بائیوکیمیکل انجینئرنگ

پاک فوج ایک کروڑ پودے لگائے گی

دنیا کے سب سے بڑے پاکستانی پرچم کی رونمائی

اقوام متحدہ کے امن مندوب تین معاونین کے ہمراہ غزہ کی پٹی پہنچ گئے

غزہ میں تین شہداء کے جنازے، لاکھوں عوام آخری دیدار کے لیے امڈ آئے!

قزاقستان: ایران اور روس کے صدور کی ملاقات

مہاتیر محمد کا چین کیساتھ معاہدے ختم کرنے کا عندیہ

جرمنی میں مہاجر مخالف حملوں میں کمی آئی ہے: جرمن وزارت داخلہ

’’اومنی گروپ کی جائیداد، اکائونٹس کی قرقی کا حکم دیتے ہیں‘‘

عقد امام علی علیہ السلام و حضرت زھرہ (س)

ایران کو پتا ہونا چاہیے کہ اُس کے اقدامات پر اُس کی پکڑ ہوتی ہے: اماراتی سفیر

یمن میں عام شہریوں پر حملہ، سعودی اتحادی افواج نے الزامات مسترد کردیے

برطانیہ کی اسلحہ ساز فیکٹری میں دھماکا، ایک شخص ہلاک، ایک زخمی

ناسا نے سورج کی جانب پہلا ’’پارکرسولر پروب ‘‘ نامی خلائی جہاز بھیج دیا

پاکستانی نژاد بشپ نے نقاب پر پابندی کی حمایت کر دی

انڈونیشیا میں طیارہ کو حادثہ ، 8 افراد ہلاک

شام : اسلحہ گودام میں دھماکہ ، 39شہری جاں بحق

بھارتی کرکٹر نوجوت سدھو نے عمران خان کی تعریفوں کے پل باندھ دیئے

بنی گالا تا پارلیمنٹ ہاؤس سیکیورٹی انتظامات

آزاد کشمیر، کلیاں نالے پر پل بیٹھ گیا، دو افراد جاں بحق

رینجرز کارروائی، ڈیرہ غازی خان سےاسلحہ برآمد ،6 ملزمان گرفتار

نو منتخب ارکان خیبرپختونخوا اسمبلی نے حلف اٹھا لیا

قومی اسمبلی کے نومنتخب اراکین نے حلف اٹھالیا

اسلام آباد: العزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسز کی سماعت 15 اگست تک ملتوی

گیلانی کی سکیورٹی واپس لینے پر بلاول کا شدید ردعمل

پی ٹی آئی کے وفد کی ایاز صادق سے ملاقات

برطانیہ:نامعلوم شخص کی فائرنگ سے 10 افراد زخمی

جہانگیر ترین، علیم خان کی چوہدری برادران سے ملاقات

غزہ سے آتش گیر کاغذی جہازوں سے اسرائیل میں 7 مقامات پر آتش زدگی

ترکی کا ایران کیساتھ قومی کرنسی میں تجارت کرنے کا اعلان

ایران :بحری جہازوں کو نشانہ بنانے والے میزائل کا کامیاب تجربہ

ابوظہبی دہشتگرد گروہ القاعدہ کا خفیہ کیمپ ہے:ترجمان انصار اللہ

شمال مغربی ایران میں دہشت گردوں کا نیٹ ورک تباہ

یمن کی اسلامی تنظیم انصار اللہ کے رہنما کی عمران خان کو مبارکباد

امریکی ایلچی کی “حماس” کو مٹانے کی گھناؤنی سازش

کل ملک کی جمہوری تاریخ کا اہم دن کیوں؟

امریکا سے تجارتی جنگ چھڑنے کے بعد اردوان کا پیوٹن سے رابطہ

ایران کے ساتھ تعلقات کے فروغ پر عراقی صدر کی تاکید

روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام کی تحقیق کرانے سے میانمار کی حکومت کا انکار

امریکا سعودی جارحیت میں برابر کا شریک ہے،سینیٹر برنی سینڈرز

اسرائیل ،فلسطینی مزاحمت کی محکم ضربوں کو تحمل نہیں کر پائےگا:حسین امیر عبداللہیان

سعودی عرب نے فوجی بجٹ میں اضافہ کردیا

ڈیرہ اسماعیل خان: ٹارگٹ کلنگ کا سلسلہ کب رکے گا؟

مراد علی شاہ وزیراعلیٰ اور سراج درانی اسپیکر سندھ اسمبلی کے امیدوار نامزد

اسد قیصر اور پرویز خٹک نے صوبائی اسمبلی کی نشستیں چھوڑ دیں، ذرائع

ریفارم کا مقصد سرمایہ کاری کی فضا سازگار بنانا ہے، شمشاد اختر

کرپشن ریفرنس ، ڈاکٹر عاصم کیخلاف سماعت 18اگست تک ملتوی

طالبان اور افغان حکومت کا غزنی پر کنٹرول کا دعویٰ

’’ کشمیر میں غیر کشمیریوں کو آباد نہیں ہونے دیں گے‘‘

الاسکا کا ڈیلٹن ہائی وے دنیا کا خطرناک ترین زمینی راستہ

ایرانی حکومت کا مؤقف ہٹلر کی پالیسیوں کے مشابہ ہے، امریکی سینیٹر

بھارتی رکن پارلیمنٹ نے مودی کے خلاف احتجاجاً ہٹلر کا حلیہ اپنا لیا

زمبابوے: صدارتی انتخابات کے نتائج عدالت میں چیلنج

چین: مسجد کے انہدام کے خلاف سینکڑوں مسلمان سراپا احتجاج

اصغر خان کیس 15 اگست کو سماعت کیلئے مقرر، نواز شریف اور دیگر کو نوٹس جاری

اگر ان کے پاس ڈالرز ہیں تو ہمارے پاس اللہ ہے: رجب طیب اردوغان

سعودی عرب :یمن میں بچوں کی ہلاکت تحقیقات کی جائے گی

ڈی آئی خان میں وزیرستان طرز کا آرمی آپریشن کیا جائے، ایم ڈبلیو ایم کا مطالبہ

’الیکشن میں اقلیتوں کی کامیابی بڑی پیشرفت ہے‘

گلگت میں پولیس چوکی پر فائرنگ ،3 اہلکار شہید

تربیلا اور منگلا میں پانی کے ذخیرے میں بہتری

گوجرانوالہ میں فائرنگ سے جنرل کونسلر جاں بحق

عمران خان کی اہلیہ کے پہلے شوہر خاور مانیکا کی شادی

عمران خان کا شاہ فرمان کو گورنر خیبرپختونخوا بنانے کا فیصلہ

امریکا میں ہائی جیک کیا گیا طیارہ گر کر تباہ

دالبندین میں بس پر خودکش حملہ، 5افراد زخمی

شیعہ نسل کشی : متاثرین کے نکتہ نظر سے تکفیریت کا جائزہ

حزب اللہ لبنان کی یمنی اسکول کے بچوں کی بس پر سعودی عرب کے حملے کی مذمت

مسلم نیٹو کی تشکیل ناممکن ہے:سابق ایرانی سفیر

بی بی سی نے اسرائیل کے دباؤ پرغزہ پر اسرائیلی حملے سے متعلق خبر کی سرخی تبدیل کردی

عراق میں پارلیمانی انتخابات کے نتائج کی تفصیلات جاری

2018-07-03 10:43:01

بائیوکیمیکل انجینئرنگ

بائیوکیمیکل انجینئرنگ

ملک میں بڑھتےوبائی امراض کے پیش نظر ادویات کو درپیش مسائل ، اسپتالوں میں موجود ہائی ٹیک مشینری کی دیکھ بھال اور ٹیکنالوجی سسٹم کے درست انجام دہی کا فریضہ’’ بائیو میڈیکل انجینئر ،،کے سپرد ہوتا ہے۔بائیو میڈیکل انجینئر صحت کے شعبے کا وہ فعال رکن ہے جس کے بغیریہ مکمل نہیں ۔۔

دنیا کی تمام تر ترقی اور گہما گہمی ، جس کی بدولت آج زندگی نہایت آسان ہے۔اس کا کریڈٹ انجینئرنگ کے شعبے کو ہی جاتا ہے اور اگر بات کی جائے بائیو میڈیکل انجینئرنگ کی تعلیم کی تو یہ شعبہ ،،انجینئرنگ کے متعلقہ پیشوں میں سے ہی ایک ابھرتاہوا اوردلچسپ شعبہ ہے ۔جو حیاتیات اور انسانی زندگی کے معیار میں بہتری لانے کی غرض سے طب میں تکنیکی علم کےمجموعہ کے طور پر متعارف کروایا گیا۔ اس شعبے میں دو اہم شعبوں’’ میڈیکل اور انجینئرنگ،، کو یکجا کیا گیا اور طب کی بہتری کے لیے انجینئرنگ کے اصولوں اور تراکیب کا مطالعہ، تحقیق ، ترقی ، اوراس کے استعمال پر وضاحت کی گئی ۔

اگر آپ بھی انسانی زندگیوں کی دیکھ بھال اور مشینری سسٹم میں دلچسپی رکھتے ہیں تو یہ پیشہ آپ کے لیے ہی ہے ۔لیکن اس شعبے کو آپ کیسے اپنا سکتے ہیں اور پاکستان یا بیرون ملک اس شعبے کی اہمیت کیا ہے۔ آئیے ڈال لیتے ہیںاس پر اک نظر ۔۔

داخلے کی اہلیت اور معیار

اس شعبے کا انتخاب کرنے کے لیے سب سے پہلے تواپنے فطری رجحان اور دلچسپیوں کو پیش نظر رکھیں ساتھ ہی بائیو میڈیکل انجینئرنگ کے ساتھ ساتھ انجینئرنگ کے مختلف شعبوں کے مستقبل کی صورتِ حال کا اندازہ بھی۔

اس جائزہ کے بعد اگر آپ بائیو میڈیکل انجینئربننا چاہتے ہیںتو ایک طریقہ یہ ہے کہ FSC یعنی اگر آپ نے پری میڈیکل یا پری انجینئرنگ کے شعبےمیںانٹرمیڈیٹ کی سند60% حاصل کررکھی ہے تو آپ بائیو میڈیکل پروگرام میں داخلہ لے سکتے ہیں ۔ہمارے یہاں بائیو میڈیکل انجینئرنگ پروگرام 4سالہ بیچلر ڈگری (بی ایس سی یا بی ای ) کے طور پر کروایا جاتا ہے۔

دوسرا طریقہ یہ ہے کہ(پری انجینئرنگ) کے بعد الیکٹریکل انجینئرنگ کی ذیلی شاخوں کمپیوٹر انجینئرنگ ، الیکٹرانکس انجینئرنگ ، میکینکل انجینئرنگ یا کیمیکل انجینئرنگ کر لیں اور بائیو میڈیکل میں ایم ایس یا پوسٹ گریجویٹ کورس کرنے کے بعد بطور بائیو میڈیکل انجینئر اپنے کیریئر کا آغاز کریں۔دنیا کے کئی ممالک میں MBBSکی ڈگری لینے کے بعد بھی طلبہ وطالبات بائیو میڈیکل انجینئرنگ کو ماسٹرز ڈگری کے لئے منتخب کرسکتے ہیں۔

بطور بائیو میڈیکل انجینئر

اگرآپ بائیو میڈیکل انجینئرنگ میں بی ایس سی ،بی ای یا ایم ایس کرنے کے بعد بطور بائیو میڈیکل انجینئر اپنے کیریئر کا آغاز کرچکے ہیں تو طب میں استعمال ہونے والی مشینری اور ہائی ٹیک سسٹم کی درست فعالیت ،مختلف آلات اور ان کاحساس آپریشن ،درست ڈیٹاکا حصول اور اس کی حفاظت آپ کے فرائض میں شامل ہے۔بطور بائیو میڈیکل انجینئر مختلف آلات اور سافٹ ویئر ڈیزائن کرنے کے علاوہ وسیع رینج میں تکنیکی ذرائع سے حصول علم اور تحقیق آپ کی ذمہ داری ہے۔ طبی مسائل کے حل ،خصوصاً ڈاکٹر اور مریض کو سہولتیں پہنچانے کے لیے آپریشن تھیٹر کے تمام آلات ، سی ٹی سکین ، الٹراساونڈ اور ایکس رے مشین اور دیگر خودکار مشینیں چلانا اور کنٹرول کرنا شامل ہے ۔یہی نہیں بائیو میڈیکل انجینئرز کسی حادثے یا بیماری میںجسمانی اعضاءکھودینے والے افراد کے لیے آرٹیفیشل اعضاءروبوٹ ہاتھ ،روبوٹ پاؤں، انگلیاں اور دوسرے مصنوعی اعضاء کی تیاری کا کام بھی سرانجام دیتے ہیں ۔

بائیو میڈیکل انجینئر کے لیے کیریئر کے مواقع

بائیو اور میڈیکل کی تحقیق میں مصروف اداروں کو بائیو میڈیکل انجینئرز کی شدید ضرورت ہوتی ہےاگر آپ کے پاس بائیومیڈیکل انجینئر کی ڈگری ہے تومیڈیکل ایکوپمنٹ مینوفیکچرنگ فرم،سیلولر ٹشوز اینڈجینیٹک انڈسٹری،بائیو مٹیریل انڈسٹری،آرتھوپیڈک انڈسٹری،اسپتال بائیو میکانکس آپ کے جاب مارکیٹ کے طور پر موجود ہیں ۔ عالمی صنعتوں ، مینوفیکچرنگ یونٹس ، صنعتی فرموں ، تعلیمی اور طبی اداروں ،حکومتی ریگولیٹری ایجنسیوں کی وسیع رینج میں کام کرسکتے ہیں ۔اس کے علاوہ سرکاری عہدوں پرکام کرتے ہوئے مختلف آلات اور مراکز میں حفاظتی معیار کاتعین کرنابھی کرسکتے ہیں ۔

پاکستان میں بائیو میڈیکل انجینئرز کی قلت

پاکستان میں بائیو میڈیکل انجینئر ز کی قلت پائی جاتی ہے اس کا ایک سبب اس شعبے میں کام کرنے والےافراد کی کم تنخواہیں اور ان کے بنیادی حقوق سے حکومت کی بے اعتنائی شامل ہے۔ اور یہ قلت سرکاری اسپتالوں کی صورتحال میں مزید خرابی کا سبب بن سکتی ہے۔بائیو میڈیکل انجینئر کی شدید قلت کے باعث سرکاری اسپتالوں میں موجودکروڑوں روپے کی درآمد کی گئی مشینری(مثلاوینٹی لیٹرز، انجیوگرافی، ایم آر آئی، سی ٹی سکین، ایکو کارڈیک گرافی، کارڈیک مونیٹرز، ای سی جی ) خراب ہوکر سکریپ کا ڈھیر بن جاتی ہے کیونکہ انھیں کوئی ٹھیک کروانے والا نہیں ہوتا۔ اس لیے اگر آپ کے پاس بائیو کیمیکل کی ڈگری ہے تو آپ بطور پاکستانی بائیو میڈیکل انجینئر ڈیمانڈنگ پرسنالٹی ہیں ۔

بائیوکیمیکل انجینئرنگ میں پڑھائے جانے والے مضامین

بائیو میڈیکل انجینئرنگ میں میکینکل انجینئرنگ ،الیکٹرانکس انجینئرنگ ، مواصلات اورکمپیوٹر انجینئرنگ، کمپیوٹر انٹیگریٹڈ ، مینو فیکچرنگ ، جغرافیائی معلومات کے نظام ، بائیو ٹیکنالوجی ، بائیو میکانکس جیسےمضامین پڑھائے جاتے ہیں۔اس منفرد شعبے میں بائیو انسٹر،منٹیشن ، بائیو میٹریل ، بائیو میکانکس ، میڈیکل گرافکس ،جینیٹکس انجینئرنگ ، آرتھوپیڈک سرجری ، سیلولر اور ٹشو انجینئرنگ شامل ہیں۔

دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)