کیا یہی تبدیلی ہے؟

ہائوسنگ منصوبے میں پنجاب کے دس شہروں کو شامل کرنے کا فیصلہ

پہلی مرتبہ مداخلت سے پاک ضمنی انتخابات ہوئے،وزیراعظم

یہودیوں کو مقبوضہ فلسطین میں ایک اور بستی بسانے کی منظوری مل گئی

’الہ آباد ‘ کا نام تبدیل کرنے کا اعلان

نائن الیون حملوں میں ملوث ملزم کو جرمنی سے ملک بدر کرنے کا فیصلہ

ڈونلڈ ٹرمپ کا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کو ٹیلی فون، لاپتا صحافی کے معاملے پر گفتگو

یورک ایسڈ بڑھنے سے خطرناک بیماریوں کے امکانات کئی گنابڑھ جاتے ہیں

سردار احمد یار ہراج وزیراعظم انسپکشن ٹیم کے سربراہ مقرر

خیبر پختونخوا کا بجٹ پیش ، اپوزیشن کا احتجاج

دنیا کا تیز رفتار ترین کیمرا تیار

ملالہ آکسفورڈ سوسائٹی کی سرگرم رکن منتخب

سعد رفیق اور سلمان رفیق کی عبوری ضمانت منظور

وزیر اعظم کے دورہ چین کو حتمی شکل دے دی گئی

’’مشرف وڈیو لنک پر بیان ریکارڈ نہیں کرانا چاہتے‘‘

حضرت رقیہ (علیہا السلام) کی شہادت

گزشتہ ہفتے 5 سعودی شہزادے غائب کرائے گئے ہیں

اقبال تیری قوم کا اقبال کھو گیا

ننگر ہار لیپرڈز کیخلاف شاہد آفریدی کی عمدہ پرفارمنس

’’قیام امن کیلئے پاک بھارت بات چیت ہونی چاہیے‘‘

ٹرمپ نے بھی ایران کی طاقت اور قدرت کا اعتراف کرلیا/ ام عماد صبر و استقامت کا مظہر

اقوام متحدہ شام میں امریکہ کی جانب سے فاسفورس بم استعمال کئے جانے کی تحقیقات کرے، روس

ترکی سے رہائی پانے والے امریکی پادری کی صدر ٹرمپ سے ملاقات

آل سعود کے خلاف احتجاجی لہر وائٹ ہاوس کی دہلیز پر

ترک حکام کا سعودی حکومت پر دباؤ ڈالنے کا مطالبہ

ترکی میں تیز رفتار ٹرک نہر میں جا گرا، 22 افراد ہلاک

ٹرمپ کا دھمکی آمیز بیان، سعودی اسٹاک مارکیٹ مندی کا شکار

اسرائیلی جارحیت سے غزہ کی احتجاجی تحریک میں ولولہ پیدا ہوگا: حماس

کینیڈا کی فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے 50 ملین ڈالر کی ہنگامی امداد

ترقی کے اسلامی ایرانی ماڈل کو فروغ دیا جائے،آیت اللہ سید علی خامنہ ای

بیلجیئم میں ٹیکنیشن کی فائرنگ سے ایف 16 طیارہ تباہ

افغانستان: طالبان کا امریکا کے ساتھ بات چیت جاری رکھنے کا فیصلہ

امریکا اقتصادی پابندیوں کے ذریعے ایرانی حکومت تبدیل کرنا چاہتا ہے: حسن روحانی

پاکستان کا دورہ جنوبی بھارت جانے سے زیادہ اچھا لگا، نوجوت سنگھ سدھو

خیبرپختونخوا کا 613 ارب روپے سے زائد کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا

پنجاب میں (ن) لیگ کے کارکنوں کا بھرپور جشن، بھنگڑے، مٹھائیاں تقسیم کی گئیں

اللہ تعالیٰ کا شکر گزار ہوں کہ ہم سرخرو ہوئے‘ آصف کرمانی

’باب دوستی‘ آج بھی آمدورفت، تجارت کیلئے بند

سپریم کورٹ نے خواجہ سراؤں کا شناختی کارڈ اجراء کیس نمٹا دیا

اپنی ہڈیوں سے پیار کریں

سابق وزیراعظم نوازشریف احتساب عدالت پہنچ گئے

حضرت بہائوالدین زکریا کےتین روزہ عرس کا آغاز

آصف زرداری کی ضمنی الیکشن میں پارٹی کے کامیاب امیدواروں کو مبارکباد

’’لوگوں کو قبروں سے نکال کر ٹرائل کئے جائیں گے‘‘

جمال خشوگی کا معاملہ، پابندیاں عائد کی گئیں تو جوابی کارروائی کرینگے، سعودی عرب

خاشقجی کےلاپتہ ہونے کے بعد سےعادل الجبیر میڈیا کی نظروں سے غائب

ترک حکام کو خاشقجی کے سعودی قونصل خانے میں قتل سے متعلق ٹھوس شواہد مل گئے

پی ٹی آئی (ن) لیگ 4، 4، (ق) لیگ 2 اور ایم ایم اے قومی اسمبلی کی 1 نشست پر کامیاب

نیا پاکستان اور شیعہ نسل کشی کا نہ رکنے والا سلسلہ

35 نشستوں پر ضمنی انتخابات کیلئے پولنگ کا وقت ختم

زائرین کے مسائل کے حل کیلئے ایران،پاکستان اورعراق کی کمیٹی کا قیام ضروری

امریکہ قانونی اور سیاسی جنگ ہار چکا ہے، صدر ڈاکٹر حسن روحانی

لاپتہ صحافی پر امریکا اور برطانیہ کا سعودی کانفرنس کے بائیکاٹ پر غور

سعودی حکومت جمال خشوگی کے قتل میں ملوث ہوئی تو سزا دیں گے، ٹرمپ کی دھمکی

شام میں امریکہ کی غیر قانونی موجودگی جنگ جاری رہنے کا اصلی سبب ہے

آئی ایم ایف نے ناقابل قبول شرائط رکھیں تو معاہدہ نہیں کریں گے، وزیر خزانہ

(ن) لیگ کی حکومت نے ہماری ہر ضرورت پر توجہ دی، ترجمان پاک فوج

انسٹاگرام پوسٹس کیلئے بھی ٹیپنگ فیچر آزمائشی مراحل میں

امریکہ کا ہتھیاروں کا سسٹم ’آسانی سے ہیک کیا جا سکتا ہے‘

عراقی فوج نے شام کے ساتھ ملنے والی سرحد بند کر دی

وزیراعظم عمران خان نے ’گرین اینڈ کلین پاکستان‘ مہم کا آغاز کردیا

سب انسپکٹرتشدد کیس:مقدمے سے دہشتگردی کی دفعات معطل کرنے کی وکلا کی درخواست مسترد

وائٹ ہیلمٹ گروپ کو شام سے باہر نکالا جائے، روس کا مطالبہ

فلسطینیوں نے انتفاضہ قدس مارچ کا آغاز کر دیا

عرب حکمراں ٹرمپ پر بھروسہ نہ کریں، سید حسن نصراللہ

ترکی میں داعش کے اعلی ارکان کی گرفتاری

سعودی عرب نے یمن کا اسپتال مریضوں اور عملے سمیت تباہ کر دیا

اسرائیلی فورسز کی فائرنگ سے مزید 6 فلسطینی جاں بحق

ایرانی میزائل کے سامنے صیہونی حکومت سر تسلیم

حکومت کی جانب سے زائرین کو درپیش مشکلات کے خلاف شیعہ علماکونسل کی احتجاجی ریلی

شام اور عراق کی جنگ کے بعد مزاحمتی محاذ طاقتور ہوا ہے:جنرل محمد علی جعفری

2018-10-10 10:31:49

کیا یہی تبدیلی ہے؟

1371156-tabdeeliikx-1539073296-288-640x480

ملک کے نئے وزیراعظم صاحب نے ابھی اقتدار نہیں سنبھالا تھا، ابھی اقتدار میں آنے کی تگ و دو میں مصروف ہی تھے تو اس وقت، وہ ’’عوام عوام‘‘ کرتے نہیں تھکتے تھے۔ ان کی آنکھ بھی ان ہی عوام کو دیکھتے کھلتی اور اسی پر بند ہوتی تھی، ان کی ہر صبح اور ہر شام میں ’’عوام‘‘ ہی شامل رہتے تھے۔ انہیں عوام کا کتنا درد تھا، یہ ان کی پرانی وڈیو کلپس دیکھنے سے اندازہ ہوتا ہے۔

لیکن جب اسی عوام نے انہیں اپنی مجبوریوں، محرومیوں کو دور کرنے اور اپنے تمام دکھوں کا مسیحا سمجھ کرانتخابات کے ذریعے چن کر اس ملک کےاعلی منصب پر بٹھایا تو ان کے تیور ہی تبدیل ہوگئے؛ اور انہوں نے اسی عوام کو آنکھیں دکھانا شروع کردیں جس سے محبت کی وہ قسمیں کھایا کرتے تھے۔ کیا وہ یہی تبدیلی لانا چاہتے تھے؟

اقتدار کی کرسی پر براجمان ہونے کے بعد سب سے پہلے تو عوام کی ضروریات زندگی کی تمام چیزوں پر اضافی ٹیکس لگا کر ان کےلیے ان چیزوں کا حصول مشکل سے مشکل تر کردیا، منی بجٹ کی صورت میں عوام پر مہنگائی کا ایک نیا بم گرادیا، ان سے سستی، بجلی، گیس کی سہولتیں بھی چھین لیں جبکہ پیٹرول کی قیمتیں بھی کچھ عرصے کےلیے اس لیے نہیں بڑھائیں کہ ایک ہی وقت میں اتنی ساری مہنگائی کے مارے لوگ بلبلا اٹھے تھے، سوشل میڈیا بھی چیخ اٹھا تھا، لہذا مجبوری میں ان کو یہ اقدام کرنا پڑا ورنہ تو انہیں عوام سے پہلے سال کے پہلے چند ماہ میں ہی اپنا حساب چکتا کرنا تھا لیکن پھر بھی منی بجیٹ کی صورت میں مہنگائی نہ جانے عوام کا کیا حشر کرنے والی ہے۔

عمران صاحب آتے ہی پی ایم ہاؤس سمیت مختلف اداروں سے ملازمین کو کم کرنے کا اعلان کر بیٹھے، جس سے ان کی تبدیلی کی پہلی جھلک عوام کو دیکھنے کےلیے ملی۔ عمران خان صاحب اقتدار کی باگ ڈور سنبھالنے سے پہلے جس عوام کو مہنگائی، جہالت اور لاقانونیت سمیت تمام معاشی برائیوں سے نجات دلانے کی قسم کھاچکے تھے، وہ سب چیزیں ان ہی کی حکومت میں عوام کو وافر انداز میں ملتی دکھائی دے رہی ہیں۔

کراچی سمیت ملک میں امن و امان کی صورتحال پر جو کنٹرول کیا گیا تھا، ان کی حکومت کے آتے ہی وہ ان کے کنٹرول سے جیسے نکل گیا ہو۔ آج کراچی کے گلی کوچوں اور بازاروں میں وہی چھینا جھپٹی، وہی گن پوائنٹ پر لوگوں کا لٹ جانا، گاڑیوں، موبائل سمیت قیمتی سامان کا چھن جانا جیسے عام سی بات ہوتی جارہی ہے۔ لوگ پہلے سے زیادہ غیر محفوظ، ڈرے اور سہمے سے رہنے لگے ہیں۔

کیا عمران خان صاحب کی یہی تبدیلی تھی جو وہ لانا چاہتے تھے؟

عمران خان صاحب نے کھربوں روپے قومی دولت باہر لے جانے والوں سے تو ایک ٹکا بھی واپس نہیں کروایا لیکن ملک میں چندہ مہم شروع کرکے اسی عوام سے اربوں روپے بٹورے جانے لگے ہیں جو پہلے ہی مہنگائی اور ٹیکس کے بوجھ تلے پورے دب چکے ہیں۔

اس حکومت کے آتے ہی ان کی ہدایات پر سب سے پہلے چیف صاحب سرگرم ہوگئے اور لگ گئے ڈیمز بنانے کےلیے چندہ جمع کرنے؛ حالانکہ بعد میں ایک جگہ ان کا یہ بھی فرمانا تھا کہ ڈیم کےلیے فنڈ جمع کرنا ان کا کام نہیں لیکن پھر بھی وہ یہ کام نہایت ہی احسن طریقے سے انجام دے رہے ہیں۔

دوسری طرف سگار والے بابا جی نے تو جیسے اس حکومت کو اپنی جاگیر اور ریلوے کو نانی کا گھر سمجھا ہوا ہے جو انہوں نے آتے ہی جبری طور پر چندہ مہم کے سلسلے میں ٹکٹوں پر 10 روپے کا نہ صرف اضافی چارج لگوادیا جس سے روزانہ کروڑوں روپے عوام سے بٹورے جانے لگے ہیں بلکہ اوپر سے دیارِ غیر میں رہنے والے پاکستانیوں کو بھکاریوں کی طرح ریلوے کے پرزے تحفے میں دینے کےلیے بھی منت سماجت کی ہے۔ یہ وہی صاحب ہیں جو پچھلی حکومتوں کو اسی بات پر کوستے آرہے تھے کہ وہ اس ملک کو خیرات پر چلارہے ہیں اور اسے مقروض اور بھکاری کردیا ہے۔

خان صاحب نے سادہ رہنے اور سادہ اسمبلی رکھنے کی باتیں تو بڑی کر ڈالی تھیں لیکن وہ تو بنی گالا سے اسلام آباد تک کے سفر میں ان کے ہیلی کاپٹر کے استعمال سے ہی اندازہ کیا جا سکتا ہے۔

شروع میں قوم سے خطاب میں بے جا پروٹوکول اور بیرون ملک دوروں سے کچھ مہینے اجتناب کرنے کے ان کے اعلانات بھی سب نے سنے تھے مگر ان پر عمل کیا ہوا؟ وہ بھی دنیا دیکھ رہی ہے۔

عمران خان صاحب نے یوں تو عوام کی ہر دُکھتی رگ پر پاؤں رکھ دیا ہے لیکن ملک میں برسوں سے کالا باغ ڈیم جیسے متنازعہ معاملے کو دوبارہ سے ہوا دے کر اس ملک کی اکائیوں کے درمیان فاصلوں کو بظاہر مزید بڑھانے کی کوشش بھی کی ہے۔ نہ صرف اتنا بلکہ انہوں نے سندھ میں غیر ملکیوں کو شناختی کارڈ جاری کرنے سمیت انہیں صرف کراچی میں بسانے اور روزگار دینے کا اعلان کرکے سندھ کے عوام کو بہت دکھی کیا ہے۔ تھر میں پانی اور غذا کی کمی سے آئے دن نہ جانے کتنی ہی اموات ریکارڈ ہورہی ہیں۔ لیکن ملک کے وزیراعظم ہیں کہ انہیں سندھ کے تھری عوام کے بھوک اور پیاس سے تڑپتے اور مرتے ہوئے بچے اور جانور نظر نہیں آتے؛ اوپر سے افغانستان کو ان ہی بھوکے لوگوں کی دھرتی پر اگنے والے اناج کے ہزاروں ٹن تحفے میں دے دیتے ہیں، کیا یہی تبدیلی ہے؟

 

علی عابد سومرو

بلاگر انٹرنیشنل ریلیشنز میں ماسٹرز کی ڈگری رکھتے ہیں اور گزشتہ 20 سال سے صحافت سے وابستہ ہیں۔ عوامی آواز، این این آئی، ایکسپریس، جنگ گروپ ، ڈان ٹی وی، سندھ ٹی وی نیوز، آواز ٹی وی نیوز، کاوش میگزین، پی ٹی وی اور بول ٹی وی نیٹ ورک سمیت کئی اداروں میں سب ایڈیٹر، کاپی رائٹر اور ایسوسی ایٹ پروڈیوسر کے طور پر ذمہ داریاں نباہ چکے ہیں۔ آج کل ایکسپریس سکھر ڈیسک پر کام کررہے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

زمرہ جات:   Horizontal 2 ،
ٹیگز:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)

چند اور سخت فیصلے؟

- بی بی سی اردو

دنیا 100 سیکنڈ میں

- سحر ٹی وی

یادوں کے جھروکے

- سحر ٹی وی