کے گزر جانے پہ جی بہت اداس ہے – ریاض ملک

31290800_10216369601380998_4860762764039159808_n

اسّی کی دہائی کے تاریک ترین دور میں جب امریک کا حمایت یافتہ آمر جنرل ضیاء الحق شہری و سیاسی حقوق پامال کررہا تھا تو مدیحہ گوہر بھی مزاحمت کے چند بڑے ناموں میں سے ایک تھیں۔

( کیونکہ ضیاء آمریت کے کالے قوانین اور عورتوں بارے خاص طور پہ امتیازی قوانین بنانے کے خلاف بننے والے حقوق نسواں کے سب سے بڑے متحرک محاذ پاکستان ایکشن فورم کی وہ نمایاں لیڈنگ خواتین رہنماؤں میں شامل تھیں اور ضیاء الحق کے خلاف مال روڈ پہ عورتوں کے تاریخی جلوس کا حصّہ تھیں اور وہ اس جلوس کے اسیران میں شامل تھیں۔دو دفعہ وہ ضیآء الحق دور میں جیل گئیں اور ان کو نوکری سے بھی ہاتھ دھونا پڑے)

مجھے خاص طور پہ پاکستان ٹیلی وژین کا ڈرامہ نیلے ہاتھ یاد ہے جو پاکستان کی جیلوں میں بند خواتین سے تباہ کن بدسلوکی بارے تھا۔ اس کا مرکزی کردار مدیحہ گوہر کا تھا جو ایک سیاسی قیدی بنکر جیل پہنچتی ہیں اور پھر ان کے زریعے ہمیں قیدیوں کی حالت زار اور جیل کی زندگی ان کی آنکھوں کے زریعے سے دکھائی جاتی ہے۔ یہ ڈرامہ ان کے شوہر ندیم شاہد نے لکھا تھا اور آج بھی یہ ڈرامہ ” اورنج از دا نیو بلیک” مقبول ٹی وی شوز کی طرح سپر ہٹ ڈرامہ ہے۔

(ریاض ملک سے یہاں غلطی ہوئی انہوں نے لکھا کہ ندیم شاہد ان کے مستقبل کے ہونے والے شوہر تھے جبکہ نیلے ہاتھ انیس سو اٹھاسی میں پاکستان پیپلزپارٹی کی حکومت آنے کے بعد پی ٹی وی پہ آن ائر گیا اور 90ء میں نگران حکومت کے وقت یہ ڈرامہ بند کردیا گیا تھا اور ندیم شاہد سے مدیحہ گوہر نے شادی لندن میں کرلی تھی اور واپس آکر 1984ء میں انہوں نے اجوکا تھیڑ کی بنیاد ملکر رکھی تھی )

مدیحہ اور ندیم نے ایسے وقت میں مزاحمت کی جو مزاحمت اور تاریکی دونوں سے عبارت تھا۔

ہم سب واقف ہیں کہ فوجی آمر جنرل ضیاء الحق کے 11 سالہ تاریک ترین دور کی یادیں تحلیل کرنے اور ابہام کے پردے میں لیپٹ کر رکھنے کی بھرپور کوششیں ہوئی ہیں۔ ہم پاکستان کے لیفٹ-لبرل کے ایک برائے فروخت حصّے کی جانب سے اس بارے ترمیم پسندی کے سامنے آنے سے بھی واقف ہیں جو کہ نواز شریف کی طرح کے ضیاء پرستوں کے مالشیوں کا کردار ادا کرتے ہیں۔

مدیحہ اور ندیم کے پی ٹی وی اور ان کے اپنے اجوکا تھیڑ کے لیے کیے گئے کام کی بدولت سے ہم اس تاریک دور میں جو ہوا اس سے واقف ہیں۔ ہم جانتے ہیں کہ کس نے مزاحمت کی اور کون بک گیا۔ ہمیں شکریہ کے ساتھ مدیحہ و ندیم جیسے فنکاروں کی اداکاری اور تحریروں کو شکریہ کے ساتھ یاد رکھتے ہیں کہ یہ پاکستان کی تاریک ترین گھڑیاں تھی اور یہ کہ وہ تاریکی ہمارے حال میں بھی رس رس کر آرہی ہے۔

اس زمانے میں بے نظیر بھٹو اور بيگم نصرت بھٹو حقیقی زندگی میں مزاحمت کاری کی علامت تھیں اور ہم کیسے بیگم نصرت بھٹو کے سر پہ ایک پولیس افسر کی لگائی گئی ضرب بھول سکتے ہیں۔ اور وہ پولیس افسر رانا مقبول تھا جو اب نواز شریف کا ساتھی ہے۔ اس دور میں آرٹ نے زندگی کی عکاسی کی۔

آپ کی ہمت اور آپ کے فن کے لیے ۔مدیحہ جی ! آپ کا بہت بہت دھنے واد

 

زمرہ جات:   Horizontal 5 ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

یادوں کے جھروکے

- سحر نیوز

سرحد نشین مہمان

- مہر نیوز