افغانستان کے صوبہ ہلمند میں برطانوی فوجی بھی تعینات+تصاویر

کس قسم کے طرز زندگی نےحضرت خدیجہ(س) کو ام المومنین بنا دیا تھا؟

قطر کا بحران حل ہونے کی فی الحال کوئی امید نہیں

پاکستان نے فاٹا انضمام پر افغانستان کے اعتراضات مسترد کردیے

کلبھوشن کی تعیناتی بدترین غلطی تھی، امرجیت دلت

مسئلہ فلسطین اور او آئی سی کا کردار

سعودی ولی عہد کے زخمی ہونے کی خبر صحیح ہے، سابق ولی عہد

رمضان المبارک کے گیارہویں دن کی دعا

تکفیری فاشزم ، مفہوم ، اصطلاح اور رد – عامر حسینی

رمضان المبارک کے دسویں دن کی دعا

2018 کے عام انتخابات 25 جولائی کو ہوں گے، صدر مملکت نے منظوری دیدی

روہنگیا مسلمانوں کو مدد کی ضرورت ہے، پری یانکا چوپڑا

کیا شکیل آفریدی کو فضل اللہ کے عوض پاکستان امریکہ کے حوالے کر دے گا؟

نوازشریف نے خطرے کی گھنٹی بجا دی

ایران ایٹمی معاہدے پر مکمل طور پر کار بندہے، آئی اے ای اے

چین پاکستان کے لئے دو سٹیلائٹس خلا میں بھیجے گا

امام کاظم (ع) کا حلال لذتوں کے بارے میں انتباہ

رمضان المبارک، مہمانی اور اللہ کی کرامات سےاستفادہ کا مہینہ ہے

انتخابات 2018: کیا نوجوان سیاسی منظرنامے کی تبدیلی میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں؟

واٹس ایپ کا نیا خطرناک بگ: اپنے موبائل کو محفوظ کیسے بنا سکتے ہیں؟

میرا بیان ہی میرابیانیہ ہے

کیا پاکستان امریکہ مخالف اقدامات میں ایران اور شمالی کوریا کو پیچھے چھوڑ دے گا؟

رمضان المبارک کے نویں دن کی دعا

فخر ہے ایک منی لانڈرر وزیراعظم کو ہٹانے میں ہم کامیاب ہوئے، عمران خان

امریکی صدر نے شمالی کوریا کے رہنما سے ملاقات منسوخ کردی

سعودی عرب اور ایتھوپیا کے تعلقات میں کشیدگی

شعیب میر : ایک جیالا خلاق فطرت نہ رہا – عامر حسینی

امریکا کا پاکستان میں اپنے سفارتکاروں سے برے سلوک کا واویلا

فوج مخالف بیانیے سے دھمکیوں تک: نواز شریف کی مریم کے خلاف مقدمات پر سخت تنبیہہ

سعودی کفیلوں کی جنسی درندگی: بنگلہ دیشی خاتون ملازمہ کی دلدوز کہانی

جنرل زبیر کی اسرائیل کو دھمکی کے پس پردہ محرکات :امریکہ نے اسرائیل کو پاکستان کے ایٹمی اثاثوں پر حملے کا گرین سگنل دیدیا

رمضان المبارک کے آٹھویں دن کی دعا

ادارہ جاتی کشمکش اور نواز شریف کا بیانیہ: کیا فوج مشکل میں گھر گئی ہے؟

ماہ رمضان کی دعاوں کا انتظار کے ساتھ ارتباط

امریکی حکام انتہا پسندانہ سوچ کے حامل ہیں، ایرانی صدر

پاکستان میں 35 لاکھ افراد بے روزگار ہیں، رپورٹ

نوازشریف کا مقصد صرف اپنی جائیداد بچانا ہے: فواد چوہدری

ایران ایٹمی معاہدے سے پہلے والی صورت حال پر واپسی کے لیے تیار

محمد بن سلمان کو آل سعود خاندان میں نفرت اور دشمنی کا سامنا

اسرائیل کو صفحہ ہستی سے مٹانے کے لیے پاکستان کو صرف12 منٹ درکار ہیں: جنرل زبیر حیات

روزہ رکھنے والے مسلمان معاشرے کیلیے سیکیورٹی رسک ہیں، ڈنمارک کی وزیر کی ہرزہ سرائی

سعودی حکومت کے خلاف بغاوت کی اپیل: کیا آل سعود کی بادشاہت کے خاتمے کا وقت آن پہنچا؟

انٹیلی جینس بیورو (آئی بی) کے خفیہ راز

’سعودی عرب عراق کو میدان جنگ بنانے سے احتراز کرے‘

رمضان المبارک کے ساتویں دن کی دعا

نگراں وزیراعظم کیلیے وزیراعظم اور قائد حزب اختلاف میں ڈیڈلاک برقرار

کیا نواز شریف کی جارحیت تبدیلی لا سکتی ہے؟

کیا لشکر جھنگوی تحریک طالبان کی جگہ سنبھال چکی ہے؟

جوہری ہتھیاروں سے لیس ممالک دنیا کو دھمکا رہے ہیں

مجھے کیوں نکالا: نواز شریف کے احتساب عدالت میں اہم ترین انکشافات

بغداد میں العامری کی مقتدی الصدر سے ملاقات، حکومت کی تشکیل پر تبادلہ خیال

دہشت گردوں کے مکمل خاتمے تک شام میں ہی رہیں گے، ایران

رمضان المبارک کے چھٹے دن کی دعا

ایران نے رویہ تبدیل نہ کیا تو اسے کچل دیا جائے گا، امریکی وزیرخارجہ کی دھمکی

کیا بغدادی انتقام کی کوئی نئی اسکیم تیار کر رہا ہے؟

بحرین میں خاندانی آمریت کے خلاف مظاہرے

ماہ رمضان میں امام زمانہ(ع) کی رضایت جلب کرنےکا راستہ

ایم آئی، آئی ایس آئی کا جے آئی ٹی کا حصہ بننا نامناسب تھا، نوازشریف

فضل الرحمان کی فصلی سیاست: فاٹا انضمام کا بہانا اور حکومت سے علیحدگی

مذہبی جذباتیت کا عنصر اور انتخابات

مادے کا ہم زاد اینٹی میٹر کیا ہوا؟

ایرانی جوہری ڈیل سے امریکی علیحدگی، افغان معیشت متاثر ہو گی

امریکہ ایرانی قوم کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور نہیں کرسکتا

رمضان المبارک کے پانچویں دن کی دعا

ماہ مقدس رمضان میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ اور ناجائز منافع خوری نے عوام کو عذاب میں مبتلا کررکھا ہے: علامہ مختار امامی

کیا سویلین-ملٹری تعلقات میں عدم توازن دکھانے سے جمہوری نظام خطرے میں پڑگیا؟ – عامر حسینی

روزے کا ایک اہم ترین فائدہ حکمت ہے

نگراں وزیراعظم پر حکومت اور اپوزیشن میں اتفاق ہوگیا، ذرائع

موٹروے نہیں قوم بنانا اصل کامیابی ہے: عمران خان

ایک چشم کشا تحریر: عورتوں کو جہاد کے ليے کيسے تيار کيا جاتا ہے؟

روزہ خوروں کی نشانیاں: طنزو مزاح

2015-12-22 07:15:17

افغانستان کے صوبہ ہلمند میں برطانوی فوجی بھی تعینات+تصاویر

151222045849_uk_troops_624x351_mod

شفقنا اردو: برطانیہ کی وزارت دفاع نے کہا ہے کہ برطانیہ کی ایک فوجی دستے کو افغانستان کے ہلمند صوبے میں تعینات کیا گیا ہے جہاں طالبان سگین شہر پر قبضے کے قریب ہیں۔ دوسری جانب افغان طالبان نے دعوی کیا ہے کہ انھوں نے جنوبی صوبے ہلمند کے ایک ضلع کو اپنے قبضے میں لے لیا ہے۔ وزارت دفاع نے کہا ہے کہ ایک چھوٹے دستے کو ’مشاورتی کردار‘ میں ہلمند میں کیمپ شورابیک کے لیے روانہ کیا گيا ہے۔ وزارت دفاع نے کیا ہے کہ یہ ٹکڑی وسیع نیٹو ٹیم کا حصہ ہیں لیکن یہ لڑائی میں شرکت نہیں کرے گی۔  وزارت دفاع کی ایک ترجمان نے کہا ’یہ تعیناتی نیٹو کے ریزولیوٹ سپورٹ مشن میں برطانیوں تعاون کے طور پر کی جا رہی ہے۔ ’یہ فوجی وسیع نیٹو ٹیم کا حصہ ہیں جو افغان نیشنل آرمی کو صلاح و مشورے دے رہی ہیں۔ انھیں جنگ کرنے کے لیے تعینات نہیں کیا گیا ہے اور یہ کیمپ کے باہر تعینات نہیں رہیں گے۔‘ خیال رہے کہ برطانیہ نے گذشتہ سال افغانستان میں اپنا جنگی آپریشن ختم کر دیا تھا تاہم اس کے ساڑھے چار سو فوجی مانیٹرنگ اور سپورٹنگ کردار میں وہاں رہ گئے ہیں۔ دوسری جانب طالبان نے کہا ہے کہ شدید لڑائی کے مرکز سنگین پر اب ان کا قبضہ ہے۔ جبکہ ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ سنگین کا پولیس ہیڈکوارٹر ابھی بھی جنگجوؤں کے حصار میں ہے اور وہاں موجود فوجیوں کو کابل حکومت سے کوئی مدد نہیں مل پا رہی ہے۔ گذشتہ رات مشتبہ طالبان جنگجوؤں نے کابل کے مرکز میں تین راکٹ داغے۔ اس سے قبل طالبان نے کہا ہے کہ انھوں نے کابل کے باہر بگرام کے فوجی ہوائی اڈے پر حملہ کیا ہے جس میں ایک خودکش بمبار نے چھ امریکی فوجیوں کو ہلاک کر دیا ہے۔ وائٹ ہاؤس نے کہا ہے کہ وہ حملے کے باوجود افغان حکومت اور وہاں کے لوگوں کے لیے پابند عہد ہے۔ خیال رہے کہ یہ حالیہ مہینوں کے دوران ہونے والے شدید ترین حملوں میں سے ایک ہے۔ دوسری جانب ہلمند کے گورنر مرزا خان کا کہنا ہے کہ سنگین کا کنٹرول حکام کے پاس ہی ہے تاہم ان کے ایک نائب کے مطابق طالبان کا سنگین پر محاصرہ جاری ہے۔ بگرام کے اس فوجی اڈے میں نیٹو کی زیرِ قیادت بین الاقوامی اتحاد کے کم از کم 12,000 غیر ملکی فوجی تعینات ہیں۔ ہلمند کے گورنر مرزا خان کے نائب محمد جان رسول یار نے بین الاقوامی خبر رساں اداروں کو بتایا کہ طالبان نے اتوار کی رات گئے سنگین ضلع پر حملہ کیا۔ انھوں نے خبر رساں ادارے اے ایف کو بتایا ’طالبان نے سنگین میں واقع پولیس ہیڈ کوارٹر، گورنر کے دفتر کے علاوہ انٹیلیجنس کی عمارت پر قبضہ کر لیا ہے جبکہ ضلعے میں لڑائی جاری ہے۔‘ خبر رساں ادارے اے پی نے محمد جان رسول یار کے حوالے سے بتایا کہ سنگین میں جاری لڑائی میں افغان سکیورٹی افواج کو بہت نقصان پہنچا تاہم انھوں نے ان کی تعداد نہیں بتائی۔ دوسری جانب کابل میں حکومت کا کہنا ہے کہ سنگین میں مزید کمک بھیجی جا رہی ہے۔ افغانسان کی وزارتِ دفاع کے ترجمان دولت وزیر نے کہا ہے کہ طالبان کے جنگجوؤں میں پاکستان، ازبک، عرب، چین کے اوغر اور چیچن شامل ہیں۔ صوبے ہلمند کے پولیس کمانڈر محمد داؤد نے بی بی سی کو بتایا کہ طالبان نے سنگین کو بقیہ صوبے سے مکمل طور پر کاٹ دیا تھا جس کی وجہ سے وہاں خوراک اور اسلحے کی فراہمی متاثر ہو رہی تھی۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم گذشتہ دو دنوں کے دوران پولیس ہیڈ کوارٹر میں گھرے ہوئے ہیں۔ محمد داؤد نے کہا کہ وہاں سے کوئی بھی باہر نہیں نکل سکتا تھا کیونکہ وہاں تمام راستے بند تھے۔ اس سے قبل ہلمند صوبے کے نائب گورنر محمد جان رسول یار نے فیس بک کے ذریعے ملک کے صدر اشرف غنی سے صوبہ ہلمند میں طالبان کے ساتھ جاری لڑائی میں مدد مانگی تھی۔ سماجی رابطوں کی سائٹ فیس بک پر محمد جان رسول یار نے صدر غنی کو اپنے پیغام میں لکھا کہ گذشتہ دو دنوں سے ہلمند میں ہونے والی لڑائی میں 90 فوجی مارے جا چکے ہیں۔ دریں اثنا ہلمند سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق طالبان کا کہنا ہے وہ ہلمند کے قریب ایک اور ضلعے پر قبضہ کرنے کے قریب پہنچ گئے ہیں۔ خبر رساں ادارے اے پی نے صوبے ہلمند کے صوبائی کونسل کے سربراہ محمد کریم کے حوالے سے بتایا ہے کہ ہلمند کا 65 فیصد علاقہ اب طالبان کے کنٹرول میں ہے۔ خیال رہے کہ حالیہ مہینوں میں طالبان جنگجوؤں نے ملک کے کئی علاقوں میں افغان فوج کے خلاف کارروائیاں کی ہیں جس کے باعث سکیورٹی فورسرز دباؤ کا شکار ہیں۔

151221085619_taliban_640x360_epa_nocredit 151221130723_helmand_sangeen_afghanistan_640x360_bbc_nocredit 151221203109__87325520_030657067-1 151222045849_uk_troops_624x351_mod

زمرہ جات:   Horizontal 1 ، تصاویر ، دنیا ،
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

عنوان کے بغیر

- اسلام ٹائمز