علیم خان کی گرفتاری: کیا وزارت اعلی کیلئے ان کی راہ ہموار ہوگئی؟

’بھارت پاکستان کو ورلڈ کپ میں شرکت سے نہیں روک سکتا‘

آہیں، چیخیں ، نالے اور بین – عامر حسینی

پاکستانی فوج کے دو اعلیٰ افسران جاسوسی کے الزامات میں گرفتار، آئی ایس آئی کے سابق سربراہ کا کورٹ مارشل

بحریہ کی سب سے بڑی فوجی مشقیں شروع

کراچی: مبینہ مضر صحت کھانا کھانے سے 5 کمسن بہن بھائی جاں بحق

انتہا پسندوں کے حملوں کیخلاف کشمیری تاجروں کی ہڑتال

نظامِ سعودی سے بیزار دو خواتین اور فرار

امریکہ عالمی سطح پر تنہا ہو گیا، فرانس

خوان گوائیدو کو روس کا سخت انتباہ

امریکہ میں فائرنگ، بارہ ہلاک، درجنوں زخمی

ملک بھر میں سیلاب، طوفانی بارشوں سے 19 افراد جاں بحق

جنگ کی تیاری نہیں کررہے لیکن دفاع ہمارا حق ہے

بھارتی سپریم کورٹ کشمیریوں کے حق میں بول پڑا

سعودی مظالم عروج پر عورتیں اور بچے شہید

شاہد خاقان عباسی ہوئے سرفہرست عمران خان نےد ی دعوت

آغا سراج درانی کو سندھ اسمبلی پہنچا دیا گیا

بھارت کلبھوشن یادیو کی رہائی کے مطالبے سے دستبردار

کراچی میں ز ہریلےکھانے سے ہلاکتوں پر وزیراعلیٰ کا نوٹس

پاکستان زہر اگلنے والا موساد کا ایجنٹ نکلا

فلسطنیی تنظیموں کا اہم مشترکہ اعلامیہ سامنے آگیا

قومی اسمبلی میں ہنگامہ، شور شرابا، نعرے بازی

چند غذائوں کے استعمال سے بالوں کا گرنا بند

سلامتی کونسل میں بھارت کو سبکی

’بھارت پانی روکتا بھی ہے تو پاکستان کو فرق پڑے گا‘

کیا شام میں ورزش کرنا نقصان دہ ہوتا ہے؟

سعودی ولی عہد کا دورہ پاکستان: کچھ داؤ پر تو نہیں لگا؟

اسپیکرسندھ اسمبلی کی گرفتاری: احتساب ، سیاست یا صوبائی خود مختاری پر حملہ

جہاد النکاح کے بہانے میری زندگی برباد کردی گئی، داعشی لڑکی کے دل دہلانے والے انکشاف

’’بھارتی جارحیت کی صورت میں پاک فوج بھرپور جواب دے‘‘

بھارت سے کشیدگی پر قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس

پاکستان کی فوج تیار ہے ! منہ توڑجواب ملے گا؟

بریگزٹ معاہدے میں پیش رفت؟ وقت بہت کم ہے

ایران نے ایک بار پھر دہشت گرد قرار دے دیا

سعودی شہزادے کے محل میں ملازمت کرنے والے پاکستانی کے حیرت انگیز انکشافات

چین ایران کا قابل اعتماد شریک ملک ہے، ڈاکٹر لاریجانی

سابق جج شوکت صدیقی کی درخواست پر اعتراضات ختم، سماعت کیلئے منظور

’میں بے نظیر بھٹو کا سپاہی ہوں، ڈرتا نہیں‘

اپوزیشن رہنمائوں کی پھانسی روکنے کا مطالبہ

بچوں سے متعلق خفیہ قوانین کاسنسنی خیز انکشاف

فوج کا نمازیوں پر حملہ

فوجی ٹھکانوںپر حملہ جب موت سامنے نظر آنے لگی

پاکستان کی جیلیں سیاستدانوں کے لئے بنی ہیں، خورشید شاہ

بنگلہ دیش: کیمیائی گودام میں آتشزدگی، 69 افراد ہلاک

جے پورکی جیل میں پاکستانی قیدی کا قتل قابل مذمت ہے‘ میرواعظ عمرفاروق

افغان امن عمل پر ریمارکس، پاکستانی سفیر افغان دفتر خارجہ طلب

’’نیب نے خواتین کو 6 گھنٹے حبس بیجا میں رکھا‘‘

گڈ گورننس کے لیے پیشہ ورانہ مہارت اورتربیت ضروری ہے‘ اسد عمر

پلوامہ واقعہ اور کلبھوشن کیس، قومی سلامتی کمیٹی کا اہم اجلاس آج ہوگا

بچوں پر مہلک تجربات کا انکشاف

ملکی معیشت 8 سال کی بدترین سطح پر

کرس گیل نے شاہد آفریدی کا ریکارڈ توڑ دیا

زبان پر چھالے؟

قبض سے نجات دلانے والی 10 غذائیں

پاکستان کے لیے حج کوٹہ بڑھا کر 2 لاکھ کردیا گیا

سعودیوں کی اس کرم فرمائی کے بدلے پاکستان کیا دے گا؟

پاک بھارت کشیدگی، پس پردہ سفارتکاری اور سعودی عرب کا کردار

حج کیوں مہنگا کیا، حکومت سے جواب طلب

جموں میں کرفیو کا چھٹا دن

’پہلے ان کا رونا تھا کیوں نکالا، اب ہے مجھے کیوں سنبھالا؟‘

سعودی فوج کے خلاف یمنی فوج اور عوامی فورس کے حملے

دہشت گردوں کے ٹھکانوں سے امریکی اور اسرائیلی ہتھیار برآمد

اقوام متحدہ کی پاک-بھارت کشیدگی کم کرنے کیلئے ثالثی کی پیشکش

فرانس میں قبروں کی اجتماعی بے حرمتی پر یہودی سراپا احتجاج

’’سندھ حکومت نئی قانون سازی پر کام کر رہی ہے‘‘

’’نوازشریف کی انجیوگرافی کا فیصلہ فیملی کریگی‘‘

اسلام آباد: اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی گرفتار

دہشت گرد گروہ کیساتھ منسلک عناصر کی شناخت

سعودی ہتھیار یمنی فوج کے نشانے پر

میجر جنرل سید یحیی رحیم صفوی کا پاکستان کو مشورہ

امریکی فوجیوں نے ایسا ظلم کر دیا کہ دل لرز جائے

2019-02-10 13:22:27

علیم خان کی گرفتاری: کیا وزارت اعلی کیلئے ان کی راہ ہموار ہوگئی؟

AK

نئے پاکستان کی جھلک اس وقت دیکھنے کو ملی جب نیب نے پنجاب کے سینئر صوبائی وزیر علیم خان کو گرفتار کیا۔ یہ اقدام خلافِ توقع تو نہیں تھا البتہ ایک ایسے ملک کے لیے تھوڑا نیا ضرور تھا جہاں حکومت برملا طور پر جمہوریت بمع کرپشن پر صفر برداشت پر عوامی اعتماد کی بحالی کے غرض سے کچھ نئے مناظر پیدا کرنے کی کوششوں میں مصروف ہے۔

یہ ممکن ہے کہ علیم خان کی گرفتاری طویل عرصے تک پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے دعوؤں کو درست ثابت کرتی رہے کہ کوئی بھی شخص قانون سے بالاتر نہیں، مگر تاہم یہ تشریح دیگر ابھرتی تھیوریز سے محفوظ رکھنے میں مددگار ثابت نہیں ہونے والی۔

علیم خان کو نیب کے لاک اپ میں ڈالا جانا سوچ لیا گیا تھا۔ اب اسے ایک ایسی رکاوٹ کے طور پر لیا جارہا ہے جسے وسائل سے بھرپور پراپرٹی ٹائیکون کو اقتدار کے اہم عہدوں پر دعوٰی کرنے سے پہلے ابھی عبور کرنا باقی ہے۔ یہ بھی کہا گیا کہ وہ پنجاب کی وزارتِ اعلیٰ کے لیے عمران خان کی پہلی چوائس میں شامل ہیں۔ ان کے خیر خواہ اب امید لگائے بیٹھے ہوں گے کہ وہ کلیئر ہونے کے قریب ہیں تاکہ وہ جلد ہی مستقبل کی چند طاقتور قلمدان سنبھال سکیں۔

چند اس کے برخلاف منظرنامے بھی ہیں، کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ جس متبادل وزیرِاعلیٰ کو عمران خان نے محض مجبوری کے لیے یہ عہدہ دیا تھا انہوں نے اپنی خود کی شناخت بنالی ہے۔

اگرچہ عثمان بزدار اس خواب کو پوری طرح سے پورا کرنے میں بڑی حد تک ناکام رہے ہیں جس میں عمران نے انہیں جوش و جذبے کے ساتھ کام کرتے دیکھا تھا۔ تاہم یہ کہا جاسکتا ہے کہ جنوب سے تعلق رکھنے والے سردار نے کپتان کے ہاتھوں ہونے والی اپنی سرپرائز سلیکشن کے نتیجے میں پارٹی کے اندر اتنی حمایت تو ضرور حاصل کرلی ہے کہ ان کی جگہ کسی دوسرے کو لانا آسان نہیں ہوگا۔

عمران خان اپنے دائیں بائیں بیٹھے قریبی ساتھیوں کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے جانے جاتے ہیں۔ اپنے برطانوی دوست ذوالفقار بخاری کو کابینہ میں شامل کرنے کے لیے جس انداز میں انہوں نے جدوجہد کی اس سے پتہ چلتا ہے کہ کارہائے حکومت چلانے میں وہ اپنے ساتھی کے ساتھ اپنے ذاتی تعلقات پر کس قدر انحصار کرتے ہیں۔

عمران خان کی یہ خاصیت ان لوگوں کی کافی حوصلہ افزائی کا باعث بنے گی جو علیم خان کو نیب سے کلیئر چٹ ملنے کے بعد وزارتِ اعلیٰ کے عہدے کی پہلی چوائس کے لیے موزون بتاتے ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ علیم خان کے بارے میں ہونے والی باتوں کو معمولی قرار دیے جانے کو فوراً رد کیا جاتا ہے: یہ اچھے اچھے لوگوں کو جمع کرنے اور پھر ان کے ساتھ کھڑے ہونے کے حوالے سے وزیرِاعظم کے تاثر کے متضاد ہے۔ اس صورتحال میں ہمارے ہیرو ایسا میرٹ اور استعداد کی بنیاد پر کرتے ہیں۔ واحد مسئلہ یہ ہے کہ اگر دونوں دوست دل کے قریب ہوں تو وہ ان میں سے کس طرح کسی ایک کا انتخاب کریں گے۔

علیم خان اب عمران خان کے لیے پرانے لیفٹینیٹ کی حیثیت رکھتے ہیں، جو (ق) لیگ کے بعد پی ٹی آئی میں شامل ہوئے تھے۔ وہ پی ٹی آئی کے ساتھ چند شدید مشکل جنگوں میں کھڑے رہے ہیں اور انہیں اکثر ایک ایسے مالی استطاعت والے شخص کے طور پر دیکھا گیا ہے جو لمبی جنگوں میں بہت ضروری ہوتا ہے۔

2018ء کے انتخابات سے پہلے صوبے کی شہری آبادی کی جانب سے پنجاب کی وزارتِ اعلیٰ کے عہدے کے لیے صرف علیم خان کا نام ہی ایک مناسب امیدوار کے طور پر سامنے ابھر کر آیا، ظاہر ہے ایسا قانون سے ہری جھنڈی ملنے کی شرط کے ساتھ ہی ہوا ہوگا۔

ان کی امیدواری کو اس وقت زیادہ تقویت پہنچی جب وزارتِ اعلیٰ کے عہدے کے لیے 2 مضبوط نام، جہانگیر ترین اور شاہ محمود قریشی کسی نہ کسی وجوہات کی بنا پر عہدے کی ریس سے باہر ہوگئے۔

عثمان بزدار کے پاس اپنے رہنما کے مکمل اعتماد حاصل ہونے کے اپنے الگ دعوے ہیں۔ ان کی وزارتِ اعلیٰ کے لیے سلیکشن حادثاتی تو ہوسکتی ہے لیکن ان کی ریزیومے میں وزیرِاعظم کے ایسے متعدد بیانات شامل ہیں جن میں انہوں نے عثمان بزدار کو پنجاب کے لوگوں کے لیے ایک بہترین انتخاب قرار دیا۔

عثمان بزدار کو بااختیار عام آدمی کے طور پر پیش کیا گیا جو اپنے معاملات چلانے میں بااختیار ہے اور یوں ان کے چند مبیّنہ شرمندگی کا باعث بننے والے طور طریقوں پر پردہ ڈالنے کی کوشش کی گئی، جن کی وجہ سے انہیں پہلے تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

وہ ابھی تک صوبے کے بہت زیادہ جوشیلے چیف ایگزیکیٹو بھلے نہ ہوں، مگر یہ بات پنجاب کے کئی لوگوں کے لیے بنیادی طور پر سکھ کے سانس جیسی ہے جس کے لیے وہ تند و تیز شہباز شریف حکومت کے طویل برسوں بعد بے تاب تھے۔

یہاں اس معاملے کا ایک اہم سوال یہ ہے کہ آیا عثمان بزدار یہ پروفائل رکھتے بھی ہیں یا نہیں جسے اپنی چوائسز پر ثابت قدم رہنے کے حوالے سے معروف رہنما کے لیے نظر انداز کرنا مشکل ہوجائے، کیا ہمیں مستقبل قریب میں وزارتِ اعلیٰ کے عہدے کے لیے تھوڑا مقابلہ دیکھنے کو ملنے والا ہے؟

دسیتاب شواہد کا جائزہ لیا جائے تو عثمان بزدار کے پاس اپنا عہدہ محفوظ تصور کرنے کی ایک اہم وجہ ہے، چونکہ وہ عہدے پر فائز ہیں اس لیے ان کا کیس بھی مضبوط ہے۔ جس طرح ایک مشہور کہاوت ہے کہ جس چیز پر آپ کا قبضہ ہو وہ نصف ملکیت آپ کی ہوتی ہے۔

فرض کریں کہ اگر علیم خان کی جانب سے وزارتِ اعلیٰ کے عہدے کے لیے عثمان بردار کو چیلنج کیا جاتا ہے تو اس طرح ایک اور بات بھی عثمان بزدار کے حق میں جائے گی۔ علیم خان کی پنجاب میں بطور صوبائی وزیر گزشتہ کارکردگی دیکھیں تو یہ اتنی کوئی غیر معمولی نہیں کہ انہیں پورے صوبے کا اختیار دینا لازمی محسوس ہونے لگے۔

علیم خان نے مستقل طور پر سرگرم ہوکر کام نہیں کیا۔ وہ ایک دو بار ہی سرگرم نظر آئے جبکہ کسی بھی اہم مرحلے کو خوش اسلوبی کے ساتھ سنبھال نہیں پائے اور یہی بات انہیں پارٹی میں شامل دیگر افراد سے الگ بناتی ہے۔

انتخابات کے بعد والی پی ٹی آئی میں ان کی مسلسل اہمیت کے جو بھی آثار باقی رہے، وہ بظاہر طور پر اب پارٹی کی اندرونی شور و غل کی وجہ سے محدود ہوتے دکھائی دیتے ہیں۔

علیم خان پارٹی کے ایک سب سے بااثر رہنما رہے ہیں اور پارٹی کے اندر ایک گروپ کی قیادت بھی کرتے رہے ہیں، تاہم انہوں نے بہتر گورننس کے حساب سے کچھ ایسے خاطر خواہ قدامات نہیں اٹھائے جو انہیں وزارتِ اعلیٰ کے عہدے تک لے جانے میں مددگار ثابت ہوں۔ جہاں تک بطور وزیر موجودہ کارکردگی کا تعلق ہے تو علیم خان اپنے رہنما کے آشیرباد کے ساتھ ترقی پانے اور مزید پختہ ہونے کے لیے فٹ دکھائی دیتے ہیں۔

شاید وہ اپنے اس عمل کو عوامی تعلقات کے حساب سے بہترین عمل قرار دیں جب انہوں نے شہری حکومت کو اکھڑے لہجے میں لاہور میں موجود کوڑا کرکٹ کو صاف کرنے سے متعلق پیغام دیا تھا۔ زندگی میں اچانک حیرت انگیز لمحات آتے رہتے ہیں لیکن ان کے حکم پر جس قسم کا عمل درآمد ہوا وہ زیرِ غور وزیرِ اعلیٰ کی حیثیت کا تو بالکل بھی نہیں تھا۔

اشعر الرحمان

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

زمرہ جات:  
دیگر ایجنسیوں سے (آراس‌اس ریدر)